Results 1 to 2 of 2

Thread: ہونٹوں پہ سُلگتے ہوُئے اِنکار پہ مَت جا

  1. #1
    Join Date
    May 2012
    Location
    lhr
    Age
    34
    Posts
    227
    Mentioned
    1 Post(s)
    Tagged
    188 Thread(s)
    Thanked
    1
    Rep Power
    6

    Default ہونٹوں پہ سُلگتے ہوُئے اِنکار پہ مَت جا

    کچھ لوگ بھی وہموں میں گرفتار بہت ہیں
    کچھ شہر کی گلیاں بھی پُر اسرار بہت ہیں



    ہے کون اُترتا ہے وہاں جس کے لیے چاند؟
    کہنے کو تو چہرے پسِ دیوار بہت ہیں



    ہونٹوں پہ سُلگتے ہوُئے اِنکار پہ مَت جا
    پلکوں سے پَرے بھیگتے اقرار بہت ہیں



    یہ دُھوپ کی سازش ہے کہ موسم کی شرارت؟
    سائے ہیں وہاں کم جہاں اشجار بہت ہیں



    بے حرفَ طَلب ان کو عطا کر کبھی خُود سے
    وہ یوں کہ سوالی تِرے خُوددار بہت ہیں



    تُم مُنصِف و عادل ہی سہی شہر میں لیکن
    کیوں خُون کے چھینٹے سرِ دستار بہت ہیں



    اے ہجر کی بستی توُ سلامت رہے لیکن
    سُنسان تیرے کوچہ و بازار بہت ہیں



    "محسن" ہمیں ضِد ہے کہ ہو ’’ اندازِ بیاں اور ‘‘
    ہم لوگ بھی "غالب" کے طرفدار بہت ہیں
    Merey jaisi aankhon walay jab Sahil per aatay hain
    lehrain shor machati hain, lo aaj samandar doob gaya

  2. #2
    Join Date
    Feb 2009
    Location
    City Of Light
    Posts
    26,767
    Mentioned
    144 Post(s)
    Tagged
    10310 Thread(s)
    Thanked
    5
    Rep Power
    21474871

    Default Re: ہونٹوں پہ سُلگتے ہوُئے اِنکار پہ مَت جا

    nice



    3297731y763i7owcz zps9ed156a3 - ہونٹوں پہ سُلگتے ہوُئے اِنکار پہ مَت جا

    MAY OUR COUNTRY PROGRESS IN EVERYWHERE AND IN EVERYTHING SO THAT THE WHOLE WORLD SHOULD HAVE PROUD ON US
    PAKISTAN ZINDABAD











Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •