Results 1 to 2 of 2

Thread: جم گئی دھول ملاقات کے آئینوں پر

  1. #1
    Join Date
    May 2012
    Location
    lhr
    Age
    35
    Posts
    227
    Mentioned
    1 Post(s)
    Tagged
    188 Thread(s)
    Thanked
    1
    Rep Power
    6

    Default جم گئی دھول ملاقات کے آئینوں پر

    راستہ کوئی سفر کوئی مسافت کوئی
    پھر خرابی کی عطا ہو مجھے صورت کوئی


    سارے دریا ہیں یہاں موج میں اپنی اپنی
    میرے صحرا کو نہیں ان سے شکایت کوئی


    جم گئی دھول ملاقات کے آئینوں پر
    مجھ کو اس کی نہ اسے میری ضرورت کوئی


    میں نے دنیا کو سدا دل کے برابر سمجھا
    کام آئی نہ بزرگوں کی نصیحت کوئی


    سرمئی شام کے ہمراہ پرندوں کی قطار
    دیکھنے والوں کی آنکھوں کو بشارت کوئی


    بجھتی آنکھوں کو کسی نور کے دریا کی تلاش
    ٹوٹتی سانس کو زنجیر ، ضرورت کوئی


    تو نے ہر نخل میں کچھ ذوقِ نمو رکھا ہے
    اے خدا میرے پنپنے کی علامت کوئی
    Merey jaisi aankhon walay jab Sahil per aatay hain
    lehrain shor machati hain, lo aaj samandar doob gaya

  2. #2
    Join Date
    Feb 2009
    Location
    City Of Light
    Posts
    26,767
    Mentioned
    144 Post(s)
    Tagged
    10310 Thread(s)
    Thanked
    5
    Rep Power
    21474871

    Default Re: جم گئی دھول ملاقات کے آئینوں پر

    buhat khub



    3297731y763i7owcz zps9ed156a3 - جم گئی دھول ملاقات کے آئینوں پر

    MAY OUR COUNTRY PROGRESS IN EVERYWHERE AND IN EVERYTHING SO THAT THE WHOLE WORLD SHOULD HAVE PROUD ON US
    PAKISTAN ZINDABAD











Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •