Results 1 to 2 of 2

Thread: Twrait

  1. #1
    Join Date
    Aug 2011
    Location
    SomeOne H3@rT
    Age
    31
    Posts
    2,331
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    825 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    429507

    cute Twrait

    انسان کی تربیت کے پس۔ منظر میں اگر دیکھا جائے تو بہت سے لوگ کارفرما نظر آتے ہیں ،سب سے پہلے اس کا اپنا فیملی بیک گراؤنڈ ، اس کے اپنے لوگ ان کا رکھ رکھاؤ رہن سہن ، اور اس کے ساتھ ساتھ اس کی اپنی وراثتی ، صفّات ، عادات و اطوار ، جبلّت و خصلت ، حلقہ احباب دوست یار معاشرہ ماحول یہ سب کے سب روحانی طور پر کسی کی شخصیت کے آئینہ دار ہوتے ہیں ، آدمی اپنی کاوشوں سے دنیاوی مراتب کی بلندیاں تو چھو سکتا ہے لیکن انسانیت کی معراج کو چھونے کے لئے اسے ان مراحل سے گزرنا پڑتا ہے ، جہاں پہنچ کر اسے اپنی ذات میں عیب اور دوسروں کی ذات میں خوبیاں دکھائی دینے لگتی ہیں ، دوسروں کے عیب اس لئے دیکھنا کہ ان کی تذلیل ہو تشہیر ہو ، یہ انسانیت کا شیوہ نہیں ہے بلکہ حیوانی خصلت ہے

    ایک بزرگ فرماتے ہیں کہ انسان اور جانور میں فرق یہ ہے کہ جب کوئی انسان کسی باغ میں جاتا ہے تو وہاں پھول پھلوں اور خوشبو سے لطف اندوز ہوتا ہے ، وہاں کے مناظر اور ماحول سے محظوظ ہوتا ہے لذّت و ذائقہ کا مزہ لیتا ہے ، اس کے برعکس جب کوئی جانور کسی باغ میں گھستا ہے تو گلے سڑے پھلوں میں منہ مارتا ہے گندگی کھاتا ہے ۔ یہاں یہ بات واضح ہوتی ہے کہ قصور جانور کا نہیں ہے کہ وہ اچھائی کو چھوڑ کر برائی ہی کیوں دیکھتا ہے ، قصور اس کی خصلت کا ہے جو اسے ورثے میں ملی ہے ، قصور اس فطرت کا ہے جو اس نے اپنے بیک گراؤنڈ سے حاصل کی ہے

    عموماً کہا جاتا ہے کسی کی جانب اشارہ کر تے ہوئے کہ بڑا فرشتہ صفت انسان ہے ، یا کہا جاتا ہے کہ بڑا شیطان خصلت آدمی ہے ، تو اس کے پیچھے وہی تربیت کارفرما ہو تی ہے ، اب جس کی تربیت انسانیت کے معیار کے مطابق ہوتی ہے وہ اسی کو آگے بڑھاتا ہے اور جس کی تربیت ہی لگائی بجھائی ، غیبت حقارت تمسخر ، عیبوں پر نظر رکھنے کی کی گئی ہو تو وہ اسی ڈگر پر چلے گا ، لوگوں کو گمراہ کرنا ، بلا وجہ چھیڑنا ، ان سے مزے لینا بھی لوگوں کے مزاج میں شامل ہوتا ہے ، اور یہ بھی تربیت کے مرہون۔ منّت ہے ، بعض لوگ ایسے بھی ہیں اس دنیا میں جو آپ کو صحیح ہونے کے باوجود محض تفریح لینے کے لئے پریشان کرتے ہیں ، اس میں بھی ان کی تربیت کا عمل دخل ہے ، اور وہ یہ کام کتنی منصوبہ بندی اور مہارت سے سر انجام دیتے ہیں مجھے ایک واقعہ یاد آیا ملاحظہ فرمائیے

    ہوا یوں کہ ایک صاحب نے چھوٹا سا بکری کا بچّہ خریدا ، اس میمنے کو وہ گود میں لئے چلے جارہے تھے کہ راستے میں ٹھگوں کی نگاہ پڑ گئی ، انہوں نے میمنا ہتھیانے کے لئے پلاننگ کی ، اور ذرا فاصلوں میں وقفے وقفے سے کھڑے ہو گئے ، میمنے والے صاحب جیسے ہی ایک ٹھگ صاحب کے قریب سے گزرے تو وہ صاحب ان سے ٹکرائے اور چھوٹتے ہی بولے

    اجی میاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا کتّے کا بچّہ گود میں اٹھائے چلے جارہے ہو اور کچھ نہیں ملا تھا اٹھانے کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب یہ صاحب ایک دم حیران پریشان کبھی کہنے والے کو اور کبھی گود میں بکری کے بچّے کو دیکھنے لگے ، بڑی شش و پنج کی سی کیفیت طاری ہوئی ، منہ ٹیڑھا کیا ۔۔۔۔۔ آنکھیں گھمائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور بولے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔واہ ، ایسے ہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دماغ تو نہیں چل گیا تمھارا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں خود بکری کا بچّہ لیکر آیا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دکھائی نہیں دیتا تمہیں وغیرہ وغیرہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بڑبڑاتے ہوئے چل دیے ، ابھی چند قدم ہی گئے تھے کہ ایک اور صاحب بڑی معنی خیز مسکراہٹ لئے کھڑے تھے ، جیسے ہی میمنے والے صاحب قریب پہنچے ، تو دوسرے ٹھگ صاحب ایک زوردار قہقہ مارکے بولے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بھائی خیریت تو ہے ۔۔۔۔۔۔۔یہ کیا کتّے کا بچّہ گود میں اٹھائے کہاں چلے جارہے ہو
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ان صاحب کا تو دماغ گھوم گیا بڑی مشکوک نگاہوں سے بکری کے بچّے کو دیکھا اور بڑی بے یقینی سے تنقید کرنے والے کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور بچّے کو کس کے سینے سے چمٹایا جس سے اس کی آواز تک نکل گئی ۔۔۔۔۔ میں مہ مے ایں مے ایں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آواز سن کے ذرا تسلّی ہوئی کہ نہیں بھئی یہ بکری کا بچّہ ہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خیر صاحب وہ چھیڑنے والے باز نہ آئے ، اب یہ صاحب جاتے جاتے مڑ کر انہیں دیکھتے جاتے اوربکری کے بچّے کو سہلاتے جاتے ، ابھی کچھ ہی آگے بڑھے تھے کہ ایک اور صاحب ملے ، انہوں نے چھوٹتے ہی کہا

    اے میاں کیا سٹھیا گئے ہو ، یہ کتّے کا بچّہ کاہے لپٹائے لئے جارہے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب تو ان صاحب کی سٹی گم ہو گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہیں یہ کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جو دیکھتا ہے کہتا ہے کتّے کا بچّہ ، مزاق اڑاتا ہے کہ کتّے کا بچّہ گود میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہو نہ ہو یہ کتّے کا بچّہ ہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ سوچتے ہوئے بکری کا بچّہ روڈ پر پٹخ دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بچّہ بڑے زور سے چیخا منمنایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بہت کہا کہ میں بکری کا بچّہ ہی ہوں لیکن صاحب کہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اب توبہ کرو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بچّہ گود سے محروم ہوگیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور کچھ لوگوں کی دل لگی ہو گئی ۔۔۔۔ تفریح ہو گئی

    لکھنے کا مقصد یہ ہے کہ کہیں آپ کو بھی ایسی کوئی ستانے کی عادت تو نہیں ہے ، اگر ہے تو مت کیجئے ، ایک دن ہمیں مر جانا ہے سوائے اعمال کے کچھ ساتھ نہیں جائے گا

    تحریر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسماعیل اعجاز خیال
    Last edited by Hidden words; 04-08-2012 at 08:30 PM.

  2. #2
    Join Date
    May 2010
    Location
    *!~ In EmoTiOns~!*
    Posts
    1,615
    Mentioned
    3 Post(s)
    Tagged
    220 Thread(s)
    Thanked
    1
    Rep Power
    0

    Default re: Twrait

    lovely
    thanks for sharing

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •