Results 1 to 3 of 3

Thread: "Chawalon Ki Daigh" Mukhtasar Afsana

  1. #1
    Join Date
    Jun 2010
    Location
    Jatoi
    Posts
    59,925
    Mentioned
    201 Post(s)
    Tagged
    9827 Thread(s)
    Thanked
    6
    Rep Power
    21474903

    Default "Chawalon Ki Daigh" Mukhtasar Afsana


    چاولوں کی دیگ ۔ مختصر افسانہ

    چاول بانٹے جارہے تھے، آواز لگائ جارہی تھی، غریب بچے ،میلے کچیلے ہاتھوں میں ان دھلے برتن پکڑے چاول کی دیگ کی طرف بھاگ رہے تھے۔ سب کی معصوم آنکھوں میں ایک ہی حسرت تھی کہ کسی طرح وہ جلدی سے دیگ تک پہنچ جائیں۔

    اس دوڑ میں ایک ننھا بچہ جس کے تن پر کوئ کپڑا نہیں تھا، بھاگ رہا تھا کہ ٹھوکر لگنے سے منہ کے بل جاگرا ، خون اس کی ناک سے بہہ رہا تھا، اس کے دوست نے اس کی طرف دیکھا ، اس کی مدد کے لیے بڑھا کہ اس کو اٹھائے، مگر چاولوں کی دیگ سامنے نظر آرہی تھی، وہ دیگ کی طرف دوبارہ بھاگا کہ کہیں چاول ختم نہ ہوجائیں۔

    ۔

    عبدالباسط
    Last edited by Hidden words; 05-08-2012 at 02:43 AM.





    تیری انگلیاں میرے جسم میںیونہی لمس بن کے گڑی رہیں
    کف کوزه گر میری مان لےمجھے چاک سے نہ اتارنا

  2. #2
    Join Date
    Apr 2012
    Location
    Karachi/Lahore Pakistan
    Posts
    12,439
    Mentioned
    34 Post(s)
    Tagged
    9180 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    249126

    Default re: "Chawalon Ki Daigh" Mukhtasar Afsana

    we human being are very selfish

    so true thread

  3. #3
    Join Date
    May 2010
    Location
    Karachi
    Age
    22
    Posts
    25,472
    Mentioned
    11 Post(s)
    Tagged
    6815 Thread(s)
    Thanked
    2
    Rep Power
    21474869

    Default re: "Chawalon Ki Daigh" Mukhtasar Afsana

    theak ,....
    tumblr na75iuW2tl1rkm3u0o1 500 - "Chawalon Ki Daigh" Mukhtasar Afsana

    Hum kya hain

    Hmari Muhabatayn kya hain
    kya chahtay hain
    kya patay hain..

    -Umera Ahmad (Peer-e-Kamil)


Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •