Results 1 to 7 of 7

Thread: Imam Ghazali Chemiya e Saadat Safah 411

  1. #1
    Join Date
    Jun 2010
    Location
    Jatoi
    Posts
    59,925
    Mentioned
    201 Post(s)
    Tagged
    9827 Thread(s)
    Thanked
    6
    Rep Power
    21474903

    Default Imam Ghazali Chemiya e Saadat Safah 411

    " جب قوت غضبانی (خشم ) حد افراط میں ہوتی ہے تو اس کو " تہور " کہا جاتا ہے ۔

    اور جب ناقص اور تفریط میں ہوتی ہے تو اس وقت بددلی اور بے حمیتی " بےغیرتی ظہور میں آتی ہے ۔

    اور جب یہ حالت اعتدال میں ہوتی ہے نہ زیادہ نہ کم تو اس کو شجاعت کہتے ہیں ۔

    اور اسی شجاعت سے کرم ، بزرگ ہمتی ، دلیری ، حلم ، بردباری ،آہستہ روی غصہ کا ضبط اور اسی قسم کے دوسرے اوصاف پیدا ہوتے ہیں ۔

    اور تہور ( غضب ) سے شیخی تکبر اور غرور ، ڈھیٹ پن اور خطرناک کاموں میں دخل اندازی اور اس جیسی بری صفات پیدا ہوتی ہیں ۔

    اور جب یہ تفریط کی صورت میں ہوتی ہے تو اس سے بےبسی ، بےچارگی ، رونا دھونا ، ، دوسروں کی خوشامد کرنا اور مذلت کے اوصاف پیدا ہوتے ہیں۔

    امام غزالی کیمیائے سعادت صفحہ 41


    Last edited by sarfraz_qamar; 19-07-2013 at 03:04 AM.





    تیری انگلیاں میرے جسم میںیونہی لمس بن کے گڑی رہیں
    کف کوزه گر میری مان لےمجھے چاک سے نہ اتارنا

  2. #2
    Join Date
    Jan 2011
    Location
    pakistan
    Posts
    9,092
    Mentioned
    95 Post(s)
    Tagged
    8378 Thread(s)
    Thanked
    2
    Rep Power
    429513

    Default re: Imam Ghazali Chemiya e Saadat Safah 411

    nice


  3. #3
    *jamshed*'s Avatar
    *jamshed* is offline کچھ یادیں ،کچھ باتیں
    Join Date
    Oct 2010
    Location
    every heart
    Posts
    14,586
    Mentioned
    138 Post(s)
    Tagged
    8346 Thread(s)
    Thanked
    4
    Rep Power
    21474858

    Default re: Imam Ghazali Chemiya e Saadat Safah 411


  4. #4
    Join Date
    Jun 2010
    Location
    Jatoi
    Posts
    59,925
    Mentioned
    201 Post(s)
    Tagged
    9827 Thread(s)
    Thanked
    6
    Rep Power
    21474903

    Default Imam Ghazali Chemiya e Saadat Safah 411

    " جب قوت غضبانی (خشم ) حد افراط میں ہوتی ہے تو اس کو " تہور " کہا جاتا ہے ۔

    اور جب ناقص اور تفریط میں ہوتی ہے تو اس وقت بددلی اور بے حمیتی " بےغیرتی ظہور میں آتی ہے ۔

    اور جب یہ حالت اعتدال میں ہوتی ہے نہ زیادہ نہ کم تو اس کو شجاعت کہتے ہیں ۔

    اور اسی شجاعت سے کرم ، بزرگ ہمتی ، دلیری ، حلم ، بردباری ،آہستہ روی غصہ کا ضبط اور اسی قسم کے دوسرے اوصاف پیدا ہوتے ہیں ۔

    اور تہور ( غضب ) سے شیخی تکبر اور غرور ، ڈھیٹ پن اور خطرناک کاموں میں دخل اندازی اور اس جیسی بری صفات پیدا ہوتی ہیں ۔

    اور جب یہ تفریط کی صورت میں ہوتی ہے تو اس سے بےبسی ، بےچارگی ، رونا دھونا ، ، دوسروں کی خوشامد کرنا اور مذلت کے اوصاف پیدا ہوتے ہیں۔

    امام غزالی کیمیائے سعادت صفحہ 411


    Last edited by sarfraz_qamar; 25-07-2013 at 01:01 AM.





    تیری انگلیاں میرے جسم میںیونہی لمس بن کے گڑی رہیں
    کف کوزه گر میری مان لےمجھے چاک سے نہ اتارنا

  5. #5
    Join Date
    Apr 2010
    Location
    k, s, a
    Posts
    14,631
    Mentioned
    215 Post(s)
    Tagged
    10286 Thread(s)
    Thanked
    84
    Rep Power
    1503265

    Default re: Imam Ghazali Chemiya e Saadat Safah 411

    Umda hai

  6. #6
    Join Date
    Jan 2011
    Location
    pakistan
    Posts
    9,092
    Mentioned
    95 Post(s)
    Tagged
    8378 Thread(s)
    Thanked
    2
    Rep Power
    429513

    Default re: Imam Ghazali Chemiya e Saadat Safah 411

    nice


  7. #7
    *jamshed*'s Avatar
    *jamshed* is offline کچھ یادیں ،کچھ باتیں
    Join Date
    Oct 2010
    Location
    every heart
    Posts
    14,586
    Mentioned
    138 Post(s)
    Tagged
    8346 Thread(s)
    Thanked
    4
    Rep Power
    21474858

    Default re: Imam Ghazali Chemiya e Saadat Safah 411

    Umda

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •