اسلام آباد…سپريم کورٹ نے رينٹل پاور کيس ميں اپنے فيصلے پر نظرثاني کي بعض درخواستوں کو سماعت کيلئے منظور کرتے ہوئے فريقين کو نوٹسز جاري کردئے ہيں، نظرثاني سے متعلق نيپرا کي ايک درخواست مسترد کردي گئي ہے.رينٹل پاور منصوبوں کو کالعدم قرارديئے جانے پر نظرثاني کيلئے رينٹل کمپنيوں ، نيپرا اور سابق وفاقي وزراء شوکت ترين اور لياقت جتوئي نے درخواست سپريم کورٹ ميں دائر کي تھيں، چيف جسٹس افتخار محمد چودھري کي سربراہي ميں عدالتي بينچ نے ان کي سماعت کي، عدالت نے نيپرا کي نظرثاني درخواست مسترد کرتے ہوئے کہاکہ پہلے والے مقدمہ ميں تو نيپرا نے عدالت کو سپورٹ کيا تھا، اب اسے نظرثاني کي ضرورت کيوں پيش آگئي ہے، عدالت نے لياقت جتوئي اور شوکت ترين کي درخواستيں بھي نمٹاتے ہوئے کہاکہ فيصلہ ميں کسي کا نام نہيں ليا گيا، اگر کسي نے وضاحت کرنا ہے تو تفتيشي ادارے نيب کے پاس جاکر وضاحت کرے، بعد ميں عدالت نے ديگر نظرثاني درخواستوں پر فريقين کو نوٹسز جاري کرتے ہوئے مزيد سماعت 2 ہفتوں کيلئے ملتوي کردي.