کراچي… محمد رفيق مانگٹ… پاکستان مزيد چار ايف 22پي فريگيٹ چين سے حاصل کرنے جا رہا ہے جنہيں پاکستان ميں ہي تيار کيا جائے گا. حال ہي ميں پاکستان نے چين سے تين فريگيٹ جہاز حاصل کيے ہيں جب کہ چوتھے کو پاکستان ميں تيار کيا جا رہا ہے. پاکستان اس سے پہلے بھي چار ايف 22فريگيٹ جنگي بحري جہاز حاصل کرچکا ہے.رپورٹ کے مطابق پاکستان چين سے کم قيمت ان جنگي بحري جہازوں کے حصول پر انتہائي خوش ہے اور مزيد چارF-22کے لئے آرڈر دے ديا گيا ہے.F-22P چيني جہاز جيانگ وي2کي جديد شکل ہے. چين کے ايف 22پي کي قيمت200ملين ڈالر في فريگيٹ ہے جب کہ انہيں خصوصيات کا حامل امريکي LCSکي قيمت600ملين ڈالر ہے . جديدايف22پي آٹھ سيل کے حامل زمين سے فضا ميں مار کرنے والے ميزائل سسٹم سے ليس ہے،اس ميں چار سيل کے دو انٹي ميزئل ائرکرافٹ سسٹم بھي نصب ہے جن کے ہدف بنانے کي رينج180کلوميٹر تک ہے. اينٹي سب ميرينز ميزائل کے لئے تين سيل راکٹ لانچرز اور چھ سيل کے دو RDC-32 کے اينٹي سب ميرينز راکٹ بھي نصب کئے گئے ہيں. اس پر76.2ايم ايم کي گن،30ايم ايم کي دو انٹي ميزائل خود کار توپيں اور ايک ہيلي کاپٹر بھي موجود ہے.ہر جہاز پر202افراد پر مشتمل عملہ ہوگا.اس کي رفتار52 کلو ميٹر في گھنٹہ ہے.چين نے53قسم کے جہاز کي تبديلي کا فيصلہ کيا ہے اور يہ چار ہزار ٹن وزني جہاز روسي ساختہ کي بجائے مغربي طرز کي ٹيکنالوجي پر بنا ئے جا ئيں گے.رپورٹ کے مطابق1990کي دہائي ميں اپنے سفر کا آغاز کرنے والے فريگيٹ کي آخري چھٹي قسم کے53بحري جہازوں کي چين نے اپ گريڈيشن مکمل کر لي ہے بظاہر ان کي اپ گريڈيشن کا مقصد آئندہ دہائي کيلئے ان کو استعمال ميں لانا ہے. گزشتہ 20برسوں ميں 053HIG قسم کے 53 جہاز تيار کيے جا چکے ہيں. بنيادي طور پر 14سو ٹن کے روسي ساختہ ريگا کي طرز پر بنائے گئے اس جہاز کي اپ گريڈ کرکے اسے25سو ٹن وزني بنا ديا گيا. اس ميں 100ايم ايم کي تين گنوں اور ميزائلوں کي تنصيب کي گئي اور اسے جديد اليکٹرانکس سے ليس کيا گيا.053فريگيٹ کي جديد شکل ايف 22 ہے جسے چين ديگر ممالک کو بر آمد کرنے لئے تيار کر رہا ہے اور اس کاپہلا خريدار پاکستان ہے، بقيہ بحري جہازوں کو چين ساحلي نگراني کيلئے استعمال کر رہا ہے، فريگيٹ کي لمبائي227فٹ، اور ان کي رفتار46کلوميٹر في گھنٹہ ہے.24سو ٹن وزني يہ فريگيٹ اپنے اندروني ايندھن پر کام کرتا ہے اور اور ايک بار ايندھن سے15دن تک مسلسل رواں رہ سکتا ہے.يہ جہاز c-803انٹي شپ قسم کے8 ميزائلوں سے مسلح ہيں. ايک سو ايم ايم کي دو خودکار گنيں اور37ايم ايم کي انٹي ايئر کرافٹ کي چار گنيں نصب ہيں. اس کے علاوہ راکٹ چلانے کے لئے باقاعدہ چارجز کي سہولت بھي رکھي گئي ہے.