اسلام آباد… اين آر او عمل درآمد کيس کے حوالے سے وزيراعظم گيلاني کے خلاف توہين عدالت کيس کا تفصيلي فيصلہ جاري کر ديا گيا ہے. يہ تفصيلي فيصلہ 77صفتحات پر مبني ہے جسے بينچ کے سربراہ جسٹس ناصر الملک نے تحرير کيا، اس کے علاوہ جسٹس آصف کھوسہ نے 6 صفحات کا اضافي نوٹ بھي تحرير کيا ہے. واضح رہے کہ 26اپريل کو سات رکني بينچ نے توہين عدالت کيس ميں وزيراعظم يوسف رضا گيلاني کو عدالت برخاست ہونے تک کي سزا سنائي تھي. تفصيلي فيصلے ميں کہا گيا ہے کہ وزيراعظم نے جان بوجھ کر عدالت کا مذاق اڑايا، عدالتي فيصلوں پر عمل نہيں کيا، توہين عدالت کا ممکن نتيجہ رکنيت سے 5سالہ نا اہلي بھي ہے، اعلي? ترين عہيديدار حکم پر عمل نہيں کرے گا تو سارا عدالتي نظام تباہ ہو جائيگا. فيصلے ميں مزيد کہا گيا کہ نا اہلي سے متعلق وزيراعظم کے وکيل کو معلوم تھا ليکن انہوں نے اس پر ايک لفظ بھي نہيں کہا. تفصيلي فيصلے ميں آرٹيکل 63ون جي کے ممکنہ اثر کا بھي ذکر کيا گيا ہے.