Results 1 to 1 of 1

Thread: توڑ کر عہد کرم نا آشنا ہو جائيے

  1. #1
    Join Date
    Aug 2011
    Location
    SomeOne H3@rT
    Age
    31
    Posts
    2,331
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    825 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    429507

    توڑ کر عہد کرم نا آشنا ہو جائيے

    توڑ کر عہد کرم نا آشنا ہو جائيے
    بندہ پرور جائيے اچھا خفا ہو جائيے

    ميرے عذر جرم پر مطلق نہ کيجئے التفات
    بلکہ پہلے سے بھي بڑہ کر کج ادا ھوجائے

    خاطر محرام کو کر ديجئے محو الم
    درپے ايذائے جان مبتلا ھوجائيے

    راہ ميں مليے کبھي مجہ سے تو از راھ ستم
    ھونٹ کاٹ کر فورا جدا ھو جائيے

    گر نگاہ شوق کو مہو تماشا ديکہئے
    قہر کي نظروں سے مصروف سزا ھو جائيے

    ميري تحرير ندامت کا نہ ديجئےکچھ جواب
    ديکہ ليجئے اور تفاغل آشنا ھو جائيے

    مجہ سے تنہائي ميں گر مليے توديجئے گالياں
    اور بزم غير ميں جان حيا ھو جائيے

    ہاں يہي ميرے وفائے بےاثر کي ھے سزا
    آپ کچہ اس سے بھي بڑہ کر پر جفا ھو جائيے

    جي ميں آتا ھے کہ اس شوخ تگافل کيش سے
    اب نہ مليے پھر کبھي اور بے وفا ھو جائيے

    کاوش درد جگر کي لذتوں کو بہول کر
    مائل آرام و مشاق شفا ھو جائيے

    ايک بھيارماں نہ رھ جائے دل مايوس ميں
    يعنے آخر بے نياز مدعا ھو جائيے

    بہول کر بھي اس ستم پرور کي پھر آئے نہ ياد
    اس قدر بيگانہ عہد وفا ھو جائيے

    چاھتا ھے مجہ کو تو بہولے بہ بہولوں ميں تجہے
    تيرے اس طرز تفاغل کے فدا ھو جائيے

    کشمکش ہائے الم سے اب يہ حسرت جي ميں ہے
    چھٹ کے ان کے جھگڑوں سے مہمان قضا ہو جائيے
    Last edited by T@nHA.D!L; 19-04-2012 at 03:10 PM.

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •