Results 1 to 2 of 2

Thread: طے کر نہ سکا زیست کے زخموں کا سفر بھی

  1. #1
    Join Date
    Aug 2011
    Location
    SomeOne H3@rT
    Age
    31
    Posts
    2,331
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    825 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    429507

    طے کر نہ سکا زیست کے زخموں کا سفر بھی

    طے کر نہ سکا زیست کے زخموں کا سفر بھی
    حالانکہ مِرا دِل تھا شگوفہ بھی شرر بھی

    اُترا نہ گریباں میں مقدر کا ستارا
    ہم لوگ لٹاتے رہے اشکوں کے گہر بھی
    ...
    حق بات پہ کٹتی ہیں تو کٹنے دو زبانیں
    جی لیں گے مِرے یار باندازِ دگر بھی

    حیراں نہ ہو آئینہ کی تابندہ فضا پر
    آ دیکھ ذرا زخمِ کفِ آئینہ گر بھی

    سوکھے ہوئے پتوں کو اُڑانے کی ہوس میں
    آندھی نے گِرائے کئی سر سبز شجر بھی

    وہ آگ جو پھیلی میرے دامن کو جلا کر
    اُس آگ نے پھونکا میرے احباب کا گھر بھی

    محسن یونہی بدنام ہوا شام کا ملبوس
    حالانکہ لہو رنگ تھا دامانِ سحر بھی

  2. #2
    Join Date
    Jul 2010
    Location
    Karachi....
    Posts
    31,280
    Mentioned
    41 Post(s)
    Tagged
    6917 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    21474875

    Default Re: طے کر نہ سکا زیست کے زخموں کا سفر بھی

    bht Khoob!!


    Ik Muhabbat ko amar karna tha.....

    to ye socha k ..... ab bichar jaye..!!!!


Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •