Page 1 of 2 12 LastLast
Results 1 to 10 of 13

Thread: Writers Club Competition July 2011

  1. #1
    Join Date
    Feb 2008
    Location
    Karachi, Pakistan, Pakistan
    Posts
    125,914
    Mentioned
    839 Post(s)
    Tagged
    9270 Thread(s)
    Thanked
    1181
    Rep Power
    21474971

    Writers Club Competition July 2011




    App Ko "Mohabbat Ghumshuda Meri" Per Mukhtasir si Tehrer Likhni hai...

    Rules :


    1 ... Aik member aik he bar Share Karsakta hai.
    2 ... Aik jaisa mat share kijeye ga.
    3 ... Comp ki last Date 21 July hai.
    4 ... Winner ka itikhab hum khud karey gai.

  2. #2
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Canada
    Posts
    25,300
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    442 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    11381699

    Default Re: Writers Club Competition July 2011


    likhon gi

  3. #3
    Join Date
    May 2010
    Location
    sea of thoughts
    Posts
    14,707
    Mentioned
    1 Post(s)
    Tagged
    33 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    21474858

    Default Re: Writers Club Competition July 2011

    naz api mukhtasir likhna chah ri the
    per pata nahi wo lambi lambi lambiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiii hoti gaye ab btayen kya kerun


  4. #4
    Join Date
    Feb 2008
    Location
    Karachi, Pakistan, Pakistan
    Posts
    125,914
    Mentioned
    839 Post(s)
    Tagged
    9270 Thread(s)
    Thanked
    1181
    Rep Power
    21474971

    Default Re: Writers Club Competition July 2011

    likh do..
    صرف آواز نہیں ، لفظ بھی مقفل ہیں مرے

    سوچ میں ہوں کہ اب تجھ کو پکاروں کیسے

  5. #5
    Join Date
    Jul 2011
    Location
    Lahore-Pakistan
    Posts
    1,636
    Mentioned
    2 Post(s)
    Tagged
    944 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    21474844

    Default Re: Writers Club Competition July 2011

    محبت گمشدہ میری
    ہوا کی لہروں میں تیرتے ہوئے پتے انجان سی صبح کی پہلی کرن کے پھوٹتے ہی پورے باغ کی رونق بڑھا رہے تھے۔ پرندوں کی چہکار سریلے گیتوں کی صورت میں دلوں کو مچلا رہی تھی۔ باغ کے اندر بنے ہوئے چھوٹے رستے پر لکڑی کے بینچ پر بیٹھی سلمیٰ سوچوں کے بھنور میں الجھی ہوئی دکھائی دے رہی تھی۔ جاگتی آنکھوں سے خوابوں کے دریچوں میں جھانکنے والی معصوم بنت حوا کوئی عام لڑکی نہیں تھی۔ بلکہ اسی شہر کے مشہور و معروف رئیس افتخار کی بیٹی تھی۔اور افتخار کی دو ہی بیٹیاں تھیں سلمیٰ اور نگہت جن کو وہ اپنی جان سے زیادہ پیار کرتا تھا۔
    انکی ہر خواہش ہر آرزو کی پاسداری افتخار کی اولین ترجیح تھی۔اسی لیے دونوں بہنوں نے اچھی تعلیم حاصل کی۔اچھے افکار اور خلوص کی پیکر بنیں۔ مگر آج سلمیٰ کچھ زیادہ ہی پریشان دکھائی دے رہی تھی۔ حالانکہ کچھ دن بعد ہی نگہت کی شادی تھی۔اسے تو خوش ہونا چاہیے تھا کہ اسکی پیاری اور دوست بہن کی شادی آنے والی تھی۔اچانک فون بیل کے شور نے سلمیٰ کو سوچوں کی دلدل سے باہر نکال دیا۔ہیلو ہیلو! ارے سلمیٰ یار تم کہاں ہو? مجھے شادی کے لیے کچھ ڈریس خریدنے تھے اور میں تمہارا انتظار کر رہی ہوں۔پلیز جلدی سے آجاو۔ابھی بہت کام ہے!!!!!
    نگہت نے ایک ہی سانس میں سلمیٰ کی ساری ترجیح فون کے ذریعےاپنی شادی کے معاملات میں لگا دی۔میں ابھی آتی ہوں!سلمیٰ نے یہ کہا اور فون بند کر دیا!
    سلمیٰ اپنی گاڑی میں بیٹھی اور گھر کی طرف روانہ ہوئی! رستے میں سگنل پر گاڑی رکی تو ایک بوڑھا بھکاری گاڑی کی طرف آیا اور صدا لگائی۔۔۔۔اللہ تمہاری ہر خواہش پوری کرے بیٹی۔تمہیں تمہاری خواہش کے مطابق سب کچھ ملے!سلمیٰ کچھ دیر بوڑھے بھکاری کی طرف بھری بھری آنکھوں سے دیکھتی رہی اور پھر اپنے بیگ سے کچھ روپے نکال کر بوڑھے بھکاری کو دیے اور کہا! بابا شاید آپ کی دعا لینے میں مجھے بہت دیر ہو گئی! میں لیٹ ہو گئی بابا۔ اور سگنل کھلتے ہی گاڑی گھر کی طرف دوڑا دی!
    گھر پہنچتے ہی نگہت کے چہرے پر روز کی طرح مسکراہٹ اور خوشی کے آثار نمایاں نظر آرہے تھے۔تم کہاں تھی?نگہت نے سلمیٰ کو گلے لگاتے ہوئے کہا!میں ذرا مارکیٹ تک گئی تھی کچھ خریدنا تھا مجھے!سلمیٰ نے جھوٹ کا سہارا لیا ور بات ختم کی۔ارے میرے بغیر ہی مارکیٹ چلی گئی??ارے ہاں تمہیں بھی تو بہت ساری شاپنگ کرنی ہو گی نا??دودھ پلائی کی رسم بھی تمہیں ہی کرنی ہے!
    نگہت نے مسکراتے ہوئے چہرے کو گھماتے ہوئے کہا!سلمیٰ نے ایک لمبی آہ بھری اور کہا! ہاں سچ کہہ رہی ہو !
    چلو مارکیٹ چلتے ہیں تمہارے جیجا کے صبح سے بیسیوں فون آچکے ہیں!(نگہت کی شادی سلمان سے ہونے والی تھی۔سلمان دونوں کا چچا زاد تھا)وہ میرا انتظار کر رہے ہیں۔پلیز جلدی چلو نا!نگہت نے لاڈلے پن کا اظہار کرتے ہوئے کہا!
    سلمیٰ جیجا کا نام سنتے ہی چونک گئی!وہ وہ نگہی تم اکیلی چلی جاو نا پلیز! ویسے بھی میں تم دونوں میں کباب میں ہڈی کی طرح لگوں گی۔اور جھوٹی ہنسی ہنستے ہوئے چھوٹی بہن کو بازار روانہ کر دیا!
    اپنے کمرے میں آئی اور بیڈ پر لیٹ کر زارو قطار رونے لگ گئی!اور خود سے باتیں کرنے لگ گئی! میرا کیا قصور ہے? میری محبت کا کیا قصور ہے?مجھے محبت بھی ہوئی تو ایسے انسان سے جو میری ہی چھوٹی بہن کو چاہتا تھا!میں دل ہی دل میں جسے اپنے دل کا مالک سمجھتی رہی وہ ۔۔۔۔وہ میرے ہی دل کا قاتل نکلا!
    سلمان اور سلمیٰ کی دوستی بچپن سے تھی سلمیٰ سلمان سے پیار کرنے لگی تھی مگر اس نے یہ بات آج تک کسی سے نہیں کہی تھی یہاں تک کے سلمان سے بھی نہیں!
    بس صحیح وقت آنے کا انتظار کرتی رہی۔مگر محبت کی اصلیت جاننے والے یا تو ولی بن جاتے ہیں یا منوں مٹی کے نیچے دبا دیے جاتے ہیں۔محبت رنگ ہی ایسا ہے کہ جو اس رنگ میں رنگ جاتا ہے اس کے سانس لینا دوبھر ہو جاتا ہے۔سلمیٰ فقط الفاظ کے ترنم میں جھومتی رہ گئی۔اس نے محبت کی بھی تو ایسی کہ جس کی خوشبو صرف اسی کو مہکاتی رہ گئی
    سلمیٰ کے ساتھ بھی کچھ ایسا ہی ہوا اس کی گمشدہ محبت اس کے دل کی گہرایوں میں اترتی گئی۔اس کے تن من کی آرزو میں شامل محبت اسکی نہیں تھی۔اس سے پہلے کہ سلمیٰ اپنے لیے سلمان کی بات کرتی اس سے پہلے سلمان نے نگہت کے لیے بات کر دی۔
    آج نگہت کی شادی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ختم شد


  6. #6
    Join Date
    Mar 2010
    Location
    Karachi,Pakistan
    Posts
    11,803
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    16 Thread(s)
    Thanked
    2
    Rep Power
    21474855

    Default Re: Writers Club Competition July 2011

    Mohabbat,,,Dheemi dheemi si jazbon ko aanch dene wali Mohabbat...

    uske sehar mein kho jane wale shayad Pagal hote hain...

    Savera bhi uske sehar mein doob doob jaati..
    usko khawaab dikhana mohsin ne jese khud per farz kar liya tha.. savera aur mohsin dono hi nahiin jante the ke aksar khawaab kho jatey hain aksar mohabbat adhori reh jati hai.. Dono ik din aik dusrey se biChar gaye..aapne kisi musafir ko dekha hai ? jo pal bhar ko kisi talaab ke kinare sustane ko aa rukta hai aur uske paani se apni pyaas bhujane ke baad phir safar ko nikal parta hai???.... aisa hi tha un dono ka safar mohabat milli bhi tu chand qatre.. magar woh bhi kitne anmol kitne qeemti ke saari umar dono ne aik dusrey ki yaadon ko khud se juda na kiya..maana zalim samaaj samney tha, mana buhut si musaftein thein.. manaa duniya ke melay mein mohabbat gumshudaa ho gayi..magar dilon mein diye jaltey hain aaj bhi...

    aur woh do dil aaj bhi milne ko taraptey hain aaj bhi us Gumshudaa mohabbat ko talashtey hain ke shayad qismat un do dilon ko mila hi dey..shayad ke waqt meherbaan ho jaye....
    Alhamdullilah

  7. #7
    Join Date
    May 2010
    Location
    sea of thoughts
    Posts
    14,707
    Mentioned
    1 Post(s)
    Tagged
    33 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    21474858

    Default Re: Writers Club Competition July 2011

    Subha ka waqt parindo ki chehchahat or logo ki awazon ka samaat say takrana is baat ki nishandahi the k subho ho chuki hy or abhi he kuch dair main gariyoon ki awazain b rafta rafta is baat ko yaqeen main badalnay wali thee k hmesha ki terha aaj b namaz ka waqt ja chuka hy….Main nay aankhain khol deen ab afsos tha k namaz q nahi perh saki demagh nay daleel di k koshish the niyat the per ab ankh he nahi khul saki tou is main hmara tou kasoor nahi……
    Per dil kaheee ander he ander ghusa dikha raha tha k aj ka pehla farz he pora nahi ho saka tou din baqi kesa guzray ga per nafs tasali day raha tha k kuch nahi hota is jang ko hm nay pas e pusht dala k abhi aik ghanta hy soya ja sakta hy tou so jao namaz ka time to raha nahi……………Ghantay baad aankh khuli tou kaam per janay say pehlay bht wqt pera tha per aram say tyar hona tha nashta krna tha bas jee sab kaam nibta liye or wqt say pehlay tyar ho gaye is kasak k bghair k aik farz hm say ada nahi huaWqt gzerta gya tmam duniyavi kaam hotay gaye job achay say ho gayi entertainment b ker li per her farz namaz ka wqt gzrta gya bas uthtay hain uthtay hain keh ker tasali daitay gaye or wqt guzartay rahay.
    Sham main tv daikhtay waq meri beti mere pas aai kehnay lagi daikhain mama aj dado nay mjhy namaz perhnaa sikhai hy namaz sunanay say zaida mere zehen main yeh sawal zaida ghoom raha tha k meri beti nay school ka kaam b ker liya hy ya nahi or adhi namaz per rok ker he main nay os say poocha
    Per wo hairat say meri janib daikhnay lagi……….or khmoshi say haan main jawab day ker janay lagi me nay samjha shyad namaz nahi sunanay per wo khafa hy main nay kaha baita bht acha sunaya ap nay
    Tou mjhy daikh ker wo muskuranay lagi or kaha mama ap nay tou namaz suna he nahi
    Main nay kaha nahi baita main nay suna hy per wo musir the k main nay nahi suna main nay kaha baita ap dobara suna do tou os nay kaha mama ap nay dil say nahi suna main pooch aisa q keh rehi ho ap
    Tou kehnay lagi mama dado nay btaya tha k nmaz tou hmara awal farz hy baqi sab kaam tou hm Allah k hukam say kertay hain allah tala fermatay hain k tum meri kainaat ko daikho or meri tasbeeh kero hm ilm hasil kertay hain q k Allah tala ka hukam hy……….or wo aisay hanstay huay chali gayi jese main aik nasamjh bachi hun jo is pahaili ko kabhi suljha nahi sakay geeee……………………..
    Mjhy wo hansi na bhoolay tou meri aankho k agay apni he shabeeh nazer aaye jo mjh per hans rehi the meri beti mjh say zaida samjhdaar hy wo mjhy bta rehi the main nay hukam yaad rakha hy per hukum dainay walay ko bhool gayi hukam ka maqsad bhool gai Allah ko farq nahi perta hum os ka hukum poora krtay hain ya nahi hm apnay farz pooray ker rahay hain ya nahi wo tou hm say mohabbat kerta hy tab he tou bando ki ghaltiyaa,kotahiyaa daikhay bghair wo nawazta chala jata hy wo deta he jata hy k shayad banda os azal ki mohabbat per lot aaye …………….
    Maghrib ki azaan hotay he qadam mere uthtay gaye jainamaaz per kharay mere aanso na thamay k Allah ko tou hmara mehboob hona chahye q k hmain os ki zaroorat hy osay tou hmari nahi.os ki mohabbat tou hmesha hmaray liye rehti hy per hm bhool jatay hain k wo hmara mehboob hy is duniya main jo b kuch kertay hain sab os ka hukam hy kamao khao perho gher ka khiyaal rakho dosro ko eza na pohnchao yeh sab tou wo hmaray mehboob ka kehna hy ……..
    Aankhon say barastay aansooun phr say rehmaan say yeh wadda ker rahay thay k os ki zaat he awal o akhir hy os k pas say anay say lay ker os k pas wapis janay tak tou sab maya hy jo osay tham lay ga wo maya say bach jaye ga
    Mjhy ab is gumshuda mohabaat ko khud main zinda rakhna tha or apni beti ko mazeed is qader mazboot kerna tha k wo b is mohabbat k sachy moti ko hmesha apnay dil main rakhay ….


  8. #8
    Join Date
    Jul 2011
    Location
    Pakistan
    Posts
    273
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    7

    Default Re: Writers Club Competition July 2011

    aahhh itx too hard

  9. #9
    Join Date
    Apr 2011
    Location
    lahore
    Age
    27
    Posts
    259
    Mentioned
    2 Post(s)
    Tagged
    153 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    0

    Default Re: Writers Club Competition July 2011

    .
    Assalam-O-Alykum Wr Wb!

    Agr ap is tehreer ko parhen gey to shyd ye bey- mani si lage
    tootey phootey alfaz k murakkab se zyada kuch nahi

    lakin agr ise mhsoos karen gey to shyd meri tehreer ka mudaa ap ki smjh me ajaye 1 - Writers Club Competition July 2011

    Apni araa se zaroor agah kijye ga1 - Writers Club Competition July 2011

    hmehsa ki tarah msbat Tanqeed ka intizar rahe ga 1 - Writers Club Competition July 2011

    Bohut Bohut Shukriya!

    ............................................................ ...................




    انسان کی زندگی میں بعض اوقات ایسے لمحے اور مواقع آتے ھیں.جب نہ تو اس کے سر پر آسمان رھتا ھے نا پیروں تلے زمیں اور نہ ھی اس کے ارد گرد کوئی اور سمت ۔وہ جیسے کسی پاتال میں جا کھڑا ھوتا ھے یا شائد خلا میں معلق ھوجاتا ھے۔


    شکست خوردہ صورت ،بکھرے بال ، سوکھے ھونٹ ، نہ چشم تر میں کوئی خواب ، نہ دل میں کوئی خواھش ، نہ لبوں پر کوئی سوال ، نہ ھی ذہن میں کوئی خیال۔۔۔

    وہ کسی کٹی پتنگ کی مانند خود کو حالات کی ھوا پر چھوڑ دیتا ھے.جو اسے بغیر کسی منزل کے اپنے ساتھ در بدر لیئے پھرتی ھے۔

    پھر وہ شخص کسی بھٹکے مسافر کی طرح مصائب کی پے در پے آندھیوں کا شکار ھوکر اور ان سے لڑتے لڑتے مایوسی کے گڑھے میں جا گرتا ھے جہاں اس کا استقبال گور اندھیرے اور گہرے سنناٹے کرتے ھیں۔

    غم تاریکی میں گرنے کا نہیں ھوتا بلکہ المیہ تو یہ ھوتا ھے کہ انسان اس گڑھے میں سے باھر نکلنا ھی نہیں چاھتا۔ شائد وہ لوگوں کا سامنا کرنے کی سکت کھو دیتا ھے،یا پھر اسے خود کو روشنی میں دیکھنے سے خوف آنے لگتا ھے۔بلکہ اسے ھر چیز سے ہی خوف آنے لگتا ھے۔اس کی آنکھیں پتھرا جاتی ھیں۔

    انسان کی بے بسی ، اس کے کرب کی انتہا اس سے زیادہ کیا ھوگی کہ اسے اف تک کرنے کی اجازت نہ ھو، وہ حرف شکایت تک زباں پر نہ لا سکے۔ صرف قطرہ قطرہ صبر کے کڑوے کسیلے گھونٹ اپنے اندر اتار کر کسی ایسے مسیحا کا انتظار کرے جو آئے اور اس کے زخموں پر مرہم رکھ دے اور یا موت ھی آکر اسے تمام غموں سے نجات دلا دے۔


    ایک لمحہ بھی جو پائیں غم ہستی سے فراغ
    ایک نیا رنج پکارے ہے کہ تنہا کیوں ہے۔۔۔۔۔۔۔۔؟

  10. #10
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Canada
    Posts
    25,300
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    442 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    11381699

    Default Re: Writers Club Competition July 2011

    Quote Originally Posted by ch0c0-her0 View Post
    محبت گمشدہ میری
    ہوا کی لہروں میں تیرتے ہوئے پتے انجان سی صبح کی پہلی کرن کے پھوٹتے ہی پورے باغ کی رونق بڑھا رہے تھے۔ پرندوں کی چہکار سریلے گیتوں کی صورت میں دلوں کو مچلا رہی تھی۔ باغ کے اندر بنے ہوئے چھوٹے رستے پر لکڑی کے بینچ پر بیٹھی سلمیٰ سوچوں کے بھنور میں الجھی ہوئی دکھائی دے رہی تھی۔ جاگتی آنکھوں سے خوابوں کے دریچوں میں جھانکنے والی معصوم بنت حوا کوئی عام لڑکی نہیں تھی۔ بلکہ اسی شہر کے مشہور و معروف رئیس افتخار کی بیٹی تھی۔اور افتخار کی دو ہی بیٹیاں تھیں سلمیٰ اور نگہت جن کو وہ اپنی جان سے زیادہ پیار کرتا تھا۔
    انکی ہر خواہش ہر آرزو کی پاسداری افتخار کی اولین ترجیح تھی۔اسی لیے دونوں بہنوں نے اچھی تعلیم حاصل کی۔اچھے افکار اور خلوص کی پیکر بنیں۔ مگر آج سلمیٰ کچھ زیادہ ہی پریشان دکھائی دے رہی تھی۔ حالانکہ کچھ دن بعد ہی نگہت کی شادی تھی۔اسے تو خوش ہونا چاہیے تھا کہ اسکی پیاری اور دوست بہن کی شادی آنے والی تھی۔اچانک فون بیل کے شور نے سلمیٰ کو سوچوں کی دلدل سے باہر نکال دیا۔ہیلو ہیلو! ارے سلمیٰ یار تم کہاں ہو? مجھے شادی کے لیے کچھ ڈریس خریدنے تھے اور میں تمہارا انتظار کر رہی ہوں۔پلیز جلدی سے آجاو۔ابھی بہت کام ہے!!!!!
    نگہت نے ایک ہی سانس میں سلمیٰ کی ساری ترجیح فون کے ذریعےاپنی شادی کے معاملات میں لگا دی۔میں ابھی آتی ہوں!سلمیٰ نے یہ کہا اور فون بند کر دیا!
    سلمیٰ اپنی گاڑی میں بیٹھی اور گھر کی طرف روانہ ہوئی! رستے میں سگنل پر گاڑی رکی تو ایک بوڑھا بھکاری گاڑی کی طرف آیا اور صدا لگائی۔۔۔۔اللہ تمہاری ہر خواہش پوری کرے بیٹی۔تمہیں تمہاری خواہش کے مطابق سب کچھ ملے!سلمیٰ کچھ دیر بوڑھے بھکاری کی طرف بھری بھری آنکھوں سے دیکھتی رہی اور پھر اپنے بیگ سے کچھ روپے نکال کر بوڑھے بھکاری کو دیے اور کہا! بابا شاید آپ کی دعا لینے میں مجھے بہت دیر ہو گئی! میں لیٹ ہو گئی بابا۔ اور سگنل کھلتے ہی گاڑی گھر کی طرف دوڑا دی!
    گھر پہنچتے ہی نگہت کے چہرے پر روز کی طرح مسکراہٹ اور خوشی کے آثار نمایاں نظر آرہے تھے۔تم کہاں تھی?نگہت نے سلمیٰ کو گلے لگاتے ہوئے کہا!میں ذرا مارکیٹ تک گئی تھی کچھ خریدنا تھا مجھے!سلمیٰ نے جھوٹ کا سہارا لیا ور بات ختم کی۔ارے میرے بغیر ہی مارکیٹ چلی گئی??ارے ہاں تمہیں بھی تو بہت ساری شاپنگ کرنی ہو گی نا??دودھ پلائی کی رسم بھی تمہیں ہی کرنی ہے!
    نگہت نے مسکراتے ہوئے چہرے کو گھماتے ہوئے کہا!سلمیٰ نے ایک لمبی آہ بھری اور کہا! ہاں سچ کہہ رہی ہو !
    چلو مارکیٹ چلتے ہیں تمہارے جیجا کے صبح سے بیسیوں فون آچکے ہیں!(نگہت کی شادی سلمان سے ہونے والی تھی۔سلمان دونوں کا چچا زاد تھا)وہ میرا انتظار کر رہے ہیں۔پلیز جلدی چلو نا!نگہت نے لاڈلے پن کا اظہار کرتے ہوئے کہا!
    سلمیٰ جیجا کا نام سنتے ہی چونک گئی!وہ وہ نگہی تم اکیلی چلی جاو نا پلیز! ویسے بھی میں تم دونوں میں کباب میں ہڈی کی طرح لگوں گی۔اور جھوٹی ہنسی ہنستے ہوئے چھوٹی بہن کو بازار روانہ کر دیا!
    اپنے کمرے میں آئی اور بیڈ پر لیٹ کر زارو قطار رونے لگ گئی!اور خود سے باتیں کرنے لگ گئی! میرا کیا قصور ہے? میری محبت کا کیا قصور ہے?مجھے محبت بھی ہوئی تو ایسے انسان سے جو میری ہی چھوٹی بہن کو چاہتا تھا!میں دل ہی دل میں جسے اپنے دل کا مالک سمجھتی رہی وہ ۔۔۔۔وہ میرے ہی دل کا قاتل نکلا!
    سلمان اور سلمیٰ کی دوستی بچپن سے تھی سلمیٰ سلمان سے پیار کرنے لگی تھی مگر اس نے یہ بات آج تک کسی سے نہیں کہی تھی یہاں تک کے سلمان سے بھی نہیں!
    بس صحیح وقت آنے کا انتظار کرتی رہی۔مگر محبت کی اصلیت جاننے والے یا تو ولی بن جاتے ہیں یا منوں مٹی کے نیچے دبا دیے جاتے ہیں۔محبت رنگ ہی ایسا ہے کہ جو اس رنگ میں رنگ جاتا ہے اس کے سانس لینا دوبھر ہو جاتا ہے۔سلمیٰ فقط الفاظ کے ترنم میں جھومتی رہ گئی۔اس نے محبت کی بھی تو ایسی کہ جس کی خوشبو صرف اسی کو مہکاتی رہ گئی
    سلمیٰ کے ساتھ بھی کچھ ایسا ہی ہوا اس کی گمشدہ محبت اس کے دل کی گہرایوں میں اترتی گئی۔اس کے تن من کی آرزو میں شامل محبت اسکی نہیں تھی۔اس سے پہلے کہ سلمیٰ اپنے لیے سلمان کی بات کرتی اس سے پہلے سلمان نے نگہت کے لیے بات کر دی۔
    آج نگہت کی شادی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ختم شد

    Highlighted lines aap ki tehreer ke moti hein
    Baat beyan kernay ka andaz umda hai. Kam alfaz mein baat kehna bhi aik anmol hunar hai, jo aap ke pass hai.
    Tehreer pasand aye.
    Keep writing.

Page 1 of 2 12 LastLast

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •