Results 1 to 7 of 7

Thread: مسلمان قیدی

  1. #1
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Hijr
    Posts
    152,763
    Mentioned
    104 Post(s)
    Tagged
    8577 Thread(s)
    Thanked
    80
    Rep Power
    21474998

    candel مسلمان قیدی

    قیصر روم کو اطلاع ملی کہ لشکر اسلام روم کی جانب پیش قدمی کررہاہے، اس نے یہ اطلاح پاتے ہی اپنی فوج کو حکم دیا، مسلمانوں کو قتل کرنے کے بجائے زندہ گرفتار کرنے کو ترجیح دی جائے
    چنانچہ اس کے سپاہی اس حکم کی تکمیل کی بھرپور کوشش کرتے۔اتفاقاَ کچھ ایسا ہوا چند مسلمان رومی فوجیوں کے ہاتھوں گرفتار ہوئے اور قیدی بنالیےگئے۔

    ان قیدیوں میں ایک قیدی سب سے زیادہ بہادر،ذہین نظرآرہاتھا،سپاہیوں نے اسے زنجیروں میں جکڑ رکھا تھا۔کیونکہ وہ قیدی ان کے لیے بہت قیمتی تھا اور قیدی ہی بادشاہ کی نظر میں ان کا مرتبہ بڑھانے میں ثابت ہوسکتا تھا۔
    بادشاہ کے سامنے سب قیدیوں کو لایا گیا۔

    سب مسلمان قیدی بادشاہ کے سامنے بلاخوف کھڑے ہوگئے یہ دیکھ کر سب دربار میں سب لوگ حیران رہ گئے کہ قیدیوں کے چہرے پر کوئی خوف نام کی کوئی چیز نہ تھی۔ایک رعب تھا کو درباریوں سمیت بادشاہ کو مرغوب کر رہا تھا۔ بادشاہ نے اس کے بارعب چہرے والے شخص پر نگاہ دوڑائی اور کہا تم مجھے معزز انسان لگتے ہو۔تم اپنے مذہب کو خیرباد کہہ دو ہم تمہیں عزت واکرام سے نوازیں گے،بس تم میرا مذہب (عیسائیت) قبول کرلو۔
    اس سے قبل بادشاہ مزید کچھ کہتا،قیدی نے سختی سے اس کی بات کورد کردیا اور کہا کہ ایساتو سوچا بھی نہیں جاسکتا۔بادشاہ ہمت نہ ہارتے ہوئے ایک مرتبہ پھر گویا ہوا" اگر تم میرامذہب قبول کر لیتے ہو تو میں اپنی حکومت میں تمہیں حصہ دار بنالوں گا۔
    اپنی بیٹی تمہارے نکاح میں دے دوں گا،دنیا کی ہر نعمت تیرے قدموں تلے ہوگی"

    یہ سننا تھا کہ قیدی کی رگ حمیت پھڑک اٹھی،اس نے سوچا کہ بادشاہ اس سے اس کی متاع ثمیں یعنی ایمان کو سودا کرنا چاہتاہے جو کہ اسے کسی بھی شرط میں منظور نہیں۔اس نے فوراَ کہا جواب وہ پہلے سے بھی زیادہ سختی سے انکار کرتارہا کہ وہ کبھی اپنے ایمان کا سودا نہیں کرے گا۔بادشاہ کو بے عزتی محسوس ہوئی کہ ایک قیدی نے بھرے دربار میں اس کی پیشکس کو ٹھکڑادیا ہے۔
    بادشاہ غصے سے بھڑک اٹھا اور کہنے لگا :میں تجھے قتل کردوں گا،قیدی نے جواب دیا کہ اگر میرے اﷲ نے میری موت تیرے ہاتھوں سے لکھی ہے تو میں اس سے راضی ہوں،بحکم بادشاہ قیدی کو تختہ دار پر لٹکا دیا گیا۔

    تیراندازوں کے تیز قیدی کے جسم کو زخمی کرنے لگے۔بادشاہ نے خیال کیا تکلیف کی شدت دیکھتے ہوئے یقیناَ عیسائیت قبول کرلےگا۔بادشاہ نے تیسری مرتبہ کوشش کرتے ہوئے دعوت عیسائیت قیدیوں کے سامنے رکھی لیکن عظیم قیدی نے تخت دار پر لٹکتے ہوئے بھی بادشاہ کی دعوت کو تھکڑا دیا۔ بادشاہ کا غصہ آسمان کی وسعتوں کو چھونے لگا،اس نے قیدی جو زیر کرنے کے لیے آخری حربہ استمعال کرتے ہوئے غصے سے حکم دیا کہ مسلمانوں قیدیوں کو گرم کھولتے ہوئے تیل میں پھینک دیاجائے۔ پلک جھپکتے ہی تعمیل حکم ہوئی اور دو معصوم قیدیوں کو کھولتے ہوئے تیل میں ڈال دیاگیا۔

    یہ سوچ کر کہ شائد قیدی ڈر گیاہو باشاہ نے کہا کہ تمہارے لیے یہ آخری موقع ہےتم عیسائیت قبول کرلو تم اور تمہاے تمام دوستوں کی زندگیاں بچ جائیں گئی۔مگر قیدی کے موقف میں ذرا برابر بھی فرق نہیں پڑا اس نے پھر انکا کردیا بادشاہ نے غصے سے پاگل ہوتے ہوئے کہا اسے بھی تیل میں ڈال دو۔جب سپاہی قیدی کو تیل میں ڈالنے کے لیے لے کر جارہے تھے تو دیکھا قیدی کی آنکھوں سے آنسو نکل رہیے ہیں۔بادشاہ کو بتایا گیا۔بادشاہ نے کہا میں جانتا ہوں تمہارا جسم یہ عذاب برداشت کرنے کی سکت نہیں رکھتا،لہذا ابھی وقت ہے تم عیسائیت،،،،،!!

    قیدی نے جرات مندانہ لہجے میں جواب دیتے ہوئے کہا کہ اے بادشاہ! مجھے افسوس ہے کہ تیری سوچ ابھی بھی غلط ہےقیدی بولا"میں موت کے ڈر سے ڈر کر نہیں رویا میں صرف اس لیے رویا کہ میرے پاس ایک جان ہے جو میں اﷲ کی راہ میں قربان کر ہا ہوں۔
    کاش! کہ میرے پاس کئی جانیں ہوتیں تو میں ایک ایک کر کے سب اﷲ کی راہ میں قربان کردیتا"

    بادشاہ نے دل ہی دل میں سوچا یہ تو ناقابل تسخیر قوم ہے۔یقیناَ یہ بہادر لوگ ناقابل شکست ہیں۔ان لوگوں کو خریدا نہیں جاسکتا اور نہ جھکایا جاسکتاہے۔
    لیکن اس نے اپنا بھرم رکھنے کی خاطر قیدی سے کہا اگر تم میرے سر کو بوسہ لے لو میں تمہیں تمہارے ساتھیوں سمیت آزار کردوں گا۔ قیدی نے سوچا اگر میں بادشاہ کے سر کا بوسہ لے لیتا ہوں تو یقیناَ میرے دین حقیقی میں کوئی حرف نہیں آئے گا اور میرے ساتھیوں کی زندگی اور آزادی جیسی نعمت سے سرفراز ہوجائیں گے۔سو قیدی نے بادشاہ کا بوسہ لے لیا اور بادشاہ روم نے ایفائے عہد کرتے ہوئے قیدی اور اس کے تمام ساتھیوں کو آزاد کردیا۔

    قیدی حضر عمررضی اﷲعنہ کے پاس آیا اور ساری داستان سنائی یہ سن کر امیرالمومنین حضر عمر رضی اﷲ عنہ نے آگے بڑھ کر قیدی کا سر چوم لیا ۔ (ابن کثیر)

    یہ مضبوط ایمان رکھنے والے صحابی عبداﷲبن حذافہ رضی اﷲعنہ تھے جنہوں نے اپنے عمل سے ثابت کردیااا کہ ایمان ایک قیمتی چیز ہے جس کسی قیمت پر فروخت نہیں کیاجاسکتا۔

  2. #2
    Join Date
    May 2012
    Location
    !!!KiSii Kii DuAouN meii!!!:):)
    Posts
    10,485
    Mentioned
    83 Post(s)
    Tagged
    10415 Thread(s)
    Thanked
    28
    Rep Power
    2184012

    Default Re: مسلمان قیدی

    SUBHAAN ALLAH
    bht xbrdast shariin
    JAZAAK ALLAH khair

  3. #3
    Join Date
    Apr 2010
    Location
    k, s, a
    Posts
    14,631
    Mentioned
    215 Post(s)
    Tagged
    10286 Thread(s)
    Thanked
    84
    Rep Power
    1503265

    Default Re: مسلمان قیدی

    SubhanALLAH
    Qaash hum sab ka imaan b itna hi muzboobat ho jaye

  4. #4
    Cute PaRi's Avatar
    Cute PaRi is offline ♥Häppïnëss ïs Süċċëss♥
    Join Date
    Sep 2012
    Location
    ♥ündër möthër's fëët♥
    Posts
    9,560
    Mentioned
    132 Post(s)
    Tagged
    9855 Thread(s)
    Thanked
    2
    Rep Power
    1533321

    Default Re: مسلمان قیدی

    Jazak ALLAH Khair

  5. #5
    Join Date
    Jul 2013
    Location
    U.K
    Posts
    28
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    9 Thread(s)
    Thanked
    7
    Rep Power
    0

    Default Re: مسلمان قیدی

    Jazaak Allah for sharing this post.

  6. #6
    taqwimulhaq's Avatar
    taqwimulhaq is offline ابتِ يوسف و محمود
    Join Date
    Mar 2010
    Location
    Peshawar
    Age
    37
    Posts
    1,040
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    1903 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    9

    Default Re: مسلمان قیدی

    جزاک اللہ

  7. #7
    *jamshed*'s Avatar
    *jamshed* is offline کچھ یادیں ،کچھ باتیں
    Join Date
    Oct 2010
    Location
    every heart
    Posts
    14,586
    Mentioned
    138 Post(s)
    Tagged
    8346 Thread(s)
    Thanked
    4
    Rep Power
    21474858

    Default Re: مسلمان قیدی

    jazak1 - مسلمان قیدی

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •