Results 1 to 4 of 4

Thread: Tehreeri Muqabla *Final*

  1. #1
    Join Date
    Jun 2011
    Location
    China
    Posts
    4,833
    Mentioned
    29 Post(s)
    Tagged
    9237 Thread(s)
    Thanked
    2
    Rep Power
    21474847

    Default Tehreeri Muqabla *Final*

    Writers club k tehreeri muqablay k final k lyay 4 mai sa 3 participants ko select kya gaya hay..

    polling aur judges k faislay k mutabiq 'Sweet.Kiran' next round k lyay qualify nahi kr sakien.. Inhun nay umdah likha laiken judges ki mushtarka raey k mutabiq in ki tehreer main mazah shamil nahi tha jo k tehreer ki requirement thi.
    Wo 3 members jo next round mai qualify kar chukay hain un k naam yeh hain:

    Paras, Maliha Farhan aur Bilal azam.


    Iss round mai ap ko aik sawal dya ja raha hay jis ka jawab 8 lines say zyada nahi hona chahyay.

    Sawal hay:
    Kya mukhlis logun ki kadar aj bhi dunya mai log krtay hain ya un k khaloos par shak kr k un ko dhatkar dya jata hay?

    Rules:
    last date 8th july hay

    1 week baad is thread ko close kar diya jaye ga..

    Aglay round mai janay walay members ka faisla 50% polling aur 50% judges team par depend kray ga.
    (Judges team: Sheem, Heer, Dangerous tears, Hidden words, Falling Tears)

    Is thread mai sirf tehreer hee share krni hain..Muqablay sa related kisi bhi kisam ki query k lyay alag sa thread stick kr di gai ha..ap apni confusions us thread mai clear kr saktay hain.

    Ask Questions About Tehreeri Muqabla

    Is thread mai share ki gai tehreer edit nahi kar saktay..
    Zindagi tu apnay he qadmun pe chalti hay Faraz
    Auron k Sahary tu Janazy utha kartay hain

  2. #2
    Join Date
    Sep 2011
    Location
    Jadoo Nagri
    Posts
    19,713
    Mentioned
    198 Post(s)
    Tagged
    8340 Thread(s)
    Thanked
    10
    Rep Power
    21474862

    Default Re: Tehreeri Muqabla *Final*

    کہا جاتا ہے کہ پانچوں انگلیاں برابر نہیں ہوتیں اسی طرح لوگ بھی ہیں سب ایک جیسے نہیں ہوسکتے اسی لیے میں یہ کہہ سکتی ہوں کہ آج بھی مخلص لوگوں کی قدر ہوتی ہے۔لیکن دیکھنے میں زیادہ تر یہ آیا ہے کہ خلوص دنیا سے دھیرے دھیرے رخصت ہو رہا ہے۔
    غیر تو کیا اپنے بھی ہمیں نہیں بخشتے جہاں کسی کا داؤ چلا اس نے اپنا کام کر دکھایا اسی لیے بعض اوقات ایسا بھی ہوتا ہے کہ ہم کسی کے خلوص کو پہچان نہیں پاتے اور اُن لوگوں کو بھی غیر مخلص لوگوں کی فہرست میں لا کھڑا کرتے ہیں۔
    میں سمجھتی ہوں اس میں قصور ہمارا بھی ہوتا ہے کہ ہمیں دوسرے سے انتہا کی توقع ہوتی ہے اور جب وہ انسان ہماری توقع پر پورا نہیں اترتا تو ہمارا دل جھٹ سے کہہ دیتا ہے
    یہ تو مخلص ہی نہیں ہے۔ان سب باتوں سے قطع نظر آج بھی مخلص لوگوں کو قدر کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے۔لیکن اس کی شرع نہایت کم ہے اور وہ لوگ بد نصیب ہوتے ہیں جو مخلص لوگوں کی قدر نہیں کرتے۔


  3. #3
    Join Date
    May 2008
    Location
    Karachi
    Age
    34
    Posts
    8,519
    Mentioned
    6 Post(s)
    Tagged
    274 Thread(s)
    Thanked
    1
    Rep Power
    21474854

    Default Re: Tehreeri Muqabla *Final*

    میرے خیال سے مخلص لوگ اللہ کے دوست ہوتے ہیں کیوں کہ کوئ ان کے ساتھ کوئ کچھ بھی کر لے ، ان کے خلوص، محبت میں کوئ فرق نہیں آتا،وہ کم ظرف لوگوں کے شک کرنے/ دھتکارنے کے بعد بھی ان کے کام آئیں گے کیوں کہ وہ یہ سب اللہ کی رضا کے لئے کرتے ہیں ، اور مخلص وہی ہوتا ہے جو بدلے کی انسانوں سے امید نہ رکھے۔۔۔ مخلص لوگوں کی کوئ قدر کرے یا نہ کرے اللہ ضرور انہیں دونوں جہاں میں انعام سے نوازتا ہے ۔۔۔۔ اسی لئے ہر زمانے میں پرخلوص لوگ عزت و قدر کی نگاہ سے دیکھے جاتے ہیں ۔۔۔۔۔صرف کم ظرف لوگ ہی اپنا مطلب نکل جانے کے بعد دھتکارتے ہیں کیوں کہ ان کے دامن میں صرف خود غرضی ہوتی ہے

    2dnmmf - Tehreeri Muqabla *Final*

  4. #4
    Join Date
    Nov 2011
    Location
    Sahiwal
    Posts
    288
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    9 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    7

    Default Re: Tehreeri Muqabla *Final*

    مخلص لوگوں کی قدر آج بھی کی جاتی ہے۔ وقت کی رفتار نے رہن سہن کا طریقہ ضرور بدلا ہے مگر حیاتِ انسانی کا مزاج نہیں۔ اگر واقعی سچے اور مخلص لوگ میسر آ جائیں تو لوگ آج بھی ان کو سر آںکھوں پر بٹھاتے ہیں۔ کیونکہ خولص کا تعلق محبت سے ہوتا ہے۔
    مگر اس بات سے بھی انکار نہیں کیا جا سکتا کہ آج کل کے دور میں اعتبار کرنا بہت مشکل۔ کسی کی نیت کب بدل جائے، کچھ نہیں کہا جا سکتا۔ لہٰذا خود کی سیکیورٹی کے لئے ایسا کرنا ضروری ہو جاتا ہے۔ آج کا دور مادیت پرستی کا دور ہے، اسی لئے لوگوں کی اکثریت لوگوں کے خلوص پہ شک کر کے ان کو دھتکار دیتی ہے۔


Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •