Results 1 to 1 of 1

Thread: Zindagi Ke Bare Mai

  1. #1
    Join Date
    Jun 2010
    Location
    Jatoi
    Posts
    59,925
    Mentioned
    201 Post(s)
    Tagged
    9827 Thread(s)
    Thanked
    6
    Rep Power
    21474903

    Default Zindagi Ke Bare Mai


    زندگی کے بارے میں بہت کچھ کہا گیا ہے۔ زندگی وجودیت ہے، روحانیت ہے، جنسیت ہے، حسیت ہے، وحدت الوجود ہے، وحدت الشہود ہے، معاشی استحکام کا نام ہے، حقیقت ہے، خواب ہے، تقدیر ہے، تدبیر ہے، یہ عقیدہ ہے وہ عقیدہ ہے۔ یہ سب صحیح ہے۔ اس میں الجھاؤ نہیں ۔ لیکن میری زندگی میرا ہی نام ہے، میرا ہی عمل ہے، مجھ سے میرے بارے میں سوال ہو گا۔سورج کا مذہب نہیں پوچھا جاتا، اس سے روشنی حاصل کی جاتی ہے۔ ہر انسان ہر دوسرے انسان کی ضرورت کا خیال رکھے تو عقائد کا تضاد ختم ہو جاتا ہے۔
    تضادِ تخلیق ہی حسنِ تخلیق ہے۔ تضادِ فکر حسن ہے۔ تضادِ اعتقاد ہی زمین پر حسنِ عقیدت ہے۔ شاہین اپنی بلند پروازی میں کوتاہی نہ کرے، اپنی بلند نگاہی کا لطف اٹھائے، اسے کرگس کی مردارخوری سے کیا عناد؟ مور اپنے پروں کو پھیلا کر رقص کرے، اسے کوؤں سے کیا ضد؟
    واصف علی واصف، دل دریا سمندر، صفحہ 98
    Last edited by Hidden words; 07-08-2012 at 12:55 AM.





    تیری انگلیاں میرے جسم میںیونہی لمس بن کے گڑی رہیں
    کف کوزه گر میری مان لےمجھے چاک سے نہ اتارنا

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •