View Poll Results: cast ur vote

Voters
5. You may not vote on this poll
  • ๓เรђคคl

    3 60.00%
  • *resham*

    1 20.00%
  • Bilal Azam

    1 20.00%
Results 1 to 6 of 6

Thread: Polling for writers club comp oct 2012

  1. #1
    Hidden words's Avatar
    Hidden words is offline "-•(-• sтαү мιηε •-)•-"
    Join Date
    Nov 2011
    Location
    Kisi ki Ankhon Aur Dil Mein .......:P
    Posts
    56,915
    Mentioned
    322 Post(s)
    Tagged
    10949 Thread(s)
    Thanked
    4
    Rep Power
    21474899

    Polling for writers club comp oct 2012

    Asalam u Alaikum

    Is Month ka topic tha "zameer"
    sab ki sharings hazir hain
    Jin ki sharing behtar lage un ko vote dein..:love2:

    Rules
    Last date 28th oct hai..
    Aik Member aik hi bar vote de sakta hai..:aha:
    Winner 50% poll aur 50% Adminz decide karen gye.!! :caring:

    ~*~*~*~*~*~*~*~*~*~*~*~*~*~



    ๓เรђคคl

    "Mera zameer"


    "aaj uska zameer muttmain tha..aj usne woh kiya tha jo uske liye dilli sukoon ka bais bana tha..........."
    .................................
    Hareem maa baap ki ikloti aulaad thi unhein kabhi kisi cheez ki kami kisi cheez ki pareshaani nahiin thi zindagi mein sa kuch tha..khushi,rishte,izzat ,daultat aur apno ki mohabbat.....magar nahiin tha to sukoon..!
    .............

    aksar woh sochti is bechaiini ki waja kiya?
    woh kya cheez hai jo din raat usko beqaraar rakhti hai..
    woh kiya cheez hai jo raton ko sukon se sone nahiin deti? kiya hai woh? mafar ..usey jawaab nahiin mil saka tha..
    usey din raat buhut si sochein apne hisaar mein rakhne lagi thein raat dair dair tak jagte rehne se ankhon ke gird gehrey halkey parney lage the...Ghar walon ne uski kayfiyat ko baarhaa note kiya tha....


    ............................

    hareem ! Aye hareem......!!!

    kiya hai? kya afat par rahi hai tum dono ko??woh ankhon par bazoo rakhe din charhe bistar par ainth rahi thi..ke apni czns rubab aur abeerah ke disturb karne mein buri tarhan jhunjhulayi........

    Hareem ki bachi yeh kambal choro dekho kitna pyara mousam ho raha hai Imaan sey .. ghazab dha raha hai Aur Islamabaad ka mousam tu bhayee sab se juda hota hai khoobsurat aahhh.. chalo shopping par chalte hain.... kiya yaaad karo gi.. mabadolat apne jaib kharch se shopping karwane wale hain..rubaab ne gardan akra kar bari fiyaazi dikhate hue kaha..

    nahiiin bhyeee tum log chale jao mujhe sona hain raat bhi neend poorui nahiin hui us ne kambal dobara odhte hue kaha..

    lekin abeerah ne foran kambal khench dala ..

    "jeeee nahiin aap chal rahi hain...aur kis ne kaha tha ke raat bhar jaago woh bhi cofeee ka big mug le kar bhatki hui rooh ki tarhaan idhar udhar chakraaney ko?
    abeerah ne kamar par haath rakh kar achi khaasi uski claas le daali

    "hello hello? yeh miss hareem hi hain na/ yeh shopping karne ke liye har dusre roz humein khench kar le jaati thein aur aaj hum inhein raazi karne ke jatan kar rahe hain?? :@ ghalat baat hai hareem..pichle kuch arse se tum aise hi behaave kar rahi ho? kiya baat hai??rubab ne fikermand ho ke poocha..

    pata nahiin ...mein..aik dam se..jaise iktaaa si gayi hoon..mera dil nahiin manta..mujhe aisa lagta hai kuch hai jo mujhe pareshaan kar raha hai? kuch bechaini..aisa pehle kabhi nahiin hota tha..kabhi nahiin phir aj kyun? kyun mere andar kuch khataam ho raha hai?hareem dono hathon se chehra chupa kar phoot phoot kar rone lagi..
    .............

    "hareem yeh showpiece kaisa hai? rubab ne ne nazuk se dil wale khoobsurat show piece ki taraf uski tawajju dilayi..beezvi shakal mein bane hue us crystal ke showpiece ke andar nanhe nanhe laal rang ke khoobsurat chote chote dil oper se neeche ko ate hue behad bhale lag rahe the dil mein utar jane ki had tak khooburat manzar tha...

    magar hareem ko bezzaari si hone lagi..
    Acha hai na? sirf 10 thousand ka hai chalo le lete hain?rubab ne kaha
    nahiin rubab tumhein lena hai to le lo mein nahiin le rahi..mujhe iska kiya karna hai ?aik tu itna expensive dusre meri nazar e karam ke liye tarasta hi rahe ga.. aur mera bilkul aj kal mood nahiin hai...is liye janaab jis eiski sataish karni hogi woh hi khareed le ga

    expensive? yeh tum keh rahi ho hareem? woh hareem jo 20,000 ka dress ko bhi sasta aur quality less samajh kar nazar andaaz kar deti hai woh 10 thousand ko expensive keh rahi hai?un believable !!!! Abeerah ka to marey hairat ke bura haal tha rubaab ko bhi sakta sa ho gaya..

    khud hareem ka sakta bhi abhi nahiin toot sakka tha..
    waqi/ yeh mein hoon??kiya hota ja raha hai mujhe..?
    usne sar jhatak kar khud ko mazeed sochne se roka..
    aur mall se bahar nikal ayi..
    apni hi jhoonk mein woh kisi se takrayi thi................

    muqabil ko jharne ke liye usne nazar uthayi hi thi ke usey apni harkat pe afsosshone laga..

    woh aik buhut hi zaeef sebuzurg the..jo hareem ki jald baazi ki waja se ab zameen boss the..

    ya Allah !! usne kehte saath hi unko uthne mein madad di apne kiye ki maafi mangne ki himmat hi nahiin parahi thi khud mein..uski ankhon mein anasoo agaye usne unke samne haath jjor diye..

    baba ji muskuraye..muskurahat mein bhi takleef ka ansar numaya tha...

    hareem ne note kiya ke baba jee ki kamar bhi jhuki hui hai..chehray pe zamano ki thakan saaf nazar arahi thi...haath mein lothi emlay se shalwaar kameez mein woh uske samne khare the..unke tan pe aur koi kapra na tha jo is shadeed sardi meinsardi mein tan dhanpne ke kaam ata..
    aur sardi ki shiddat ko kam karta..

    baba jee se jab usne is baat ka izhaar ki tu woh hans parey
    "arey beta..!! hum jaison par yeh mousam asar andaaz nahiin hote..agar hotey tu shayad aj mein zinda nazar nahiin araha hota..baba jee kehne ke sath khanse lage...

    hareem unko doct ke paas le gayi kyunke baba jee ki taang mein girne ki waja se shadeed chot ayi thi aur hareem ko khudsha tha ke kahiin yeh fracture na ho...
    aur shukar hai waqi koi fracture na tha woh unhein saath liye unhein ghar tak chorne ja rahi thi rubab aur abeerah ne saath jane se inkaar kar diya tha..baqol unke hareem ko aj kal bekhawabi ke saath saath social work ke dorey parna shru ho gaye hain..hareem unko khatir mein na latey hue ab baba je ke ghar ke samne khari thi..
    gunjaan basti mein bhala ghar kaise hotey hain???
    nahiin? woh ghar nahiin tha..woh tu aik tent tha? boseeda sa? jahan andar aik 7,8 saal ka kamzor sa bacha betha tha..

    "yeh kaun hai baba jee"??hareem ne sawalia andaaz mein poocha?

    "yeh mera nawasa hai..maa baap iske rahe nahiin agaa peecha iska koi nhi tha jab woh chal base tab yeh 3 saal ka tha phir mere burhe aur naatwaan kandhon par iski zimeydaari aan pari..pait ka dozakh bharne aur is masoom ki parwarish karne ke liye mujhe kuch to karna hi tha..baba jee ne ansoo ponch daale..Gadaagirii ..kaisa bura paisha hai..muashrey mein kis qadar bura samjha jata hai.par mein kiya karon?koi hunar nhi na hathon mein jaan ke mehnat mazdoori kar sakon?mgar karna parta hai is nanhi jaan ka saath hain warna mein bhi mano matti taley ja soya hota" baba jee kie rone mein shiddat agayi ti..hareem ke liye yeh sab kuch naya tha..aik karwi aur dardnaak haqeeqat uske samne thi...

    woh buhut oper buhut ouncha urte hue yeh bhool gayi thi ke kuch log hain..kuch log hain jo isi muashre ka hissa hain..aur jinhein humari zarorat hai..!! kuch log hain..jo rukhi sokhi ke liye taraste hain aur usi peshe ko majboori apnate hain jo dunia ki nazar mein buhut bura hai dhatkare jate hain..log unke phele hue haath ko dekh kar usey notanki aur kisi dramay ka hissa samajhte hue side se guzar jate hain..

    aaaj aik upper claas ki rehne wali shah kharch larki ne apne se kahiiin neeche rehne wali us majboor admi ko dekha tha..rote karlaatey,balaktey..kanpte phir u bache ko dekha tha jo takkar takkar kabhi apne nana ka rota chehra aur kabhi hareem ke ankhon mein atey ansoo dekkh kar baat samajhne ki koshish kar raha tha..
    kaise hain hum log?kiya humara farz nahiin keh hum kabhi apni aish o ashrat se bhari zindagi se kuch pal nikaal kar ounchayi segardan jhuka kar apne neechay walon ki khabar lein? kiya humein maloom nahiin..ke humare maal pe unka bhi haq hain?kaun sochta hai? aur jo sochta hai woh unko is liye nazar andaaz karke guzaar jata hai ke kya pataa yeh jaali faqeer hon?chehray kaun parhta hai ansoo kaun dekhta hai haan humare paas time nahiin hai?

    "hareem ko aaj apna aap apne qeemti kaprey dekh kar wehshat mehsoos ho rahi thi...aur bab jee ke samne us se sharam ke mare sar hi nahiin uthaya ja raha tha..."

    baba jee ka nawasa unke kamzor ghutno pe haath rakh kar unhein hilate hue bola tha:

    "nana..nana aap kyun rote hain? kiya inhone aapko mara hai?
    un uncle ki tarhan jin se apne road par mere eid ke kapro ke liye paise mange the?bacha bhi ab nana ka dukh mehsoos karte hue ro raha tha"

    hareem ke dil ko kuch hua...

    "nahiin beta..yeh jo tumhari baji hai na...isne meri marham patti karayi mujhe yeh phal le kar diye..dekh yeh sab tere hain khale..."baba jee apni mayosion ka shikaar bache ko nahiin banana chahte the...woh usey goud mein le kar behlane lagey...

    Usi pal hareem ne aik faisla kiya..aur usey ehssaas hua ke yeh ab tak uski zindagi ka behtareen faisla hai...

    ......................

    Hareem beta??

    usne mur kar dekha..baba jani kamre ke bahar darwaze p khare the...aur uska bagor jaiza le rahe the.. peach colour ke sadhe se doappattay ko namaaz ke se andaaz mein orhe..woh unhein hi dekh rahi thi..uska ke chehray per noor hi noor tha..sukoon aur itminaan ke rang uski halki si muskurahat wazeh kar rahi thi..woh namaaz parhne mein itni magan rahi thi ke usey baba jaani ki ahat bhi sunayi nahiin di thi..

    jee baba jani?woh dheeme suron mein mein boli..

    beta agar aapne namaaz parh li ho to aap bahar lounge mein ayiye hum aap balke sab ghar wale hi aap se kuch baat karna chahtey hain...

    babajaan ki baat par usne sawaliya andaaz mein unki taraf dekha tu woh uska gaal thap thapa kar usey jaldi lounge mein aane ka keh kar chal diye..

    woh jhijhakti hui lounge mein dhakil hui..sab hi mahu e intezaar the..

    betho beta humare paas...baba jaani ne bari mohabbat se apne paas uski jaga banayi...aur kehna shru kiya
    "Dekho beta pichley kuch arse se hum apko dekh rahe hain..aap kuch beichaain aur udaas dikhayi deti thein..poooch aap se is liye nahiin ke hum khayaal karte the yeh sab waqti hain aap khud hi thore din mein theek ho jayein gi..aur humein khushi hai ke aap ab buhut muttmain aur shaad nazar ati hain..lekin saat hi humne dekha hai ke aap tanhayi pasand ho gayi hain..apni czns ke saath na kahiin shopping karne jati hain agar karti hain to sou sou phir aap namaaz bhi parhne lagi hain,khairaat deti hain beta humein yeh buhut ach laga magar is sab ki is bari tabdeeli ki akhir kiya waja hai?yeh hum sab specially apki mama jaani janna chahti hain.. unhone muskurate hue kaha..: )

    Abeerah ne aik nazar mamma jani ke chehrey ki taraf dekha jahan sawal hi sawaal the..woh abhi tak hareem ke aik dam change ho jane se muttmain nahiin thein..phir us ne kehna shru kiya...:

    "baba jaani..! Hum log zahiri duniya ki chamakdamak mein kho kar apna asal bhool jatey hain..hum mitti se bane hain mitti mein mil jaye ge yeh aish o ashrat humare kiya kaam asake gi? zahiri dunia ki chamak damak mein kho kar hum unko logo ko bhool jate hain jo humari hi tarhan matti se bane hain humari tarhaan hi aik dil rakhte hain humari tarhan unki bhi kuch khawahishaat hain..kuch armaan hain izzat ki chah sabhi ko hoti hai lekin jab bhook aur iflaas ka samna ho tu izzat kisi ke pairon mein girgira kar khoni parti hai..baba jani apko woh baba jee yaad hain?jinka meine apko bataya tha ke kis tarhaan mein unse mili unki halat zaar dekh kar unki takleef ko mehsoos kiya? us roz mujhe khud pe sharam ayi thi ke kaise hum apni dunia mein magan hai?ke humein yeh log nazar nahi atey..us din meine aik faisla kiya tha..ke ab kabhi apki mehnat ki kamayi ko yun bedardi se kharch nahiin karongi..balke falahi kamo mein kharch karongi..
    baba jee ke nawase ko eid ke naye kapre dilate hue baba ji ka nazar ka chashma banwate hue unke liye aik behter ghar ka intezaam karte hue unki zimeydaari uthate hue..baba jaani? aap yaqeen karein ge? ke mujhe kis qadar sukon mila? jis khushi sukon ki talaash mein bhatak rahi thi woh yehi tu tha?allah ne bab jee ke zariye meri soch ko sahi rah dikhadi thi mujhe mazeed bhatakne gumrah hone se bacha liya tha..asraaf kiya hai?zakaat kyun di jati hai?kisi ki madad kese ki jati hain huqooq-ul-ibaad ka sabaq meine ab ja ke parha tha..baba jaani yeh jo mujhpe bechaini chayi rehti thi..aur jo mujhe neend nahiiin ati thi..aisa pata hai kyun tha?? meri rooh pata hai kyun bechain thii? apko pata hai mere dil mein itna shor kyun tha? baba jani woh mera "zameer" tha..mera zameer jo mujhe malamat karta tha bechain rakhta tha..jo mujhse baar baar yeh kehta tha ke tum Allah ki makhlooq ke huqqoq adaa nahiin karpa rahi ho jab ke tumhare paas sab kuch hai..tum be sukooon ho kyun ke tum Allah ko naraz karti ho..aur mein samajh hi nahiin payi ke yeh wohi mamatt thi mere zameer ki jo raton mujhe bechain rakhti thi mein chahte hue bhi so nahiin paati thi..!!


    ab hareem ka wajood haule haule laraz raha tha..apna chehra hathon mein chupaye woh sisak rahi thi...

    baba jani ne buhut pyaar se uske sar pe haath rakh tha..
    mujhe apni beti par fakhar hai..!zameer ki awaaz par buhut kam log labaik kehte hain..unhone hazreen per aise nazar dali jese keh rahe hon ..dekhlo mil gaye apko apne sare sawalon ke jawaab? sab ghar walon ko jaise sakta ho gaya tha..Meine phir Allah se buhut maafiyaan maangi thein baba jaani..meine Allah se uska qurb maanga tha phir uske bando ki khidmat karte karte mujhe uska qurb bhi mil gaya......Hareem ne asu ponchte hue kaha...mamma beawaaz ansoun baha rahi theiin..unhone akar hareem ko apni Aaghosh mein bhar liya.....

    aur hareem unke aghosh ke hisaar mein ghiri soch rahi thi.."baat sirf ehsaas ki hoti hai...dosron ke liye sochna humein humesha mushkil lagta hai jab ke humara zameer uske haq mein gawahi bhi de raha hota hai..sukon apko tabhi mauysar ata hai jab aap zameer ki adalat mein surkhro hote hain..

    aaj uska zameer muttmain tha..aaj woh uski adalat mein surkhro ho gayi thi..aur Allah ki adalat mein bhi..usney sukon ko paa liya tha....

    .............









    *resham*

    ضمیر
    وہ اپنی ماں کی قبر کہ پاس بیٹھ کر ضمیر کی ملامتیں تلاش کرکے اپنے ماضی کی کتاب کھول کر روتے روتے معافی مانگ رہا تھا ۔ کہ اے ماں مجھے معاف کردیں میں پشیماں ہو آج بہت میں نے ہمیشہ تیرا دل دکھایا ۔ ہمیشہ تجھے چیکھ کر ہی جواب دیا ۔ ہر وقت تو سائے کی طرح میرے سکھ دکھ میں ساتھ تھی ۔لیکن میں نے تیرے وجود کو الجھن کی نظر سے چڑ کر دیکھا ۔ آج میری آنکھیں تجھے ڈھونڈتی ہے کہ میری ماں جب جب میں بچپن میں اسکول سے آتا تھا تو توہی میرا انتظار کھڑےنظر آتی تھی ۔ اس احساس سے کہ بستہ میں کتابوں کا وزن زیادہ ہے تو بستہ تھام لیتی تھی ۔ اور مجھے پیار سے گھر میں لیجا کر کھانا کھلاتی تھی۔ میں جوان ہوا تو دوستوں کی صحبت نے مجھے بدتمیز بنا دیا ۔ میں لڑ کر جھگڑ کر اونچی آواز میں بولنے لگا ۔ پھر بھی تو ہمیشہ میرا پہلے کی طرح انتظار کرتی رہی ۔ اور میری سلامتی سے واپس گھر آنے کی دعا کرتی رہی ۔ اور پھر میں کتنی بھی رات کو آؤ تو پھر بھی کہتی کہ کھانا نکالو بیٹا ۔ مجھے کچھ نہیں ملتا تو میں تیرے کھانے میں نقص نکالتا کہ تجھے کھانا بنانے نہیں آتا ۔ اور میں اللہ کی نعمت کہ ساتھ بھی برا سلوک کرکے پھینک دیتا ۔ ماں آج میں بہت بھوکا ہوں ماں مجھے تو کھانا کھلا دیں ۔ ماں اٹھ ماں میں نے گناہ کیا ہے تیرا دل دکھا کر مجھے معاف کئے بغیر تو کیسے چلی گئی ماں ۔ !! میری خطاؤں کو تو یہ کہہ کی معاف کر دیتی تھی ہمیشہ کہ میں نادان ہو بچہ ہوں ، تو مجھے سمجھاتی تھی نا میرا دل دکھا کر گنہگار نا بن آج میں پاس ہو کل نا رہو اپنی جنت نا گنوا ۔ بیٹا جب تجھے احساس ہونگا ماں کی قدر ہونگی تب تک بہت دیر نا ہوجائے بیٹا۔ ماں کا دل دکھا کر اپنی جنت گوا رہا ہوں ۔تو ہی کہا کرتی تھی نا ماں ۔۔۔؟ کہ میں بچہ ہو کم عقل ہو اللہ مجھے ہدیات دینگا ایک روز ۔ ماں آج وہ دن آگیا ہے ۔ اللہ نے تیری دعا قبول کرلی ۔ آج واقعی بہت دیر ہوگئی ماں آج ، ضمیر نے مجھے آواز دینے میں بہت دیر کردی ہے، میں نے آج جانا ماں کیا ہوتی ہے ۔ کل تک میرا ضمیر سویا ہوا تھا ۔ کوئی نہیں تھا میرا تیرے سیوا اور آج محسوس ہوا ہے مجھے کہ تو ہی میری دینا تھی، ماں میں نے بہت دکھ دئے ہے ماں میں نے ہمیشہ تیرا مذاق اڑایا ہے ، ہمیشہ تجھے بدتمیزی سے ہی جواب دیا ضد کی تجھ سے بہت ، بہت رلایا میں نے ۔ جب تو درد سے تڑپ رہی تھی میں نے کہا ناٹک کر رہی ہے تو ، اور تجھے اس درد میں چھوڑ کر چلا گیا جس نے تیری جان لیں لی ماں وہ رونے لگا ضمیرے سے بلک بلک کر میری لاپرواہی کی وجہ سے تیری جان چلی گئی ماں ، میرے لئے ماں تونے سب کچھ کیا ابا کی موت کہ بعد بھی تونے مجھے کبھی بھوکا نا سونے دیا ، اور میں نے کبھی دوروٹی تجھے کما کر نہیں دی ،کبھی یہ نہیں سوچا میری ماں محتاج ہے ۔ اسے کسی چیز کی ضرورت ہے ۔ کبھی نہیں ۔ ہمیشہ تجھ پر رعب کیا ۔ ماں مجھے معاف کردیں یہاں تو دم ٹور رہی تھی اور وہاں میں دوستوں میں شراب پیکر تیرا مذاق اڑا رہا تھا کہ میری ماں بہت بڑی ناٹک باز ہے ۔ درد کہ نام سے رو رہی تھی ، اور میرے بدکار دوست قہقہہ لگا کر ہسنے لگے کسی نے بھی نہیں کہا یہ غلط ہے ۔ یہاں ج چندا جمع کرکے تیرا کفن خرید رہے تھے اور وہاں میں کالج کہ نام سے تیری جمع کی ہوئی فیس سے سب کو شراب پلا کر پڑا تھا ۔ اللہ نے مجھے میرے کئے کی سزا دے دی ماں اسکی آنکھوں میں آنسو تھے ۔ وہ پشیماں ہوکر ماں کی قبر سے لپیٹ کر معافی مانگ رہا تھا ۔ کیا ایسی اولاد کی معافی ہے ۔۔۔؟ جو اپنے جوانی کہ غرور میں بڑھی ماں کا دل دکھاتے ہے ۔ ان کی جان لیں لیتے ہے ۔ انھیں بڑھاپے میں گھر سے بے گھر کر دیتے ہے ۔۔؟
    شادی کہ بعد اپنے ماں باپ کو گھر سے نکال دیتے ہے بیوی کہ کہنے پر کیا اللہ کہ فرمان کا ذکر ان کا ضمیر یاد نہیں رکھتا یا شیطان کہ متابعہ وہ اپنا ضمیر کو روند کر اسے اپنے ہی ہاتھوں مار دیتے ہے ۔۔۔ انھیں ایک پل کہ لئے خیال نہیں آتا گر آج وہ اپنی ماں کہ ساتھ کریں گے تو کل انکی اولاد ان کے ساتھ ایسا ہی کرے گی دیکھ کر ان سے یہی سیکھے گی ۔۔۔
    اللہ کہ نیک اعمال کو حدیث و دین کو اور نماز کہ پڑھنے والوں کی بھی مایئں ان سے خفا ہیں ۔ کبھی سوچا آپ نے کیوں یہ لوگ تو نمازی ہے حجی ہے پھر کیوں ایسا ۔ ؟ کیونکہ وہ اپنی ماں سے یہ نہیں کہتے کہ ماں تونے کھانا کھایا ۔ کبھی یہ نہیں کہتے کہ ماں آ تیرے آج پیر دبا دوں ۔ تجھے گھر خرچ کچھ دیں دوں ماں تونے تو مجھے برتن صاف کرکے بھی پالا تھا لیکن میں بڑے بڑے بیزنس کرکے بھی تجھے سمبھال نا سکھا ، چند روپئے تجھے دینے کا ذہن میں نہیں آیا بیوی کہ لئے زیور بنانا یاد رہا ۔ اسے سینمہلے جانا یاد رہا اسے گھومانا لیکن دو قوت تیرے ساتھ گزارنا یاد نہیں رہا ۔ اے ماں زمانے کی رونقوں نے اور دوستو کی صحبتوں نے مجھے اتنا بھی وقت نا دیا کہ میں اپنے بڑھے ماں باپ کہ ساتھ بیٹھ کر کچھ دیر ہی سہی ان کا سہارہ بنو ۔ میرا ضمیر نہیں ہے یا میں بدکار تھا جو اللہ کی رضا مسجدوں اور بیوی کی خوشی میں تلاش کر رہا تھا ۔ لیکن تیرے سامنے میرا سر جھکانے سے شرم محسوس کرتا رہا ۔ میں بھول گیا تھا کہ تیرے تو قدموں میں جنت العظیم ہے پھر میری آخرت میں تجھے ناراض کرکے کیسے بنا سکتا ہوں ماں ۔۔۔؟
    اللہ کی نیکیاں میں کرتا رہا لیکن میری ماں جس نے سب کچھ سہہ کر مجھے پروان کیا اس کہ آنسو نا دیکھ سکا ۔ ملامتیں ضمیر کی ہو یا انسانیت کی ہو یا محبت کی ہو سب کچھ گنوا کر ہی کیوں آتی ہے ۔ وقت آج بھی ہمارے پاس اور ہماری جنت بھی تو پھر اس کی قدر اور اس کی خدمت کرنے میں اتنی دیری کیوں ۔ ؟ ضمیر تو زندہ ہوگیا اس بیٹے کا جو اپنی ماں کہ قبر پر رو رہا تھا لیکن کیا اسکی ماں زندہ ہوسکے گی ۔۔۔۔؟ نہیں نا پھر کیوں اتنی دیر حق داروں کا حق ادا کرنے میں ۔ ماں کا دل دکھایا تو ہونگا ہم میں سے کسی نے لیکن ماں کہ آنسو پونچھ سکا کوئی ۔ وہ تو ؑعظمتوں کی اعلی مثال ہے ۔ اللہ کی رضا کا سرمایا تو گھر میں موجود ہے پھر نیکیاں کس کام کی جب وہ خفا ہے ہم سے ۔۔۔؟ اب بھی وقت ہے ان سے معافی مانگ لیں اور ان کہ سر پر بوسہ دیکر جایئں گھر سے باہر اور ہاتھ چوم کر اپنی جنت کو سلام کریں دیکھنا اللہ کی رضا رحمت بنکر آپ کی حفاظت کریں گی ۔دنیا میں بھی اور آخرت میں بھی ۔
    ضمیر کو مار کر ناجئے ضمیر تو کل پشیماں کروا ہی دینگا لیکن اللہ تعالی عقوق والدین کرنے والوں کو کبھی معاف نہیں کرے گے ۔ اے ماں تجھے سلام تونے جاتے جاتے بھی ہدایت ہی دی اور مرنے کہ بعد بھی تو ایک بدکار بیٹے کو اچھا بنا کر چلی گئی ۔
    اللہ ہم سب کی ماؤ ں کو سلامت رکھیں اور ہمارے ضمیر ماں کی محبت نا بھولیں اور ہمارے دین و دینا ماں کی محبت اور خدمت اور نرمی و پیار سے سرشار رہیں امین
    از ریشم















    Bilal Azam

    چھوٹا سا کام

    "بیٹا چار پائیاں صحیح کروا لو۔ گھر میں کھانے کو کچھ نہیں ہے، بچے بھوکے بیٹھے ہیں، صبح سے مارا مارا پھر رہا ہوں، کوئی کام نہیں ملا ابھی تک۔ مہنگائی نے کمر توڑ کے رکھ دی ہے۔" یہ الفاظ اس بوڑھے انسان کے ناتواں لبوں سے ادا ہوئے تھے جو ہمارے دروازے پہ کھڑا زندگی کی دہائی دے رہا تھا۔ عمر کے اس حصے میں پہنچ کر کہ انسان سے دو قدم چلنا بھی دو بھر ہو جاتا ہے، وہ صبح سے روزی کمانے کے لئے نکلا ہوا تھا۔مگر ابھی تک ناکامی اس کا منہ تک رہی تھی۔ اتنے لاچار اور بوڑھے انسان سے جو ہمارے باپ سے بھی زیادہ عمر کا ہو، کام کے ہوتے ہوئے بھی کام کروانا اچھا نہیں لگتا۔
    کسی بھوکے کو دو پلیٹ چاول دے کر، کسی پیاسے کو پانی پلا کر، کسی غریب کی مدد کر کے جو خوشی ملتی ہے، جو روحانی سکون حاصل ہوتا ہے، اس کا اندازہ مجھے اس دن اُس بوڑھے کے قدموں سے بآسانی ہو رہا تھا، جو لڑ کھڑاتے ہوئے قدموں سے بھی دعاؤں کی آبشاریں بہائے جا رہا تھا۔ جو کام بڑی بڑی چیزیں نہیں کر سکتیں، وہ کسی ضرورت مند کی زبان سے نکلی ہوئی دعا بآسانی کر سکتی ہے، یہ مجھے اس دن پتہ چل گیا۔
    یہ واقعہ جو میرے ساتھ پیش آیا،لکھنے کا مقصدصرف یہ ہے کہ وہ چھوٹی چھوٹی چیزیں جو بعض اوقات ہم غیر اہم سمجھ کر رد کر دیتے ہیں وہ کس قدر بڑی اور فائدہ مندہوتی ہیں۔اشفاق احمد کہتے ہیں کہ چھوٹے چھوٹے کام کرتے رہنا چاہیے اور اشفاق احمد کی سینکڑوں ان گنت باتوں کی طرح یہ بات بھی بالکل درست ہے۔ یہ چھوٹے چھوٹے کام در حقیقت کسی بڑی نیکی کا سبب بن سکتے ہیں۔ یہ وہ عمل بھی بن سکتے ہیں جو بارگاہِ الہٰی میں قبول ہو جائےاور ہو سکتا ہے یہ وہ چھوٹا ساکام، جسے کرنے کے تھوڑی دیر بعد ہم بھول جاتے ہیں، روزِ محشر ہمیں رسوا ہونے سے بچا لے۔
    یہ چھوٹی چھوٹی نیکیاں ہر جگہ بکھری ہوئی ہیں بس ضرورت انہیں اکٹھا کرنے کی ہے، اپنے دامن میں بھرنے کی ہے۔ کسی پیاسے کو پانی پلا دیا جائے، کسی بھوکے کو کھانا کھلا دیا جائے، کسی نابینا کو سڑک پار کرا دی جائے، کسی غریب بچے کو کام سے اٹھوا کر تعلیم پہ لگا دیا جائے، اپنی پرانی کتابیں کسی ضرورت مند کو دے دی جائیں یا پرانی کتابوں کی ایک لائبریری بنا کر غریب بچوں کو علم کی شمع روشن کرنے کا ایک موقع دیا جائے یا سڑک پہ پڑے ہوئے پتھر کو اٹھا کر ایک طرف کر دیا جائے،وغیرہ وغیرہ۔ یہ سب چھوٹی چھوٹی نیکیاں ہی ہیں۔

    حضرت عائشہؓ سے روایت ہے ۔ انہوں نے فرمایا
    "اے اللہ کے رسولؐ کون سی چیز کو روک کر رکھنا حلال نہیں؟"
    رسول اکرمؐ نے فرمایا"پانی، نمک اور آگ کو۔"
    ام المومنین حضرت عائشہؓ فرماتی ہیں، میں نے عرض کیا۔"یہ پانی جو ہےاس کی(اہمیت) کو ہم نے جان لیا، نمک اور آگ کا کیا معاملہ ہے؟"
    آپؐ نے فرمایا۔"اے حمیرا! جس نے (کسی کو) آگ دی اس نے گویا وہ سارا کھانا صدقہ کیا۔ جو اس آگ سے تیار ہوا۔ اور جس نے نمک دیا ، اس نے وہ سب کچھ صدقہ کر دیا جو اس نمک سے درست ہوا۔ اور جس نے کسی مسلمان کو اس جگہ پانی کا گھونٹ پلایا جہاں پانی پایا جاتا ہے تو اس نے گویا ایک غلام آزاد کیا۔ اور جس نے مسلمان کو وہاں پانی کا گھونٹ پلایا جہاں پانی نہیں پایا جاتا تو اس نے اسے زندہ کر دیا۔"
    (ابنِ ماجہ)
    ایک اور چھوٹی سی بات کہ جو لوگ روزانہ رات کواپنے ماں باپ کےپیر دبا کر سویا کرتے ہیں، وہ بہت جلد اپنی منزل پا لیتے ہیں، ناکامی ان کے راستے سے ہٹتی چلی جاتی ہے اور کامیابی ان کے راستے میں بچھتی چلی جاتی ہے۔ ایسی کئی مثالیں ہمارے ارد گرد ہیں بس ذرا سوچ کا زاویہ موڑنے اور اپنے ضمیر کا محاسبہ کرنے کی ضرورت ہے۔ تو کیا آپ نے اپنے ضمیر کا محاسبہ کیا، اپنی سوچ کا زاویہ تبدیل کیا؟
    (تحریر: محمد بلال اعظم)
    suno hworiginal - Polling for writers club comp oct 2012
    575280tvjrzkx7ho zps19409030 - Polling for writers club comp oct 2012ღ∞ ι ωιll αlωαуѕ ¢нσσѕє уσυ ∞ღ 575280tvjrzkx7ho zps19409030 - Polling for writers club comp oct 2012

  2. #2
    Join Date
    Apr 2012
    Location
    Karachi/Lahore Pakistan
    Posts
    12,439
    Mentioned
    34 Post(s)
    Tagged
    9180 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    249126

    Default Re: Polling for writers club comp oct 2012

    voted

  3. #3
    Join Date
    Jul 2012
    Location
    FANTACIES..!!
    Posts
    1,960
    Mentioned
    4 Post(s)
    Tagged
    4063 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    429505

    Default Re: Polling for writers club comp oct 2012

    done..!!
    YOU INTOXICATE ME WITH THE FRAGRANCE OF YOUR SOULFUL LOVE..
    YOUR MAGICAL TOUCH MAKES MY SOUL STIR INSIDE MY BODY..
    YOU ARE MY SOLACE.. !!


  4. #4
    Join Date
    Mar 2010
    Location
    Karachi,Pakistan
    Posts
    11,803
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    16 Thread(s)
    Thanked
    2
    Rep Power
    21474855

    Default Re: Polling for writers club comp oct 2012

    Walaikum Assalam ,

    voted...........
    Alhamdullilah

  5. #5
    Join Date
    May 2010
    Location
    Karachi
    Age
    22
    Posts
    25,472
    Mentioned
    11 Post(s)
    Tagged
    6815 Thread(s)
    Thanked
    2
    Rep Power
    21474869

    Default Re: Polling for writers club comp oct 2012

    done...
    tumblr na75iuW2tl1rkm3u0o1 500 - Polling for writers club comp oct 2012

    Hum kya hain

    Hmari Muhabatayn kya hain
    kya chahtay hain
    kya patay hain..

    -Umera Ahmad (Peer-e-Kamil)


  6. #6
    Hidden words's Avatar
    Hidden words is offline "-•(-• sтαү мιηε •-)•-"
    Join Date
    Nov 2011
    Location
    Kisi ki Ankhon Aur Dil Mein .......:P
    Posts
    56,915
    Mentioned
    322 Post(s)
    Tagged
    10949 Thread(s)
    Thanked
    4
    Rep Power
    21474899

    Default Re: Polling for writers club comp oct 2012

    suno hworiginal - Polling for writers club comp oct 2012
    575280tvjrzkx7ho zps19409030 - Polling for writers club comp oct 2012ღ∞ ι ωιll αlωαуѕ ¢нσσѕє уσυ ∞ღ 575280tvjrzkx7ho zps19409030 - Polling for writers club comp oct 2012

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •