Results 1 to 9 of 9

Thread: Taien Taien Fish Az Gul Nu Khaiz Akhtar

  1. #1
    Join Date
    Jun 2010
    Location
    Jatoi
    Posts
    59,925
    Mentioned
    201 Post(s)
    Tagged
    9827 Thread(s)
    Thanked
    6
    Rep Power
    21474903

    Default Taien Taien Fish Az Gul Nu Khaiz Akhtar


    یسے ہی نائی نے میرے سر پر استرا پھیرنا شروع کیا۔۔۔ ۔۔۔ ۔ مجھے سکون سا آ گیا۔ ٹنڈ کروانا میرے لیے ہمیشہ باعث اطمینان رہا ہے۔۔۔ ۔ جیسے جیسے استرا میرے سر پر پھرتا جاتا ہے مجھے اپنا آپ ہلکا پھلکا لگنے لگتا ہے، میں ٹنڈ اس لیے نہیں کرواتا کہ اس سے سر کو ہوا لگتی ہے۔۔۔ ۔۔ بلکہ میں نے یہ نوٹ کیا ہے کہ ٹنڈ کروانے سے میرا سر میرے منہ سے اچھا نکل آتا ہے۔ ابا کو میری ٹنڈ سے بہت چڑ ہےان کے بس میں ہو تو وہ دنیا بھر کے استروں کو زنگ لگوا دیں، اگرچہ ان کو ٹنڈ کا کوئی شوق نہیں لیکن قدرت نے ان کے سارے بال اڑا دیے ہیں۔۔۔ ابا کی اتنی گھنی ٹنڈ دیکھ کر میرے منہ سے رال ٹپکنے لگتی ہےاور میں سوچتا ہوں کہ کاش میرا سر بھی ایسا ہی سموتھ ہو جائے۔ مجھے یاد ہے جب میں چھوٹا ہوتا تھا تو ابا کے سر پر چپت مارنے کا بڑا مزا آتا تھا، بالکل ایسی آواز آتی تھی جیسے تبلے کی ترکٹ سے آتی ہےلیکن جوں جوں بڑا ہوتا گیا ابا کا سر مجھ سے دور ہوتا گیا اور پھر ایک ایسا وقت آیا کہ اخلاقی اعتبار سے ابا کے سر پر چپت مارنا میرے لیے جرم ضعیفی قرار پایا۔ انہی دنوں میں نے فیصلہ کیا کہ اب ابا کے سر پر انحصار کرنے کی بجائے اپنے سر پر خود کھڑا ہوں گا۔۔۔ ۔ یوں میں نے خود انحصاری کی پالیسی پر عمل کرتے ہوئے پہلی دفعہ ٹنڈ کرائی۔ مجھے یاد ہے کہ جب میں ٹنڈ شدہ ہو کر گھر پہنچا تو ابا نے دروازے سے ہی مجھے چونی دے کر رخصت کرنے کی کوشش کی تھی۔ میں نے کچھ کہنے کے لیے منۃ کھولا تو میری بات کاٹ کر بولے۔۔۔ ۔۔ دیکھو بھئی۔۔۔ ۔۔۔ ۔ نہ تو ہمارے گھر میں کوئی بچہ ہوا ہے اور نہ ہی کوئی شادی ہے۔۔۔ ۔۔ پھر تمھیں ادھر کا پتہ کس نے دیا ، یہ چونی پکڑو اور معاف کرو! وہ دروازہ بند کرنے لگے۔۔۔ ۔!!!
    ابا۔۔۔ ۔۔!!! یہ میں ہوں۔۔۔ ۔ میں چلایا۔۔۔ ۔۔!!!
    ان کے پیرون تلے زمین نکل گئی ۔۔۔ ۔ ابے آہستہ بول ۔۔۔ ۔ کیوں مجھے ابا ابا کہہ کر بدنام کر رہا ہے ۔۔۔ ۔ میں کہاں سے تیرا باپ ہو گیا۔۔۔ وہ غرائے
    ابا۔۔۔ ۔ میری آنکھوں میں آنسو آ گئے ۔۔۔ ابا ۔۔۔ ۔ تو ہی میرا باپ ہے۔۔۔ ۔ خدا کے لیے مجھے پہچان۔۔۔ ۔!!!
    ابے کیا بک رہا ہے۔۔۔ ۔۔ ابا کے ماتھے پہ پسینہ آکیا۔
    میں ٹھیک کہہ رہا ہوں ۔۔۔ ۔ ابا میں تیرا بیٹا ہوں۔۔۔ میں نے دہائی دی۔
    لل۔۔۔ ۔ لیکن ۔۔۔ ۔میں۔۔۔ تو کبھی موت کا کنواں دیکھنے نہیں گیا۔۔۔ ۔ ابا نے مری مری آواز میں دلیل دی اور بے عزتی کے احساس سے میرا رنگ سرخ ہو گیا۔ میں نے کوئی اور حملہ ہونے سے پہلے جلدی سے کہا ۔۔۔ ۔
    ابا ماضی میں جھانکنے کی بجائے میری آنکھوں میں جھانک۔۔۔ ۔ میں تیرا بیٹا کمال ہون ۔۔۔ ۔ کمالا۔۔۔ ۔

    ٹائیں ٹائیں فش از گل نو خیز اختر





    تیری انگلیاں میرے جسم میںیونہی لمس بن کے گڑی رہیں
    کف کوزه گر میری مان لےمجھے چاک سے نہ اتارنا

  2. #2
    Join Date
    Oct 2010
    Location
    Lahore , Pakistan
    Age
    27
    Posts
    1,938
    Mentioned
    41 Post(s)
    Tagged
    6498 Thread(s)
    Thanked
    8
    Rep Power
    21474845

    Default re: Taien Taien Fish Az Gul Nu Khaiz Akhtar

    is jasa funny novel mein ney aj tak read nahi kiya........................!!!

    aik bar shoro kr do to khtam kr k he chorne ko dil krta hy..........!!







  3. #3
    Join Date
    Sep 2012
    Location
    Bermuda Triangles
    Posts
    3,039
    Mentioned
    3 Post(s)
    Tagged
    3495 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    9

    Default re: Taien Taien Fish Az Gul Nu Khaiz Akhtar

    hahaha bahot ala
    viper siggi - Taien Taien Fish Az Gul Nu Khaiz Akhtar

  4. #4
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Hijr
    Posts
    152,763
    Mentioned
    104 Post(s)
    Tagged
    8577 Thread(s)
    Thanked
    80
    Rep Power
    21474998

    Default re: Taien Taien Fish Az Gul Nu Khaiz Akhtar

    Hahahaha

    Main Samjha Yaqeen Dilaane Ke Liye Abba Ki Tind Par Thappar Maare Ga
    پھر یوں ہوا کے درد مجھے راس آ گیا

  5. #5
    Join Date
    Feb 2010
    Location
    dubai
    Posts
    7,667
    Mentioned
    566 Post(s)
    Tagged
    8128 Thread(s)
    Thanked
    1274
    Rep Power
    214764

    Default re: Taien Taien Fish Az Gul Nu Khaiz Akhtar

    Quote Originally Posted by sarfraz_qamar View Post

    یسے ہی نائی نے میرے سر پر استرا پھیرنا شروع کیا۔۔۔ ۔۔۔ ۔ مجھے سکون سا آ گیا۔ ٹنڈ کروانا میرے لیے ہمیشہ باعث اطمینان رہا ہے۔۔۔ ۔ جیسے جیسے استرا میرے سر پر پھرتا جاتا ہے مجھے اپنا آپ ہلکا پھلکا لگنے لگتا ہے، میں ٹنڈ اس لیے نہیں کرواتا کہ اس سے سر کو ہوا لگتی ہے۔۔۔ ۔۔ بلکہ میں نے یہ نوٹ کیا ہے کہ ٹنڈ کروانے سے میرا سر میرے منہ سے اچھا نکل آتا ہے۔ ابا کو میری ٹنڈ سے بہت چڑ ہےان کے بس میں ہو تو وہ دنیا بھر کے استروں کو زنگ لگوا دیں، اگرچہ ان کو ٹنڈ کا کوئی شوق نہیں لیکن قدرت نے ان کے سارے بال اڑا دیے ہیں۔۔۔ ابا کی اتنی گھنی ٹنڈ دیکھ کر میرے منہ سے رال ٹپکنے لگتی ہےاور میں سوچتا ہوں کہ کاش میرا سر بھی ایسا ہی سموتھ ہو جائے۔ مجھے یاد ہے جب میں چھوٹا ہوتا تھا تو ابا کے سر پر چپت مارنے کا بڑا مزا آتا تھا، بالکل ایسی آواز آتی تھی جیسے تبلے کی ترکٹ سے آتی ہےلیکن جوں جوں بڑا ہوتا گیا ابا کا سر مجھ سے دور ہوتا گیا اور پھر ایک ایسا وقت آیا کہ اخلاقی اعتبار سے ابا کے سر پر چپت مارنا میرے لیے جرم ضعیفی قرار پایا۔ انہی دنوں میں نے فیصلہ کیا کہ اب ابا کے سر پر انحصار کرنے کی بجائے اپنے سر پر خود کھڑا ہوں گا۔۔۔ ۔ یوں میں نے خود انحصاری کی پالیسی پر عمل کرتے ہوئے پہلی دفعہ ٹنڈ کرائی۔ مجھے یاد ہے کہ جب میں ٹنڈ شدہ ہو کر گھر پہنچا تو ابا نے دروازے سے ہی مجھے چونی دے کر رخصت کرنے کی کوشش کی تھی۔ میں نے کچھ کہنے کے لیے منۃ کھولا تو میری بات کاٹ کر بولے۔۔۔ ۔۔ دیکھو بھئی۔۔۔ ۔۔۔ ۔ نہ تو ہمارے گھر میں کوئی بچہ ہوا ہے اور نہ ہی کوئی شادی ہے۔۔۔ ۔۔ پھر تمھیں ادھر کا پتہ کس نے دیا ، یہ چونی پکڑو اور معاف کرو! وہ دروازہ بند کرنے لگے۔۔۔ ۔!!!
    ابا۔۔۔ ۔۔!!! یہ میں ہوں۔۔۔ ۔ میں چلایا۔۔۔ ۔۔!!!
    ان کے پیرون تلے زمین نکل گئی ۔۔۔ ۔ ابے آہستہ بول ۔۔۔ ۔ کیوں مجھے ابا ابا کہہ کر بدنام کر رہا ہے ۔۔۔ ۔ میں کہاں سے تیرا باپ ہو گیا۔۔۔ وہ غرائے
    ابا۔۔۔ ۔ میری آنکھوں میں آنسو آ گئے ۔۔۔ ابا ۔۔۔ ۔ تو ہی میرا باپ ہے۔۔۔ ۔ خدا کے لیے مجھے پہچان۔۔۔ ۔!!!
    ابے کیا بک رہا ہے۔۔۔ ۔۔ ابا کے ماتھے پہ پسینہ آکیا۔
    میں ٹھیک کہہ رہا ہوں ۔۔۔ ۔ ابا میں تیرا بیٹا ہوں۔۔۔ میں نے دہائی دی۔
    لل۔۔۔ ۔ لیکن ۔۔۔ ۔میں۔۔۔ تو کبھی موت کا کنواں دیکھنے نہیں گیا۔۔۔ ۔ ابا نے مری مری آواز میں دلیل دی اور بے عزتی کے احساس سے میرا رنگ سرخ ہو گیا۔ میں نے کوئی اور حملہ ہونے سے پہلے جلدی سے کہا ۔۔۔ ۔
    ابا ماضی میں جھانکنے کی بجائے میری آنکھوں میں جھانک۔۔۔ ۔ میں تیرا بیٹا کمال ہون ۔۔۔ ۔ کمالا۔۔۔ ۔

    ٹائیں ٹائیں فش از گل نو خیز اختر

    lolz very funny thanks for sharing
    mera siggy mujhe nazarnahi aa raha...

    30abdx0 - Taien Taien Fish Az Gul Nu Khaiz Akhtar

  6. #6
    Join Date
    Jun 2010
    Location
    Jatoi
    Posts
    59,925
    Mentioned
    201 Post(s)
    Tagged
    9827 Thread(s)
    Thanked
    6
    Rep Power
    21474903

    Default re: Taien Taien Fish Az Gul Nu Khaiz Akhtar

    Quote Originally Posted by maya View Post

    lolz very funny thanks for sharing
    shukriya mohtarmaa





    تیری انگلیاں میرے جسم میںیونہی لمس بن کے گڑی رہیں
    کف کوزه گر میری مان لےمجھے چاک سے نہ اتارنا

  7. #7
    Join Date
    Feb 2010
    Location
    dubai
    Posts
    7,667
    Mentioned
    566 Post(s)
    Tagged
    8128 Thread(s)
    Thanked
    1274
    Rep Power
    214764

    Default re: Taien Taien Fish Az Gul Nu Khaiz Akhtar

    Quote Originally Posted by sarfraz_qamar View Post

    shukriya mohtarmaa
    most welcome
    mera siggy mujhe nazarnahi aa raha...

    30abdx0 - Taien Taien Fish Az Gul Nu Khaiz Akhtar

  8. #8
    Join Date
    Jun 2010
    Location
    Jatoi
    Posts
    59,925
    Mentioned
    201 Post(s)
    Tagged
    9827 Thread(s)
    Thanked
    6
    Rep Power
    21474903

    Default re: Taien Taien Fish Az Gul Nu Khaiz Akhtar

    Quote Originally Posted by Zain View Post
    is jasa funny novel mein ney aj tak read nahi kiya........................!!!

    aik bar shoro kr do to khtam kr k he chorne ko dil krta hy..........!!

    no dout,kuch aisaa hii haiii





    تیری انگلیاں میرے جسم میںیونہی لمس بن کے گڑی رہیں
    کف کوزه گر میری مان لےمجھے چاک سے نہ اتارنا

  9. #9
    Join Date
    Jun 2010
    Location
    Jatoi
    Posts
    59,925
    Mentioned
    201 Post(s)
    Tagged
    9827 Thread(s)
    Thanked
    6
    Rep Power
    21474903

    Default re: Taien Taien Fish Az Gul Nu Khaiz Akhtar

    Quote Originally Posted by Silent Tears View Post
    Hahahaha

    Main Samjha Yaqeen Dilaane Ke Liye Abba Ki Tind Par Thappar Maare Ga
    kuch ziada hii samjhdarr naii hotay jaa raii paii jiii





    تیری انگلیاں میرے جسم میںیونہی لمس بن کے گڑی رہیں
    کف کوزه گر میری مان لےمجھے چاک سے نہ اتارنا

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •