Page 1 of 2 12 LastLast
Results 1 to 10 of 12

Thread: Urdu Writer''s competition March 2012

  1. #1
    Join Date
    Jun 2011
    Location
    China
    Posts
    4,833
    Mentioned
    29 Post(s)
    Tagged
    9237 Thread(s)
    Thanked
    2
    Rep Power
    21474847

    Default Urdu Writer''s competition March 2012

    As-Salam-O-Alaikum
    Is dafa thoray mukhtalif khyal k sath hazir hun.
    Is maah ap ko aik muhawra dya ja raha hay jis ki tashreeh ap nay mazah ka rang bhar kr apnay mann gharat matlab sa karni hay..

    Ap ko dya janay wala muhawra ha

    "bhains k agay been bajana"

    Rules:

    Aik member aik he bar Share Karsakta hai.
    Competition ki last Date 21 March hai.
    winner Admin Team Decide Kare gi.
    Ikhlaqyat aur Adbi andaz ko mad-e-nazar rakhyay ga
    Zindagi tu apnay he qadmun pe chalti hay Faraz
    Auron k Sahary tu Janazy utha kartay hain

  2. #2
    Join Date
    Mar 2010
    Location
    Karachi,Pakistan
    Posts
    11,803
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    16 Thread(s)
    Thanked
    2
    Rep Power
    21474855

    Default Re: Urdu Writer''s competition March 2012

    walaikum Assalam..

    haha acha hai is baar kuch alag ho jaye..

    nice topic i will try to participate ...
    Alhamdullilah

  3. #3
    Join Date
    Jun 2011
    Location
    China
    Posts
    4,833
    Mentioned
    29 Post(s)
    Tagged
    9237 Thread(s)
    Thanked
    2
    Rep Power
    21474847

    Default Re: Urdu Writer''s competition March 2012

    Quote Originally Posted by ๓เรђคคl View Post
    walaikum Assalam..

    haha acha hai is baar kuch alag ho jaye..

    nice topic i will try to participate ...
    thanks dear..
    i wil wait for ur participation
    Zindagi tu apnay he qadmun pe chalti hay Faraz
    Auron k Sahary tu Janazy utha kartay hain

  4. #4
    Join Date
    Jul 2011
    Location
    Lahore-Pakistan
    Posts
    1,636
    Mentioned
    2 Post(s)
    Tagged
    944 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    21474844

    Default Re: Urdu Writer''s competition March 2012

    yeh to bohat mushkil hai.......sanjeedgi se achanak mazah.....hmmmm.....chalain dekhtay hain sab dost log kia kia send kartay hain
    sagar3 - Urdu Writer''s competition March 2012

    جانےکیسا رشتہ ہےمیرا اسکیذاتکےساتھ
    وہذرا بھیخاموشہوتوسانس ٹھہرسی جاتی ہے




  5. #5
    Join Date
    Jun 2011
    Location
    China
    Posts
    4,833
    Mentioned
    29 Post(s)
    Tagged
    9237 Thread(s)
    Thanked
    2
    Rep Power
    21474847

    Default Re: Urdu Writer''s competition March 2012

    Quote Originally Posted by **Sagar** View Post
    yeh to bohat mushkil hai.......sanjeedgi se achanak mazah.....hmmmm.....chalain dekhtay hain sab dost log kia kia send kartay hain
    yahi tu maza hay naa..i think aik writer ko har topic par kalam azmai krni chahyay..Ap bhi koshish krain kya maloom acha tajarba sabit hu
    Zindagi tu apnay he qadmun pe chalti hay Faraz
    Auron k Sahary tu Janazy utha kartay hain

  6. #6
    Join Date
    Sep 2011
    Location
    Jadoo Nagri
    Posts
    19,713
    Mentioned
    198 Post(s)
    Tagged
    8340 Thread(s)
    Thanked
    10
    Rep Power
    21474862

    Default Re: Urdu Writer''s competition March 2012

    try to kiya hai likhnay ka agay Allah malik
    بھینس کے آگے بین بجاناا

    بچپن میں اکثر بڑوں سے یہ محاورہ سنتے کہ بھینس کے

    آگے بین کون بجاے تب ہم یہ سمجھتے کے حقیقت میں ایسا

    ہی ہوتا ہوگا اور تصور کی آنکھ سے اماں یا بڑی آپا کو دیکھتے

    کہ وہ بھوری بھینس کے آگے بین بجا رہی ہیں اور بھینس سانپ

    کی طرح ناچ رہی ہے بڑے ہوے تو اس کا مطلب بھی خوب سمجھ

    میں آگیا۔ہماری اماں اکثر ہمیں کہتی رہتی ہیں اے بٹیا زرا سہی

    سے کھانا پکانا سیکھ لے لیکن ہمارے کان پر جوں نہ رینگتی

    نتیجہ وہی "ڈھاک کے تین پات"تب اماں چڑ کے کہتں اے بنو

    بھینس کے آگے بین کون بجاے۔

    آج کل ہمارے حکمرانوں کا بھی یہی حال ہے کوئ بات انھیں

    سمجھ نھی آتی اور عوام یہ سوچ کے صبر کر لیتی کہ ان کو

    کچھ کہنا "بھینس کے آگے بین بجانا ہے"

    عوام کہے بجلی گیس کی قیمتیں کم کردو اور وہ فرمائیں گے

    "ہم بی بی کا بدلہ لے کے رہیں گے" از زرداری

    لوگ کہیں آٹا چینی گھی تو سستا کر دو اور وہ کیں گے

    "وقت آنے پر بتاوں گا" از رحمان ملک

    ہم بھی اب بین بجا بجا کے سوری لکھ لکھ کے تھک گے

    اسی لیے جاتے ہوے بس یہ کہیں گے


    یہ دولت بھی لے لو یہ شہرت بھی لے لو

    بھلے چھین لو مجھ سے میری جوانی

    مگر مجھ کو لوٹا دو وہ قیمتیں پرانی

    وہ آٹا وہ چینی وہ بجلی وہ پانی


    Last edited by Falling Tears; 08-03-2012 at 12:35 PM.

  7. #7
    Join Date
    Jul 2011
    Location
    Lahore-Pakistan
    Posts
    1,636
    Mentioned
    2 Post(s)
    Tagged
    944 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    21474844

    Default Re: Urdu Writer''s competition March 2012

    بے نام وضاحت

    شاید یہ بات کسی حد تک ٹھیک ہی ہے کہ انسان جتنا کسی چیز کو چاہتا ہے وہ اتنا ہی دور چلی جاتی ہے۔
    عوام نے روٹی کپڑا اور مکان مانگا مگر مسلسل نسل در نسل چھنتا ہی گیا۔
    خیر ایک بات اس تمام ماجرے کی زینت بنی رہی۔ کہ عوام جتنا چاہے کسی چیز کو حاصل کرنے کے لئے تگ ودو کرے مگر حاصل کچھ نہیں ہوتا۔
    حکومت کو ایک بات کی تسلی شاید کسی بابائے اردو نے کروا دی ہے کہ بھینس کے آگے جتنی مرضی بین بجاتے رہو اس کے کان پہ جوں نہیں رینگتی
    خیر اس بات کی تسلی کے لئے ایک صاحب نے جنہیں میں بڑی اچھی طرح جانتا ہوں ان کا شمار جلیبی لوگوں میں ہوتا ہے۔۔ارے جناب وہ انڈیا والی جلیبی بائی کے خاندان سے نہیں ۔۔۔۔بلکہ جلیبی لوگ ان لوگوں کو کہا جاتا ہے کہ جن کا کوئی کام بھی سیدھا نہیں ہوتا۔
    خیر ان صاحب کو ایک تدبیر سوجھی اور کہیں سے ایک جوگی کو لیکر آئے اور محلے میں موجود شناور گجر کی بھینسوں پر زور آزمائی کرنے کی غرض سے شناور گجر کے گھر پہنچے۔۔۔۔ گھر سے معلوم ہوا کہ تمام بھینسیں تو چارہ چرنے کے لئے گھر سے فالحال باہر ہیں البتہ ایک بھینس گھر میں ضرور موجود ہے۔مگر ذرا اتھری ہے اس لئے اس کو باقی بھینسوں کے ساتھ باہر جانے کی کوئی اجازت نہیں۔
    ارے یاد آیا یہ تو وہی بھینس ہے نا؟؟ جو اکثر گلی میں سے گزرتے ہوئے ہمارے کرکٹ کھیلنے کی جگہ پر کئی دفعہ اپنی پھلکاریاں پھینک کے جاتی ہے۔۔۔۔۔ جناب پھلکاریوں کا مطلب وہ باغوں والی نہیں بلکہ بھینس کے اوور فلو کی بات کر رہا ہوں۔۔۔۔ یہ تو وہی بھینس ہے جو میرے چار عدد ذاتی کچھے اور محلے کے کئی لوگوں کی بہت ساری چیزیں اپنے پیٹ میں سمائے ہوئے ہے ۔۔۔۔ یہ مجھے بھینس کم اور لنڈے بازار کی تاجر زیادہ معلوم پڑتی ہے ۔۔۔ خیر ان صاحب نے اسی بھینس کے آگے بیچارے بھوکے جوگی سے چار گھنٹے بین بجوائی مگر بھینس کے کان پر جوں نہ رینگی ۔۔۔۔ ہاں البتہ اس واقعے کے بعد محلے کے زیادہ تر بچے ننگے پھرتے رہے ہیں ۔۔۔چونکیے مت اس بین کے مدھر سروں نے جنابہ بھینس صاحبہ کے دماغ اور جسم کو اس حد تک چست کر دیا کہ اس نے محلے کے تمام بچوں کے سارے کپڑے ہی نگل لئے ۔۔۔۔۔
    ویسے مجھے اس بین کی بھی کوئی سمجھ نہیں آتی کہتے ہیں کہ سانپ بہرہ ہوتا ہے اسے کچھ سنائی نہیں دیتا ۔۔۔۔ جب سانپ کے آگے بین بجتی ہے تو سانپ سے زیادہ دیکھنے والے ڈر رہے ہوتے ہیں۔۔
    اللہ جانے کہ اس بین میں کیا ایسا جادو ہے جو بھی سنتا ہے پہلے سے زیادہ ظلم کرتا ہے ۔۔۔۔ تو بیچاری بھینس کا کیا قصور؟؟؟؟؟؟؟

    از اسد علی حسنین**sagar**
    sagar3 - Urdu Writer''s competition March 2012

    جانےکیسا رشتہ ہےمیرا اسکیذاتکےساتھ
    وہذرا بھیخاموشہوتوسانس ٹھہرسی جاتی ہے




  8. #8
    Join Date
    Nov 2011
    Location
    Sahiwal
    Posts
    288
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    9 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    7

    Default Re: Urdu Writer''s competition March 2012

    Main bhi likhoun ga


  9. #9
    Join Date
    Jun 2011
    Location
    China
    Posts
    4,833
    Mentioned
    29 Post(s)
    Tagged
    9237 Thread(s)
    Thanked
    2
    Rep Power
    21474847

    Default Re: Urdu Writer''s competition March 2012

    Quote Originally Posted by Bilal Azam View Post
    Main bhi likhoun ga
    sure..tehreer ka intizar rahay ga
    Zindagi tu apnay he qadmun pe chalti hay Faraz
    Auron k Sahary tu Janazy utha kartay hain

  10. #10
    Join Date
    Nov 2011
    Location
    Sahiwal
    Posts
    288
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    9 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    7

    Default Re: Urdu Writer''s competition March 2012

    بھینس کے آگے بین بجانا

    بڑے بوڑھوںسے سنتے آئے ہیں کہ بھینس کے آگے بی بجاﺅ تو وہ زیادہ دودھ دیتی ہے۔ ہائے افسوس کہ جاسوسی کے شوق نے یہ کام بھی کروا ڈالا۔ ہمارے بہت ہی شریف سے ہمسائے جنہوں نے بیسوں کا پورا خادان پالا ہوا تھا ، ایک دن کسی کام سے اپے کسی عزیز کے ہاں تشریف لے گئے، مگر غلطی سے بھینسوں کے باڑے کا دروازہ کھلا چھوڑ گئے۔ بس پھر کیا تھا نہ تپتی دھوپ کا احساس کیانہ چلچلاتی گرمی کا خیال۔ ساتھ والے کی سو سال پرانی دکا ن سے ایک بین ادھار لیاور چل پڑے شوق کی تکمیل کے لئے۔ سب سے چھپتے چھپاتے جو نہی باڑے میں داخل ہوئے ایک بھینس بچاﺅ بچاﺅ چلانے لگی جیسے ہم کوئی چور اچکے ہوں۔ ہم نے فوراََ ایک خاموش کونے میں کھڑی ایک خاموش بھینس کا انتخاب کیا اور بین بجانا شرو ع ہو گئے۔مگر وہاں تو دودھ کا نام و نشان بھی نہ تھا البتہ بھینس صاحبہ کی چیخ و پکار ضرور فضا میں بے سرا رس گھول رہی تھی اور پورا محلہ ابا حضور کی قیادت میں اس سُر سے لطف اندوز ہوتے ہوئے ہماری طرف جاہ و جلال کے ساتھ آرہا تھا۔ہم نے بھاگنے کی بھی کوشش کی مگر بے سود۔ آگے کی کہانی کچھ یوں سمجھ لیجیے کہ اس کے بعد چراغوں میں روشنی نہ رہی۔
    خیر یہ تو تھی بچپن کی بات۔ جب تھوڑا سا ہوش سنبھالا اور فکرِ فردا نے گھیراتو اپنے ساتھ ساتھ اپنے ہم وطنوں کی فکر بھی دل و دماغ پہ چھائی، بڑے غور و فکر کے بعد سیاست کے پیشے پہ ہماری نظرِ کر م آ کے ٹھہری۔ مگر یہاں تو عوام بھینس کا کردار نبھا رہی تھی اور سیاست دان بین بجانے میں مصروف تھے بلکہ ہے۔حالات کی ستم ظریفی دیکھیے کہ64سال گزرنے کے باوجود بھی یہ بین بجانے کی رسم جاری و ساری ہے۔ کبھی کوئی فوجی بندوقوں سے بین بجاتا ہے تو کبھی کوئی بیان بازی سے۔ فوجی بین کو آمریت اور بیان بازی والی کو جمہوریت کا خوبصورت نام دیا گیا ہے جبکہ ساختی لحاظ سے دونوں میں صرف رنگ کا فرق ہے مال ایک جیسا ہے یعنی ڈھائی نمبر۔اب اس سے پہلے کہ کوئی آکہ اس پہ بھی بین بجانی شروع ہو جائے ہم بھی ہوتے ہیں ندارد اور آپ بھی اپنا بندوبست کر لیجیے۔


Page 1 of 2 12 LastLast

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •