Page 1 of 2 12 LastLast
Results 1 to 10 of 11

Thread: Urs of Khawaja Qutub-ud-din Bakhtiyar Kaki Rehmatullah-alaihi

  1. #1
    Join Date
    Feb 2011
    Location
    Is Duniya me
    Posts
    1,576
    Mentioned
    15 Post(s)
    Tagged
    1284 Thread(s)
    Thanked
    1
    Rep Power
    21474844

    Default Urs of Khawaja Qutub-ud-din Bakhtiyar Kaki Rehmatullah-alaihi


    hazratqutubuddinbakhtiy - Urs of Khawaja Qutub-ud-din Bakhtiyar Kaki Rehmatullah-alaihi


    Khawaja Qutub-ud-din Bakhtiyar Kaki Rehmatullah-alaihi was the chief Khalifa of Hazrat Khawaja Moinuddin Chisti Rehmatullah-alaihi. He was born in 1111AD or 569 Hijri at Aush in Iraq.

    Khawaja Qutubuddeen Bakhtiyar Kaki Rehmatullah-alaihi He was a great devotee and mystic. He had no parallel in abandoning the world and facing poverty and hunger. He kept himself engrossed in the remembrance of Allah. Whenever someone came to him he would show his inability to continue any longer and slipped into the same state again.

    Hazrat Khawaja Bakhtiyar Kaaki (May mercy of Allah be upon him) was one and half year old that his father passed away. Khawaja Qutubuddeen Bakhtiyar Kaaki learned 15 chapters of the Holy Quraan from his mother and his mother arranged for him further education and training. Once he wanted to be a part of Mehfil e Samaa however was not allowed in as he seemed to be young in age and didn’t have a beard. Hazrat Khawaja Qutubuddeen Bakhtiyar Kaaki Ra. was very fond of Mehfil e Samaa so he rubbed his face and a beard appeared and he was let in. When Khawaja Qutubuddeen Bakhtiyar Kaaki was 4 years and 4 months of age he requested his mother that he wanted to study the Holy Quraan under a learned person. His Mother sent him along with a Slate and sweets to an Aalim in the locality. On the way he met a Divine personality, Khawaja Qutubuddeen Bakhtiyar Kaaki offered Salaam and was asked as to where he was off to. Khawaja Qutubuddeen Bakhtiyar Kaaki replied that his mother has sent him to the local Aalim to learn the Holy Quraan. The revered person asked Khawaja Qutubuddeen Bakhtiyar Kaaki to come along with him and he would be taught the Holy Quraan. He came to a mosque where he saw a few children learning the holy Quraan from Maulana Abu Hafz; he stood up as he noticed the revered person who told him to teach Khawaja Qutubuddeen Bakhtiyar Kaaki the holy Quraan. Later Maulana Abu Hafz disclosed to Khawaja Qutubuddeen Bakhtiyar Kaaki that the person who left him there was none other than Hazrat Khawaja Khizar Alaihisalaam.

    When Hazrat Khawaja Mueen-ud-deen Chisti came to Isphahan he took oath of allegiance on his hands and got caliphate and khirqah (dress of a religious mendicant) from him. Thereafter his master asked him to go to India and stay there. Following this order he came to Delhi and stayed there. It was the period of Sultan Shamsuddin Altamash.

    In 612 Hijri Khawaja Qutubuddeen Bakhtiyar Kaaki came to Kilocari in Delhi, those days the Mehrauli was the capital in Delhi. Sultan Shamsuddin Altamash requested him to settle in Mehrauli where he resided in a baker woman’s house. After a few days Hazrat Qazi Hamiduddeen Nagori Ra took Khawaja Qutubuddeen Bakhtiyar Kaaki to his house. Later he permanently settled near Ijazuddeen Masjid.

    In those times Hazrat Jamaaluddeen Bustami was the religious head (Shaikul Islam) and on his demise Sultan Shamsuddin Altamash requested Khawaja Qutubuddeen Bakhtiyar Kaaki to lead the community however Khawaja Qutubuddeen Bakhtiyar Kaaki refused and appointed Najmuddeen Sugra as Shaikul Islam.

    Once while Khawaja Gharib Nawaz Rehmatullah-alaihi , Khawaja Qutub-ud-din Bakhtiyar Ra and Baba Fareed Ganj Shakkar Rehmatullah-alaihi were praying together in the Auliya Masjid Baba Fareed Ganj Shakkar felt like having warm bread a basket of Kaaks appeared from Gaib (Unknown) at first Khawaja Gharib Nawaz Rehmatullah-alaihi raised his hand to receive it however was unable to hold it later Baba Fareed Ganj Shakkar Ra stretched out his hand the basket escaped his grasp then Khawaja Qutub-ud-deen Bakhtiyar Kaaki Rehmatullah-alaihi held out his hand the basket came in his reach and he kept it down and they all thanked Allah Almighty and ate the bread.

    Once Khawaja Gharib Nawaz Rehmatullah-alaihi came to Delhi, at that time when Najmuddeen Sugra was Shaikul Islam who was behaving uneasy. Khawaja Gharib Nawaz Rehmatullah-alaihi inquired on the cause to which he retorted, the people of Mehrauli were devoted to Khawaja Qutub-ud-din Bakhtiyar Ra. Khawaja Gharib Nawaz Rehmatullah-alaihi told him if he was against the stay of Khawaja Qutub-ud-din Bakhtiyar Ra then Khawaja Gharib Nawaz Rehmatullah-alaihi would take his beloved friend along with him. When he set off with Khawaja Qutub-ud-din Bakhtiyar Ra the trees landscape and the animals started weeping and following them the people too went in frenzy and started wailing loudly. Finally Khawaja Gharib Nawaz Rehmatullah-alaihi had to let Khawaja Qutub-ud-din Bakhtiyar Ra stay back in Delhi.

    He would sleep at night only after reciting Darood 3 thousand times.

    When Khawaja Sahib Married for the first time in Aush (Iraq) he was unable to recite the Darood for the first 3 nights, On the fourth day he saw the Holy prophet Muhammed Sallalahu alaihi wasallam asking that he missed the gift of Darood which he was being offered since a long time, Khawaja Qutub-ud-deen Kaaki divorced his first wife as he considered married life hindrance in his prayer. From his second wife he had 2 sons.

    Eldest was Shaikh Ahmed and younger Shaikh Muhammed.

    There was a grain-seller in the neighborhood of the Khawaja Qutub-ud-deen Bakhtiyar Kaaki Rehmatullah-alaihi. Hazrat’s wife would go to the shop for grains and food stock the shopkeeper once spoke rudely to the lady not realizing the spirituality of Khawaja Qutub-ud-deen Bakhtiyar Kaaki Rehmatullah-alaihi , the wife reported back to the Khawaja Qutub-ud-deen Bakhtiyar Kaaki Rehmatullah-alaihi who told her to take Allah’s name and put her hand in the loft and she would get what she needed and life went on in that way for a long time.

    In the beginning he would take loan from the grain seller however he would not exceed 24 dirham. And in the meantime he would pay back from the offerings made to him. However once he stopped taking loan. From that day on bread would come out from under his prayer mat and his family members lived on it.

    Meanwhile the grain-seller thought that the Khawaja must have been angry with him and hence he stopped taking loan from him. In order to know the fact he sent his wife to the house of Khawaja. Khawaja wife revealed truth to her from that time the bread stopped.

    Once Khawaja Qutub-ud-deen Kaaki Rehmatullah-alaihi and the members of his house remained hungry for 4 days without anyone realizing that they hadn’t eaten, in his innocence his son disclosed this to one of Khawaja well wisher who prepared food at home and brought it before Khawaja Qutub-ud-deen Kaaki who became furious and cursed his son who died later. However became alive in a few days.

    Once Sultan Shamsudeen Altamash sent some gold coins as Nazarana to Khawaja Qutub-ud-deen Kaaki who didn’t accept it. And later he gifted 6 villages to Khawaja Qutub-ud-deen Kaaki who refused to accept it.

    Khawaja Qutub-ud-deen Kaaki Rehmatullah-alaihi would sleep in the first part of the night however in the last part of the night he would be awake in prayers.

    Shaikh Nur Baksh has written in the book “Silsilatuz’zah”-

    “Bakhtiyar Aqtaab Aushi was a great devotee, mystic and friend of Allah who remained in his remembrance in private and public. He was habituated to eat and sleep less and spoke rarely. He was a towering personality in the world of mysticism.”

    Once Khawaja Qutub-ud-deen Kaaki Rehmatullah-alaihi wanted to be in Ajmer to pay reverence to Khawaja Gharib Nawaz Rehmatullah-alaihi , he got a reply to come over as this would be their last meeting. On arrival at Ajmer and paying tribute to Khawaja Gharib Nawaz Rehmatullah-alaihi he was informed that these were his last days. Khawaja Gharib Nawaz Rehmatullah-alaihi handed over the authority to Khawaja Qutub-ud-deen Kaaki and appointed him successor, and presented the turban, Musalla and walking stick (Aasa) and a book of the Holy Quraan. Informing that these were the belongings of the holy prophet Muhammed Mustafa Salai Allahu Alaihi Wa Sallamu, as they were to be preserved and handed over since generations to the Chistia Silsila. Khawaja Qutub-ud-deen Kaaki returned to Delhi and devoted himself to prayers and Namaz.

    Once while sleeping he saw his peer Khawaja Gharib Nawaz Rehmatullah-alaihi in a pleasant mood and he was attentive to his Mureeds even after Pardah.

    Once Khawaja Qutub-ud-deen Kaaki Rehmatullah-alaihi , Shaikh Bahauddeen Zakariya Rehmatullah-alaihi and Shaikh Jalaaluddeen Tabrezi Rehmatullah-alaihi were in Multan when suddenly enemy’s army reached near the fort in Multan. The ruler there Nasiruddeen Kibacha came to Khawaja Qutub-ud-deen Kaaki and requested him to pray that the enemy retreats. Khawaja Qutub-ud-deen Kaaki gave an arrow in Nasiruddeen Kibacha’s hand and told him to throw it towards the enemy at night, Nasiruddeen Kibacha did as told and by dawn there wasn’t a single enemy soldier there.

    Once Hazrat Suleimaan Alaaihisalaam was passing on his flying throne by the place where the present Mazaar is situated he noticed the place to be lit up and the light extended up to the skies. Hazrat Suleimaan Alaaihisalaam realized that this was the place where Allah’s beloved Khawaja Qutub-ud-deen Kaaki who would be laid to rest and he would be from the Ummat of Prophet Muhammed Mustafa Salallahu alaihi wa salamu.

    Hazrat Nizamuddeen Auliya Rehmatullah-alaihi has stated that once Khawaja Qutubuddeen Kaaki was returning from the Idgah to the place where the present Mazaar is located, during that time the place was a desolated wilderness, Khawaja Qutubuddeen Kaaki stood there in deep thought, his associates informed him that it was Eid and people would be waiting for him to eat. Khawaja Qutubuddeen Kaaki replied that he was getting the smell of Allah’s beloved from the place. He arranged for the purchase of that piece of land from Hazrat Abdul Aziz Bistami and confirmed his will to be buried in that place.

    Hazrat Shaikh Nizamuddeen Auliya Rehmatullah-alaihi would come at a point and stand at a stone and offer salaam and greetings the stone is located at the main Entrance of Dargah Sharief Mehrauli.

    One day there was a mehfil e Sama in Shaikh Ali Sanjari’s place 10 Rabi ul Awal, where the following Qawaali of Hazrat Ahmed Jaam was being sung “Kustgaan khanjar taslimra harzama az gaib jane deegar ast”
    Khawaja Qutubuddeen Kaaki was in a state of trance for the next two days and was reciting the same verse. On the fifth day Khawaja Qutubuddeen Kaaki took Pardah. “Inna Lillahi va Inna Ilaihi Raajiuun”

    Wisal

    Khawaja Qutubuddeen Kaaki took Pardah at the age of 64 years in 633 Hijri 14 Rabi-ul Awal (1235 AD) and his Mazaar (Moinul Hatab) is at Mehrauli (New Delhi) which attracts devotees from all over India and world.

    According to Khawaja Qutubuddeen Kaaki’s Rehmatullah-alaihi will only the person who had not missed the Sunnah salat of Asar Namaz never delayed the time of Namaz (Takbeer e ullah) and never done a single unforbidden act in his life was eligible to lead the Namaz e Janaza. There was a long silence as none thought themselves to be capable. After much wait Hazrat Khawaja Sultan Shamsudeen Altamash came forward and expressed that he did not expect his secret to be opened in this manner and led the Namaz e Janaza. The Mazaar Sharief of Khawaja Qutub-ud-deen Kaaki has a story to it, as per his will he had asked his Mureed’s Baba Fareed and Khawaja Shamsudeen Altamash to get mud from “Shamsu Taalaab” to put over his grave. This they did, as they ran back and forth from the Mazaar to the lake and collected mud from the lake in the basket which they carried over their heads. It was raining very heavily and the mound of mud was flowing away due to the downpour. Baba Fareed made a demarcation and put 4 wooden stumps on all the four corners to mark the place where the Mazaar was located.

    Khawaja Qutub-ud-deen Kaaki Rehmatullah-alaihi did not want a tomb to be made big with walls, or open to public. All the rulers’ right unto 18th century kept his will, however Muhiuddeen Bahadur Shamsul Umra Kurshid of Hyderabad built the pillars and the Gumbaad over the Mazaar as it appears now. And it is decorated with mirrors from within.

    Nasab Naama (Paternal Lineage)

    Khawaja Qutubuddeen bin Syed Musa bin Kamaaluddeen bin Syed Muhammed bin Syed Ahmed bin Ishaque bin Hassan bin Syed Maruf bin Syed Raziuddeen bin Syed Hisamuddin bin Syed Rashiduddeen bin Syed Jaafar bin Al Naqi bin Musa Raza bin Syedna Musa Qazim bin Syedna Jaafar Sadiq bin Imam Muhammed Baqar bin Zainul Abedin bin Imam Hussain bin Amirul Momineen Ali Razi-Allahu Anhum.


    SHIJRA ENGLISH - Urs of Khawaja Qutub-ud-din Bakhtiyar Kaki Rehmatullah-alaihi
    Last edited by shaikh_samee; 28-12-2015 at 09:03 AM.

  2. #2
    Join Date
    Feb 2008
    Location
    Islamabad, UK
    Posts
    88,507
    Mentioned
    1031 Post(s)
    Tagged
    9706 Thread(s)
    Thanked
    603
    Rep Power
    21474934

    Default Re: Urs of Khawaja Qutub-ud-din Bakhtiyar Kaki Rehmatullah-alaihi


  3. #3
    Join Date
    Feb 2011
    Location
    Is Duniya me
    Posts
    1,576
    Mentioned
    15 Post(s)
    Tagged
    1284 Thread(s)
    Thanked
    1
    Rep Power
    21474844

    Default

    802th Urs Mubarak of Hazrat Khwaja Syed Qutubuddin Bakhtiyar Kaki Rehmatullah-alaihi will be held from 12th to 14th Rabi ul Awwal.

  4. #4
    *jamshed*'s Avatar
    *jamshed* is offline کچھ یادیں ،کچھ باتیں
    Join Date
    Oct 2010
    Location
    every heart
    Posts
    14,586
    Mentioned
    138 Post(s)
    Tagged
    8346 Thread(s)
    Thanked
    4
    Rep Power
    21474858

    Default

    jazak1 - Urs of Khawaja Qutub-ud-din Bakhtiyar Kaki Rehmatullah-alaihi

  5. #5
    Join Date
    Sep 2010
    Location
    Mystic falls
    Age
    29
    Posts
    52,044
    Mentioned
    326 Post(s)
    Tagged
    10829 Thread(s)
    Thanked
    5
    Rep Power
    21474896

    Default

    Jazak ALLAH khair

  6. #6
    Join Date
    Feb 2011
    Location
    Is Duniya me
    Posts
    1,576
    Mentioned
    15 Post(s)
    Tagged
    1284 Thread(s)
    Thanked
    1
    Rep Power
    21474844

    Default

    حضرت خواجہ قطب الدین بختیار کاکی رحمتہ اللہ علیہ

    SHIJRA URDU - Urs of Khawaja Qutub-ud-din Bakhtiyar Kaki Rehmatullah-alaihi

    آپ اپنے وطن کو چھوڑ کر ہندوستان تشریف لائے اور خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ کی خدمت اور صحبت کو اپنے لئے باعث برکت سمجھا۔ اس صحبت اور خدمت کا آپ کو یہ صلہ ملا کہ آپ کو خواجہ غریب نوازرحمتہ اللہ علیہ کے خلیفہ ہونے کا فخر حاصل ہوا۔ خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ نے دہلی کی ولایت آپ کے سپرد فرمائی۔ حضرت قطب الدین بختیار کاکی رحمتہ اللہ علیہ سادات حسینی سے ہیں ۔ آپ سیدنا حضرت امام حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی اولاد امجاد میں سے ہیں۔ آپ کا نسب پدری حضرت علی کرم اللہ وجھہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے ملتا ہے۔جب آپ شکم مادر ہی میں تھے اسی وقت سے آپ کی بزرگی اور عظمت کے آثار نمایاں ہوگئے تھے۔ آپ کی والدہ محترمہ فرماتی ہیں کہ ’’ دوران حمل جب میں تہجد کی نماز پڑھنے کے لئے اٹھتی تو میرے شکم میں سے ذکر (اللہ اللہ) کی آواز سننے میں آتی۔ یہ آواز ایک ساعت تک رہتی تھی‘‘۔

    آدھی رات کے وقت آپ اس عالم فانی میں جلوہ گر ہوئے۔ نور نے آپ کے سارے گھر کو روشن کردیا۔ نور کی اس روشنی سے آپ کی والدہ محترمہ کو خیال ہوا کہ سورج نکل آیا ہے ۔ آپ کی والدہ محترمہ حیران تھیں۔ ۔ آپ کی والدہ محترمہ نے دیکھا کہ حضرت قطب صاحب رحمتہ اللہ علیہ کا سر مبارک سجدے میں ہے اور آپ زبان فیض ترجمان سے اللہ اللہ فرمارہے ہیں۔ آپ کی تاریخ پیدائش کے متعلق کافی اختلاف ہے۔ آپ کا سنہ ولادت 569 ہجری ہے۔ آپ کے کاکی کہلانے کی چند وجوہات ہیں جب قطب الاقطاب حضرت خواجہ قطب الدین بختیار کاکی رحمتہ اللہ علیہ نے دہلی مٰں رہنا شروع کیا تو آپ نے ظاہری اسباب سے قطع تعلق کرلیا۔ آپ مع متعلقین نہایت تنگی سے گزارہ کرتے تھے۔ حضرت قطب صاحب رحمتہ اللہ علیہ عالم استغراق میں رہتے تھے۔ آپ کی اہلیہ محترمہ خوردو نوش کا انتظام فرماتی تھیَ ایک دکاندار جس کا نام شرف الدین تھا۔وہ آپ کے پڑوس میں رہتا تھا۔حضرت قطب الدین کی اہلیہ محترمہ اس دکاندار کی بیوی سے قرض لے کر گزارہ کرتی تھیں اور کچھ آنے پر اس کا قرضہ ادا کر دیتی تھیں۔ یہ سلسلہ چلتا رہا۔ ایک دن اس دکاندار کی بیوی نے آپ کو طعنہ دیا اور کہا ’’ اگر وہ قرض نہ دے تو ان کا کام کیسے چلے۔ یہ بات حضرت قطب صاحب کی اہلیہ کو ناگوار گزری۔ آپ نے اس سے قرض لینا بند کردیا۔ جب یہ بات حضرت قطب صاحب کے علم میں آئی تو آپ نے ہدایت فرمائی کہ قرض نہ لیا جائے بلکہ ضرورت کے وقت بقدر ضرورت بسم اللہ الرحمن الرحیم کہہ کر حجرہ کے طاق سے روٹیاںاٹھالیا کریں۔آپ کی اہلیہ محترمہ ایسا ہی کرتیں۔ ایک دن آپ نے بقال کی بیوی کو اس بات سے آگاہ کردیا۔ اس دن کے بعد کا ک (نان) نکلنا بند ہوگیا۔
    آپ اپنے والدین کے سایۂ عاطفت میں پرورش پارہے تھے ۔ آپ کے والد اور والدہ آپ پر نازاں تھے۔گھر کی برکت کو اپنے شیر خوار بچے سے منسوب کرتے تھے۔ابھی حضرت قطب صاحب کی عمر مبارک ڈیڑھ سال کی تھی کہ والد کا سایہ آپ کے سر سے اٹھ گیا۔ اس کے بعد آپ کی پرورش کا پورا بار آپ کی والدہ محترمہ پر تھا۔ انہوں نے آپ کی تعلیم و تربیت کو ایک مقدس فریضہ سمجھا ۔ آپ کی ابتدائی تعلیم والدہ کی آغوش میں ہوئی۔جب حضرت قطب صاحب رحمتہ اللہ علیہ کی عمر چار سال چار ماہ اور چار دن کی ہوئی تو آپ کی والدہ کو آپ کی بسم اللہ خوانی کی فکر دامن گیر ہوئی۔ اتفاق سے ان ہی ایام میں حضرت خواجہ معین الدین چشتی رحمتہ اللہ علیہ اوش میں مقیم تھے۔ آپ سیرو سیاحت کرتے ہوئے اوش آئے ہوئے تھے۔ آپ کی شہرت سارے اوش میں تھی۔ حضرت کی والدہ نے اس موقع کو اپنے بچے کے لئے فال نیک سمجھا۔ آپ نے طے کی کیاکہ خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ جیسے جلیل القدر بزرگ سے وہ اپنے لڑکے کی بسم اللہ پڑھوائیں گی۔ آپ نے قطب صاحب کو خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ کی خدمت میں بھیجا۔خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ نے قطب صاحب رحمتہ اللہ علیہ کی تختی لکھنا چاہی۔ غیب سے آواز آئی کہ ’’ اے خواجہ! ابھی لکھنے میں توقف کرو۔ قاضی حمید الدین ناگوری آتا ہے ۔ وہ ہمارے قطب کی تختی لکھے گا اور تعلیم دے گا‘‘۔یہ آواز سن کر خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ رک گئے۔ اتنے میں قاضی حمید الدین ناگوری رحمتہ اللہ علیہ آگئے ۔ خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ نے تختی ان کو دے دی۔ قاضی حمید الدین ناگوری نے حضرت قطب صاحب رحمتہ اللہ علیہ سے دریافت کیا کہ تختی پر کیا لکھیں۔حضرت قطب صاحب رحمتہ اللہ علیہ نے جواب دیا ’’ سبحان الذی اسریٰ الخ۔ قاضی حمید الدین ناگوری یہ سن کر سخت متحیر ہوئے۔ آپ نے دریافت کیا!یہ تو پندرہویں سپارہ میںہے ۔ تم نے قرآن مجید کس سے پڑھا۔ حضرت قطب صاحب رحمتہ اللہ علیہ نے جواب دیا۔ ’’ میری والدہ ماجدہ کو پندرہ سپارے یاد ہیں۔ وہ میں نے شکم مادر میں حق تعالیٰ کی تعلیم سے یاد کرلیے‘‘ جب حضرت قطب صاحب رحمتہ اللہ علیہ کی عمر پانچ سال کی ہوئی تو آپ کی والدہ نے آپ کو مکتب میں داخل کرانا چاہا۔ یہ ایک خوشی کا موقع تھا۔ اس خوشی میں آپ کی والدہ نے دعوت کی۔ کچھ مٹھائی اور کچھ روپیہ دے کر حضرت قطب رحمتہ اللہ علیہ کو ایک خادم کے ہمراہ مکتب میں بھیجا۔ جب آپ خادم کے ساتھ محلہ کے مکتب میں جارہے تھے تو راستے میں آپ کو ایک بزرگ ملے۔ ان بزرگ نے خادم سے دریافت فرمایا۔ سعید ازلی کو کہاں لے جارہے ہو۔ خادم نے جواب دیا ’’ محلہ کے معلم کے پاس لئے جارہا ہوں‘‘ یہ سن کر اس بزرگ نے زور دیتے ہوئے کہا ’’ اس کو مولانا ابو حفص کے پاس لے جانا چاہئے‘‘۔ حضرت قطب رحمتہ اللہ علیہ کو ابو حفص کے پاس تعلیم کے لئے لے جایا گیا۔
    حضرت قطب صاحب رحمتہ اللہ علیہ نے تلاش حق کے جذبے سے متاثر ہوکر اپنے وطن کو چھوڑا۔ آپ ایک شہر میں پہنچے ۔اس شہر میں کچھ دن قیام کیا۔ آبادی سے کچھ فاصلہ پر ایک مسجد تھی۔ مسجد کے صحن میں ایک اونچا مینارہ تھا۔ حضرت قطب صاحب رحمتہ اللہ علیہ کو ایک ایسی دعا معلوم تھی کہ اگر اس دعا کو بعد ادائے دوگانہ مینارہ پر پڑھا جائے تو دعا کے لئے پڑھنے والے کو حضرت خضر عليه السلام کی ملاقات نصیب ہو۔ آپ نے اس موقع کو غنیمت سمجھا، دوگانہ ادا کیا پھر وہ دعا پڑھی۔ مینارہ سے نیچے اترے اور حضرت خضر عليه السلام کا انتظا ر کرنے لگے۔ مسجد میں کوئی شخص نظر نہ آیا۔ آپ مسجد سے باہر آگئے۔ ایک بزرگ کو دیکھا۔ ان بزرگ نے حضرت قطب صاحب رحمتہ اللہ علیہ سے دریافت کیا ’’ تو اس سنسان میدان میں تن تنہا کیا کر رہا ہے‘‘
    انہوں نے حضرت خضر عليه السلام سے ملنے کے بارے میں اپنے شوق کے بارے میں بتایا۔یہ سن کر اس بزرگ نے پوچھا۔کیا تو دنیا چاہتا ہے۔حضرت قطبرحمتہ اللہ علیہ نے کہا ،نہیں۔583 ہجری میں حضرت قطب نے خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ کے ساتھ مکہ معظمہ پہنچے اور زیارت کعبہ سے مشرف ہوئے۔585 ہجری میں مدینہ منورہ سے خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ مع حضرت قطب صاحب رحمتہ اللہ علیہ بغداد شریف پہنچے ۔ بغداد پہنچ کر آپ نے وہاں کچھ دن آرام کیا۔پھر 586 ہجری میں بغداد روانہ ہوئے۔ حضرت قطب صاحب رحمتہ اللہ علیہ اپنے پیرو مرشد غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ کے ہمراہ تھے۔ بغداد سے روانہ ہوکر ہرات پہنچے۔پھر وہاں سے لاہور ہوتے ہوئے دہلی پہنچے اور یہاں سے اجمیر گئے۔کچھ دن اجمیر میں قیام کرنے کے بعد خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ غزنیں تشریف لے گئے۔ آپ کے مریدین و معتقدین سبھی آپ کے ہمراہ ہولئے۔ حضرت خواجہ قطب رحمتہ اللہ علیہ کو اپنی والدہ سے رخصت ہوئے کافی عرصہ ہوگیا تھا۔ آپ اوش تشریف لے گئے۔ جب خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ واپس اجمیر تشریف لے آئے تو حضرت قطب رحمتہ اللہ علیہ بھی ہندوستان روانہ ہوئے اور 590 میں ملتا ن میں رونق افروز ہوئے،۔ یہیں بابا گنج شکررحمتہ اللہ علیہ نے آپ سے ملاقات کی اور آپ کے دست پر بیعت کی۔ اس وقت بابا گنج رحمتہ اللہ علیہ کی عمر صرف پندرہ سال بتائی جاتی ہے۔
    آپ کو عبادت میں بہت لطف آتا تھا۔ آپ حافظ قرآن تھے ۔ روزانہ ایک قرآن ختم کرتے تھے۔ لوگوں سے چھپکر عبادت کرتے تھے ۔روزانہ تین سو رکعت نفل روزانہ پڑھتے تھے۔ گوشہ نشینی پسند فرماتے تھے۔ کم کھانا، کم بولنا اور کم سونا آپ کا شعار تھا۔حضرت قطب رحمتہ اللہ علیہ کو اپنے فقرو فاقہ پر فخر تھا۔ آپ کے وابستگان کو اکثر فاقہ رہتا تھا لیکن کسی پر یہ ظاہر نہ کرتے تھے کہ گھر میں فاقہ ہے۔آپ نذرانہ قبول نہیں فرماتے تھے۔ ایک مرتبہ سلطان شمس الدین التمش نے کچھ روپے اور اشرفیاں آپ کی خدمت میں بھیجیں ،لیکن آپ نے اسے قبول نہیں کیا۔آپ کو سماع کا بے حد شوق تھا، سماع میں آپ پر کیفیت طاری ہوتی تو کئی کئی روز بے خود رہتے۔
    ۔ دہلی میں ایک محفل سماع کے دوران حضرت احمد جام کے شعرمحفل سماع میں ایک شعر
    کُشتگانِ خنجرِ تسلیم را
    ہر زماں از غیب جانِ دیگر اَست

    سن کر وجد طاری ہوا وہ تین روزاسی وجد میں رہے آخر١٤ ربیع الاول ٦٣٣ ہجری- 27 نومبر 1235 کو انتقال فرماگئے۔ نماز جنازہ التمش نے پڑھائی۔ آپ کا مزار دہلی کے علاقے مہرولی میں
    ہے۔


    جب حضرت خواجہ قطب الدین بختیار کاکی رحمتہ اللہ علیہ کی وفات ہوئی تو کہرام مچ گیا۔ جنازہ تیار ہوا، ایک بڑے میدان میں لایا گیا۔ بے پناہ لوگ نماز جنازہ پڑھنے کے لیے آئے ہوئے تھے۔ انسانوں کا ایک سمندر تھا جو حد نگاہ تک نظر آتا تھا۔ جب جنازہ پڑھنے کا وقت آیا، ایک آدمی آگے بڑھا اور کہنے لگا کہ میں خواجہ قطب الدین بختیار کاکی رحمتہ اللہ علیہ کا وکیل ہوں۔ حضرت نے ایک وصیت کی تھی۔ میں اس مجمعے تک وہ وصیت پہنچانا چاہتا ہوں۔ مجمعے پر سناٹا چھاگیا۔ وکیل نے پکار کر کہا۔ حضرت خواجہ قطب الدین بختیار کاکی رحمتہ اللہ علیہ نے یہ وصیت کی کہ میرا جنازہ وہ شخص پڑھائے جس کے اندر چار خوبیاں ہوں۔
    زندگی میںاس کی تکبیر اولیٰ کبھی قضا نہ ہوئی ہو۔
    اس کی تہجد کی نماز کبھی قضا نہ ہوئی ہو۔
    اس نے غیر محرم پر کبھی بھی بری نظر نہ ڈالی ہو۔
    اتنا عبادت گزار ہو کہ اس نے عصر کی سنتیں بھی کبھی نہ چھوڑی ہوں۔
    جس شخص میں یہ چار خوبیاں ہوں وہ میرا جنازہ پڑھائے۔ جب یہ بات سنائی گئی تو مجمعے پر ایسا سناٹا چھایا کہ جیسے مجمعے کو سانپ سونگھ گیا ہو۔ کافی دیر گزر گئی، کوئی نہ آگے بڑھا۔ آخر کار ایک شخص روتے ہوئے حضرت خواجہ قطب الدین بختیار کاکی رحمتہ اللہ علیہ کے جنازے کے قریب آئے۔ جنازہ سے چادر اٹھائی اور کہا۔ حضرت! آپ خود تو فوت ہوگئے مگر میرا راز فاش کردیا۔
    اس کے بعد بھرے مجمعے کے سامنے اللہ تعالیٰ کو حاضر و ناظر جان کر قسم اٹھائی کہ میرے اندر یہ چاروں خوبیاں موجود ہیں۔ یہ شخص وقت کا بادشاہ شمس الدین التمش تھے۔


    Last edited by shaikh_samee; 28-12-2015 at 09:02 AM.

  7. #7
    Join Date
    Mar 2010
    Location
    ممہ کہ دل میں
    Posts
    40,298
    Mentioned
    32 Post(s)
    Tagged
    4710 Thread(s)
    Thanked
    4
    Rep Power
    21474884

    Default

    جزاک اللہ خیر

  8. #8
    Join Date
    Feb 2011
    Location
    Is Duniya me
    Posts
    1,576
    Mentioned
    15 Post(s)
    Tagged
    1284 Thread(s)
    Thanked
    1
    Rep Power
    21474844

    Default

    حضرت خواجہ قطب الدین بختیار کاکی رحمتہ اللہ علیہ سُلطان الہند خواجہ معین الدین چشتی اجمیری رحمتہ اللہ علیہ کے خلیفہ اور بابا فرید الدین گنج شکر رحمتہ اللہ علیہ کے پیر و مرشد ہیں۔ شہنشاہ التمش کے دور میں اس کے وزرا ء اورامہ میں مسلمانوں کے علاوہ ہندو اور سکھ بھی شامل تھے جو ایسی کوششیں کرتے رہتے تھے کہ کس طرح سے شہنشاہ التمش کو حضرت بختیار کا کی رحمتہ اللہ علیہ سے بدظن کیا جائے انہوں نے مل کر حضرت بختیار کاکی رحمتہ اللہ علیہ کے خلاف بلکہ عالم اسلام کے خلاف ایک انتہائی بھیانک سازش کی اور شہنشاہ التمش کے دربار میں موجود میں اس کے قاضی اور ایک وزیر کو انتہائی مال و دولت دیکر انہیں بھی اس سازش میں شامل کر لیاوزیر کا نام حسن شاہ تھاانہوں نے اس سازش کو مکمل کامیاب بنانے کے لئے بازارحسن سے ایک طوائف کو خریدا جسکا حسن اپنی مثال آپ تھااس طوائف کی گود میں حسن شاہ نامی وزیر کا بیٹا جس کی عمر صرف ایک ماہ تھی ڈال دیا اس سازش کو عملی جامہ پہنانے کے لیے اس عورت کو لیا گیا کہ وہ اب شہنشاہ التمش کے دربار میں جائے یہ 561ھ کا واقعہ ہے ایک دن التمش کا دربار لگا ہوا تھا تمام امراء اور وزراء دربار میں موجود تھے کہ وہ عورت اندر آئی اور زور زور سے کہنے لگی دہائی ہے دہائی ہے شہنشاہ التمش نے اس عورت سے کہا کہ اے بی بی کیا بات ہے تم کیوں اس طرح سے چلارہی ہو اس عورت نے جواب دیا کہ اے شمس میرے ساتھ زیادتی ہوئی ہے التمش نے پوچھا کہ کون ہے وہ جس نے تیرے ساتھ برا سلوک کیا ہے اس عورت نے جواب دیا کہ اے التمش میں نے بتادیا کہ وہ کون ہے تو توکچھ نہیں کر سکے گا شہنشاہ نے اپنی تلوار میان سے باہر نکالی اور کہا کہ قسم ہے مجھے رب کی اور اپنے مرشد (بختیار کاکی)پاک کی کہ اگر میرا باپ بھی مجرم ہوا تو اسے بھی سزا دی جائے گی اس عورت نے کہا کہ اے التمش پھر سوچ لے انصاف نہ کر سکے گا التمش نے کہا کہ مجھے اس ترازو کی قسم ہے جسے رب کریم نے برابر رکھا ہے تجھے انصاف ضرور ملے گا بتا تیرا مجرم کون ہے تو اس عورت نے کہا کہ اے التمش وہ شخص تیرے پیرومرشد بختیار کاکی رحمتہ اللہ علیہ ہیں میری گود میں ایک ماہ کا بچہ ان کا ہے اور اب وہ اسے پہچانے سے انکار کر رہے ہیںیہ سنتے ہی شہنشاہ التمش غصے میں آ گیا اور اپنی تلوار میان سے نکال لی اور شدت غم سے کانپنے لگا اور اس عورت سے کہا کہ اے عورت تو جانتی ہے کہ تو کیا کہہ رہی ہے اور کس پر الزام لگا رہی ہے تو اس عورت نے جواب دیا ہاں اے التمش میں جانتی ہوں کہ وہ تیرے مرشد ہیں اور تو ان کے خلاف کچھ نہیں کر سکے گا شہنشاہ التمش نے اسے جواب دیا کہ اے عورت تجھے انصاف ضرور ملے گا کل دوبارہ تم دربار میں پیش ہو جانا تیرے مجرم کو سزا ضرور ملے گی یہ بات کر کے شہنشاہ التمش نے اپنی تلوار میان سے باہر نکال کر رکھ دی اپنے سر سے تاج اتا را اور ننگے پائوں اس نے حضرت بختیار کاکی رحمتہ اللہ علیہ کے حجرے مبارک کی طرف دوڑ لگا دی آنکھوں سے زور و قطار آنسو بہہ رہے تھے
    اسی حالت میں شہنشاہ التمش حجرے کے پاس پہنچا جب وہ اندر داخل ہوا تو حضرت بختیار کاکی آپ کو دیکھ کر مسکرائے اور کہا کہ کہو التمش آج بے وقت کیسے آئے ہو التمش نے ساری بات بتا دی اور کہا کہ آپ کو میرے ساتھ چلنا ہو گا آپ نے فرما یا اچھا آپ نے اپنی صفائی میں ایک لفظ بھی نہیں کہا اور خاموشی سے اٹھ کر شہنشاہ التمش کے پیچھے چل دیئے یہ بات سارے دہلی شہر کے علاوہ دوسرے علاقے کے رہنے والوں تک پھیل گئی تھی اس لئے لوگ جوق در جوق شاہی محل کے پاس اکٹھے ہو نے لگے مسلمانوں کے علاوہ ہندو ، سکھ ، عیسائی اور دوسرے مذاہب سے تعلق رکھنے والے لوگ بھی اکٹھے ہو گئے تھے کہ اب دیکھیں گے کہ مسلمانوں کی عزت کا جنازہ کیسے نکلتا ہے

    حضرت بختیار کاکی
    رحمتہ اللہ علیہ جو بہت پارسا بنتے تھے اپنے اوپر لگا یا ہوا الزام کیسے غلط ثابت کریںگے پورا دلی شہر وہاں امڈ آیاتھا شہنشاہ التمش کا دربار لوگوں سے بھر گیا تھا ادھر یہ صورتحال تھی اُدھر اجمیر شریف میں حضرت خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ اپنے مریدوں سے فر ما رہے تھے کہ آج میرا بیٹا مصیبت میں ہے اور وہ مجھے بلا رہا ہے آج اگر میں نہ پہنچا تو مسلمانوں کا نام تاریخ سے ختم ہو جائے گا ،ولیوں کا نام و نشان بھی نہیں رہے گا ایمان ہمارا کرشمہ ہے اور اسلام ہماری طاقت رسول عربی ۖ ہمیںکبھی بھی معاف نہیں فرمائیں گے

    آپ نے یہ فر ما یا اور دلی شہر کی جانب چل پڑے شہنشاہ التمش کا دربارلگا ہوا تھا حضرت بختیار کاکی
    رحمتہ اللہ علیہ مجرموں کے کٹہرے میں کھڑے ہو گئے شہنشاہ التمش نے اپنا تاج سر پہ رکھا اور تلوار میان میں رکھی اور اس عورت سے کہا کہ اے عورت تو اب بتا جو کچھ تو نے کل کہا تھا اسے دوبارہ بختیار کاکی کے سامنے بیان کر اس عورت نے پھر وہی باتیں دو ہرائیں اتنے میں شہنشاہ ہندحضرت خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ دربار میں داخل ہو ئے

    دربار پر ایک سکوت طاری تھا شہنشاہ التمش حضرت خواجہ غریب نواز
    رحمتہ اللہ علیہ سے عقیدت و احترام سے پیش آیا اور انہیں بیٹھنے کے لئے اپنی کرسی پیش کی تو حضرت خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ نے فر ما یا کہ نہیں آج ہم اس کرسی کے قابل نہیں ہیں کیونکہ ہمارا بیٹا مجرموں کے کٹہرے میں کھڑا ہے حضرت خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ نے اس عورت سے پوچھا کہ اے عورت بتا کیا یہ تیرا مجرم ہے تو اس عورت نے جواب دیا کہ جی ہا ں بختیار کاکی ہی میرے مجرم ہیں آپ نے تین مرتبہ سوال کیا تو اس عورت نے یہی جواب دیا آپ نے پوچھا کہ اے عورت اس واقعہ کا کوئی گواہ بھی ہے تو اس عورت نے جواب دیا ہاں اور ساتھ ہی چار گواہ بھی پیش ہو گئے

    ان چاروں نے شہادت گزاری کہ ہم نے مختلف اوقات میں حضرت بختیار کا کی
    رحمتہ اللہ علیہ اور اس عورت کو اکھٹے اٹھتے بیٹھتے دیکھا ہے جب وہ چاروں آدمی اپنی اپنی شہادتیں گزار چکے تو حضرت خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ درمیان میں کھڑی اس عورت کے پاس گئے اور فر ما یا کہ اے عورت یہ سن لے کہ یہ جہان فا نی ہے کل تم نے بھی اس دنیا سے چلے جا نا ہے ابھی بھی وقت ہے سوچ لے لیکن اس مکار عورت نے جواب دیا کہ میرے مجرم وہی ہیں اور انہیں اس کی سزا ملنی چاہئے یہ سن کر حضرت خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ جلال میں آ گئے آپ شدت غصہ سے کانپ رہے تھے محل کے درودیوار تک لرز رہے تھے حضرت بختیار کا کی رحمتہ اللہ علیہ نظریں جھکائے با لکل خاموش کھڑے ہو ئے تھے انہوں نے اپنی صفائی میں ایک لفظ تک نہ کہا حضرت خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ نے فر ما یا کہ اے لوگو تم نے اس عورت کی با تیں سنی میں اب اللہ کے فضل و کرم سے ایک شہادت گزارنے والا ہوں جو کہ خود یہ ثابت کر دے گی کہ میرا بیٹا مجرم ہے کہ نہیں !آپ اس عورت کے قریب آئے اور اس کی گود میں موجود بچے کے منہ سے کپڑا ہٹا یا اور اس بچے کو کہا کہ اے بچے میں تجھے اللہ کے فضل و کرم سے یہ حکم دیتا ہوں کہ تو بول اور یہ بتا کہ تو کس کا بیٹا ہے میں تجھے ولی بنا تا ہوںاور تیری آئندہ آنے والی نسلیں بھی ولی ہو ںگی تو اللہ کے حکم سے بول تو وہاں دیکھنے والے حیران رہ گئے اور سننے والے پریشان ہو گئے کہ وہ بچہ جو صرف ایک ماہ کا تھا بول پڑا اور کہا کہ اے خواجہ غریب نواز رحمتہ اللہ علیہ السلام علیکم میںاس دربار میں موجود حسن شاہ نامی وزیر کا بیٹا ہوں اور حضرت بختیار کاکی رحمتہ اللہ علیہ با لکل بے گناہ اور پاکیزہ ہیں

    حضرت خواجہ غریب نواز
    رحمتہ اللہ علیہ نے اس بچے سے کہا کہ میں آج سے تیرا نام کرامت حسین رکھ رہا ہوں تاریخ تجھے یاد رکھے گی اور تو اپنے وقت کا بلند مرتبت فقیر ہو گا اور حضرت بختیار کا کی رحمتہ اللہ علیہ کو اپنے ساتھ لیااور وہاں سے چل پڑے یہ دیکھ کر شہنشاہ التمش آپ کے قدموں میں گر گیا اور اس عورت اور اس وزیر کو قتل کر دینے کا حکم دیا تو حضرت بختیار کا کی رحمتہ اللہ علیہ نے فر ما یا کہ میں نے انہیںمعاف کیا اللہ بھی انہیںمعاف کرے یہ سن کر وہ عورت اور وزیر بھی آپ کے قدموں میں گر گئے آپ نے ان سے فر ما یا کہ میں نے تمھیں معاف کر دیا ہے ۔

    Last edited by shaikh_samee; 28-12-2015 at 09:35 AM.

  9. #9
    Join Date
    Aug 2012
    Location
    Baazeecha E Atfaal
    Posts
    12,042
    Mentioned
    303 Post(s)
    Tagged
    207 Thread(s)
    Thanked
    219
    Rep Power
    18

    Default


  10. #10
    Join Date
    Mar 2009
    Location
    Dhundo :p
    Age
    26
    Posts
    24,442
    Mentioned
    279 Post(s)
    Tagged
    159 Thread(s)
    Thanked
    3481
    Rep Power
    21474869

    Default

    Jazakallah

Page 1 of 2 12 LastLast

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •