Results 1 to 2 of 2

Thread: انداز ہو بہو تری آوازِ پا کا تھا

  1. #1
    Join Date
    Aug 2011
    Location
    SomeOne H3@rT
    Age
    31
    Posts
    2,331
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    825 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    429507

    candel انداز ہو بہو تری آوازِ پا کا تھا

    انداز ہو بہو تری آوازِ پا کا تھا
    دیکھا نکل کے گھر سے تو جھونکا ہوا کا تھا

    اٹھا عجب تضاد سے انسان کا خمیر
    عادی فنا کا تھا تو پجاری بقاء کا تھا
    ...
    اس رشتۂ لطیف کے اسرار کیا کھلیں
    تو سامنے تھا اور تصور خدا کا تھا

    ٹوٹا تو کتنے آئینہ خانوں پہ زد پڑی
    اٹکا ہوا گلے میں جو پتھر صدا کا تھا

    چھپ چھپ کے روؤں اور سرِ انجمن ہنسوں
    مجھ کو یہ مشورہ مرے درد آشنا کا تھا

    دل راکھ ہو چکا تو چمک اور بڑھ گئی
    یہ تیری یاد تھی کہ عمل کیمیا کا تھا

    اس حسنِ اتفاق پہ لٹ کر بھی شاد ہوں
    تیری رضا جو تھی وہ تقاضا وفا کا تھا

    حیران ہوں کہ دار سے کیسے بچا ندیم
    وہ شخص تو غریب و غیور انتہا کا تھا

    احمد ندیم قاسمی
    Last edited by T@nHA.D!L; 17-02-2012 at 08:54 AM.

  2. #2
    Join Date
    Jul 2011
    Location
    Karachi Pakistan
    Posts
    13,592
    Mentioned
    62 Post(s)
    Tagged
    7109 Thread(s)
    Thanked
    1
    Rep Power
    21474856

    Default Re: انداز ہو بہو تری آوازِ پا کا تھا

    wahh bohat umdaaa

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •