کراچي… کراچي کے علاقے لياري ميں آٹھ روز تک جاري رہنے والے آپريشن کے بعد دوسرے مرحلے کي کارروائي کو حتمي شکل دي جارہي ہے، آئي جي سندھ مشتاق شاہ نے پہلے مرحلے کو سوئپ اينڈ سرچ ريڈ ايکشن ايکشن قرارديا ہے اور ان کا کہنا ہے کہ باقاعدہ آپريشن اب کيا جائے گا،ليکن رينجرز کے بريگيڈئير وسيم ايوب کہتے ہيں کہ رينجرز کو آپريشن شروع کرنے کے احکامات نہيں ملے ہيں. لياري کے علاقے ميں جرائم پيشہ افراد اور کينگ وار کے ملزمان کے خلاف سي آئي ڈي پوليس اور ايف سي کي جانب سے کئے جانے والا آپريشن آٹھ دن بعد وفاقي وزير داخلہ رحمان ملک کے اعلان کے بعد روک ديا گيا تھا جس کا بنيادي مقصد بجلي کي فراہمي، موبائل سروس کو بحال کرنا اورلياري کے بے گناہ افراد تک راشن کي تقسيم اور ان کي ضروريات زندگي کو پورا کرنا ہے ، وفاقي وزير داخلہ رحمان ملک نے فورس کو لياري سے بلانے کي ذمہ داري ليتے ہوئے کہا کہ مسلح ملزمان 48 گھنٹوں ميں ہتھيار ڈال ديں ورنہ ان سے سختي سے نمٹا جائے گا،ليکن 48 گھنٹوں کي ڈيڈ لائن بھي ختم ہونے والي ہے اور ابھي تک کسي بھي مشتبہ شخص نے نہ تو ہتھيار ڈالے ہيں اور نہ ہي خود کو پوليس يا رينجرز کے حوالے کيا ہے جبکہ لياري آپريشن کے انچارج ايس ايس پي سي آئي ڈي چوہدري اسلم نے بتايا کہ لياري آپريشن اب چاہئے رينجرز کرے يا پوليس سي آئي ڈي کي جانب سے ٹارگٹڈ ايکشن کيا جاتا رہے گا انھوں نے کہاکہ لياري سے سي آئي ڈي کا واپس آنا پسپائي نہيں بلکہ حکومت کي حکمت عملي ہے. جيو نيوز سے گفتگو کرتے ہوئے بريگيڈئير وسيم ايوب نے بتايا کہ لياري ميں آپريشن کے احکامات تاحال نہيں ملے،آپريشن کے لئے ڈيڈلائن پوليس نے خود دي تھي، پوليس کي اپني حکمت عملي ہوگي، کمانڈنٹ سچل رينجرز وسيم ايوب نے کہا کہ اب پوليس کس حکمت عملي کے تحت لياري ميں آپريشن کريگي يہ معلوم نہيں، بريگيڈيئر وسيم ايوب نے کہا کہ اگر کوئي جرائم پيشہ شخص اپنے آپ کو ہمارے حوالے کريگا تو ہم اس کو بھي پوليس کے حوالے کرديں گے ،کيونکہ ايف آئي آر کاٹنے کا اختيار صرف پوليس کے پاس ہے. لياري آپريشن ميں سي آئي ڈي،ايف سي اور پوليس کي نفري نے جن مقامات کاکنٹرول سنبھالا تھاوہاں سے بھي نفري واپس آگئي ہے،اور اب رينجرز بھي آپريشن کے ليے احکامات کي منتظر دکھائي دے رہي ہے،ليکن گزشتہ روز سے لياري کے مختلف علاقوں ميں رينجرز کي جانب سے اسنيپ چيکنگ اور گشت کا سلسلہ جاري ہے.