Results 1 to 3 of 3

Thread: “مژگاں تو کھول ! شہر کو سیلاب لے گیا”

  1. #1
    Join Date
    Jun 2010
    Location
    Jatoi
    Posts
    59,925
    Mentioned
    201 Post(s)
    Tagged
    9827 Thread(s)
    Thanked
    6
    Rep Power
    21474903

    Default “مژگاں تو کھول ! شہر کو سیلاب لے گیا”

    آنکھوں سے کون میری، میرے خواب لے گیا
    چشمِ صدف سے گوہرِ نایاب لے گیا

    اس شہرِ خوش جمال کو کس کی لگی ہے آہ
    کس دل زدہ کا گریہءِ خوں ناب لے گیا

    کچھ نا خدا کے فیض سے ساحل بھی دور تھا
    کچھ قسمتوں کے پھیر میں گرداب لے گیا

    واں شہر ڈوبتے ہیں ، ادھر بحث کہ انہیں
    خم لے گیا ہے یا خمِ محراب لے گیا

    کچھ کھوئی کھوئی آنکھیں بھی موجوں کے ساتھ تھیں
    شاید انہیں بہا کےکوئی خواب لے گیا

    طوفانِ ابر باد میں سب گیت کھو گئے
    جھونکا ہوا کا ہاتھ سے مضراب لے گیا

    غیروں کی دشمنی نے نہ مارا، مگر ہمیں
    اپنوں کے التفات کا زہراب لے گیا

    اےآنکھ! اب تو خواب کی دنیا سے لوٹ آ
    “مژگاں تو کھول ! شہر کو سیلاب لے گیا”





    تیری انگلیاں میرے جسم میںیونہی لمس بن کے گڑی رہیں
    کف کوزه گر میری مان لےمجھے چاک سے نہ اتارنا

  2. #2
    Join Date
    Jul 2010
    Location
    Karachi....
    Posts
    31,280
    Mentioned
    41 Post(s)
    Tagged
    6917 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    21474875

    Default Re: “مژگاں تو کھول ! شہر کو سیلاب لے گیا”

    Verry nice..


    Ik Muhabbat ko amar karna tha.....

    to ye socha k ..... ab bichar jaye..!!!!


  3. #3
    Join Date
    Mar 2010
    Location
    *In The Stars*
    Posts
    18,093
    Mentioned
    1 Post(s)
    Tagged
    1271 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    21474862

    Default Re: “مژگاں تو کھول ! شہر کو سیلاب لے گیا”

    VerY NicE........




    Yahi Dastoor-E-ulfat Hai,Nammi Ankhon,
    Mein Le Kar Bhi,

    Sabhi Se Kehna Parta Hai,K Mera Haal,
    Behter Hai...!!


Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •