Results 1 to 2 of 2

Thread: سورة المآئدة

  1. #1
    Join Date
    Apr 2011
    Location
    tanhao main
    Posts
    6,644
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    1009 Thread(s)
    Thanked
    1
    Rep Power
    21474849

    candel سورة المآئدة


    بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

    كسي بھي مسلمان كے ليے كسي شخص كو دھوكہ دينا اور اس كا ناحق مال كھانا جائز نہيں اگرچہ وہ كافر ہي كيوں نہ ہو ۔
    جب مسلمان سےكسي گناہ یا چوري وغيرہ كا ارتكاب ہو جائے اور حكمران تك اس كا معاملہ جانے سےقبل وہ توبہ كرلے تو اس وقت اس كي سزا ساقط ہوجائےگي اور اس كا محاسبہ كرنا جائزنہيں كيونكہ اللہ سبحانہ وتعالي كا فرمان ہے :

    جولوگ اللہ تعالي اور اس كےرسول صلي اللہ عليہ وسلم سے لڑيں اور زمين ميں فساد كرتے پھريں ان كي سزا يہي ہے كہ وہ قتل كرديے جائيں يا سولي چڑھا ديے جائيں يا مخالف جانب سے ان كے ہاتھ پاؤں كاٹ ديے جائيں يا انہيں جلا وطن كرديا جائے يہ تو ہوئي ان دنيوي ذلت ورسوائي اور آخرت ميں ان كے ليے بڑا بھاري عذاب ہے ۔
    ہاں جو لوگ اس سےپہلے توبہ كرليں كہ تم ان پر قابو پالو تويقين مانو كہ اللہ تعالي بہت بڑي بخشش اور رحم وكرم والا ہے ۔
    ( سورة المآئدة : 5 ، آیت : 33-34 )

    اور رسول كريم صلي اللہ عليہ وسلم كا فرمان ہے :
    گناہوں سے توبہ كرنے والا ايسے ہي ہے جس كےگناہ نہيں ہيں ۔
    ابن ماجہ ، كتاب الزہد ، باب : ذكر التوبة ، حدیث
    Like ·

  2. #2
    Join Date
    Dec 2010
    Location
    Pindi
    Age
    31
    Posts
    24,015
    Mentioned
    243 Post(s)
    Tagged
    6079 Thread(s)
    Thanked
    15
    Rep Power
    21474868

    Default Re: سورة المآئدة


Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •