Results 1 to 6 of 6

Thread: مظلوم اونٹ کی کہانی

  1. #1
    *jamshed*'s Avatar
    *jamshed* is offline کچھ یادیں ،کچھ باتیں
    Join Date
    Oct 2010
    Location
    every heart
    Posts
    14,586
    Mentioned
    138 Post(s)
    Tagged
    8346 Thread(s)
    Thanked
    4
    Rep Power
    21474858

    Default مظلوم اونٹ کی کہانی

    مظلوم اونٹ کی کہانی


    سندھ کے ریگستانی علاقے میں ایک چھوٹا سا گاؤں تھا.یہ کہانی اس گاؤں کے ایک لڑکے کی ہے جس کانام خدا بخش تھا. سب گاؤں والے خدابخش کو بخشو کے نام سےپکارتے تھے
    یہ گاؤں صحرائے تھر کے ساتھ لگتا تھا جس کی وجہ سے گاؤں والوں کے لئے پینے کا پانی حاصل کرنا ایک بہت بڑا مسئلہ تھا. گاؤں کے لوگ اپنی زندگیوں کا قیمتی وقت پانی کی تلاش میں گزار دیتے تھے، کبھی سال میں ایک آدھ بار بارش ہو جاتی تھی اور پانی گڑھوں یا تالابوں کی شکل میں جمع ہو جاتا تو گاؤں والے وہاں سے پانی حاصل کرتے. گاؤں میں کئی جگہوں پر سینکڑوں فٹ گہرے کنویں تھے. گاؤں والوں کو کئی کئی میل کا سفر طے کر کے پانی لینے جانا پڑتا. ان ساری مشکلات میں وہ اونٹوں کی مدد لیتے تھے کینونکہ صحرا میں ایک جگہ سے دوسری جگہ سفر کرنا اونٹوں کے بغیر ممکن نہیں اس لئے گاؤں کے اکثر لوگوں کے پاس اونٹ تھے
    بخشو جس کے بارے میں آپ نے اوپر پڑھا اُس کے باپ نے بھی دو اونٹ پال رکھے تھے. یہ اونٹ ان کے مختصر سے کنبے کا حصہ بن چکے تھے. بخشو کے باپ کو ان اونٹوں سے بہت پیارتھا. وہ انکو اپنے ہاتھوں سے دانہ ڈالتا اور تو اور بخشو کی ماں بھی ان کا بہت خیال رکھتی تھی


    بخشو کی عادت اپنے والدین سے بالکل مختلف تھی. اس کا دماغ ہر وقت شرارتوں میں لگا رہتا. وہ اکثر ان اونٹوں کے چارے میں مٹی ملا دیتا، کبھی ان کے پینے کے پانی میں صابن گھول دیتا، بخشو کا باپ اونٹوں کو چرانے کے لئے جنگل میں چھوڑتا اور بخشو کو انکی نگرانی پر لگا دیتا. یہ موقع بخشو کے لئے سنہری موقع ہوتا تھا. وہ اس موقع سے خوب فائدہ اُٹھاتا. بخشو چھوٹے چھوٹے پتھر جمع کر کے کسی درخت پر چڑھ جاتا اور نشانہ لے لے کرمارتا، بیچارے اونٹ درد سے بلبلاتے اور ان کی درد بخشو کو بہت مزہ دیتی تھی. بعض اوقات تو خارش کی وجہ سے اونٹوں کے جسم پر کہیں کہیں زخم بھی ہو جاتے تھے، بخشو غلیل سے انہی زخموں پر نشانہ لگاتا، اونٹ اُچھل کر اِدھراُدھر بھاگتے تو بخشو کو بڑا مزہ آتا
    بخشو کے چچا نے جب اُسے ایسی حرکتیں کرتے ہوئے دیکھا تو اُس کو اس سب سے منع کیا اور اُسے ہدایت کی کہ یہ بے زبان جانوربد دُعائیں دیتے ہیں، ان کی بد دُعا لگ جاتی ہے پر بخشو نے اس نصیحت پے کوئی کان نا دھرا اور اپنی ہرکتوں سے باز نہ آیا. ایک دن گاؤں کے ایک بزرگ نے بخشو کی یہ حرکت دیکھی تو اسے سمجھاتے ہوئے کہا بابا کینہ شتر اونٹ کی دشمنی سے ڈر، جب یہ بے زبان جانور اپنا غصّہ نکالنے پر آتا ہے تو جان لے کر ہی چھوڑتا ہے


    بخشو کے گاؤں میں کوئی مدرسہ نہیں تھا، اس کا سارا دن انہی شرارتوں میں گزر جاتا تھا، اس کے ہم عمر بھی اسی کی طرح جنگل میں اونٹ چراتے تھے اور شرارتیں کرتے تھے، ایک دن مغرب کے وقت یہ لڑکے اونٹ چرا کر گاؤں کو لَوٹ کر آ رہے تھے کہ ان کے کانوں میں یہ بات پڑی کہ گاؤں کی مسجد میں نئے امام صاحب آئے ہیں، بچے صرف انکو دیکھنے کے شوق میں نماز پڑھنے چلے گئے، دیکھا تو ایک سفید عمامہ والے باوقار مولانا صاحب مصلح پر تھے
    مولانا صاحب نے بڑے اچھی آواز میں قرات کی، نمازیوں کو بڑا مزہ آیا، نماز کے بعد مولوی صاحب نے اعلان کیا کہ کل سے یہاں بچوں کے لئے صبح قرآن مجید کی تعلیم کا آغاز ہو گا، نمازی حضرات اپنے اپنے بچوں کو داخل کرائیں تا کہ ان کے بچے قرآن مجید کی تعلیم سے محروم نہ رہیں، عشاء کی نماز کے بعد قرآن مجید کا درس ہوا کرے گا
    اگلے دن بخشو اور اس کے کئی دوستوں کو امام صاحب کے پاس پڑھنے کے لئے بٹھا دیا گیا، انکو تو الف با بھی نہیں آتی تھی، امام صاحب نے انہیں نورانی قاعدا شروع کروا دیا، رات کو مولوی صاحب درسِِ قرآن میں اچھی اچھی باتیں بتاتے جس سے لوگوں کی اصلاح ہونے لگی، ایک دن مولوی صاحب نے بخشو اور اس کے دوستوں کو جنگل میں اونٹوں کے ساتھ شرارتیں کرتے ہوئے دیکھ لیا، اس وقت تو کچھ نہ بولے مگر رات کو درسِ قرآن میں انہوں نے موقع کی مناسبت سے یہ واقع سنایا
    ایک دن حضور نبی کریم صلی اللہ عليہ وسلّم نے پوچھا اس اونٹ کا مالک کون ہے؟ ايک انصاری صحابی نے آکر عرض کيا يہ ميرا اونٹ ہے۔
    آپ صلی اللہ عليہ وسلّم نے فرمايا جس اللہ نے تمہيں اس کا مالک بنايا ہے، تم اس اونٹ کے بارے ميں اللہ سے نہيں ڈرتے، يہ اونٹ تمہاری شکايات کر رہا ہے، تم اس کو بھوکا رکھتے ھو اس سے اسکی طاقت سے زيادہ کام ليتے ہو۔
    اس کے بعد وہ انصاری صحابی اونٹ کا زيادہ خيال رکھنے لگے اس کو چارہ بھی زيادہ ديتے اور اس کو آرام کا موقع بھی ديتے۔امام صاحب سے يہ واقع سن کر بخشو اور اس کے دوستوں کو بہت اثرہوا اس لئے کہ روزانہ اللہ اور اس کے پيارے حضور نبی صلی اللہ عليہ وسلّم کی باتيں سن سن کر انکے دلوں ميں اللہ اور پيارے حضور نبی صلی اللہ عليہ وسلّم کی محبت دل ميں بيٹھ گئی تھی
    بخشو اور اس کے دوستوں نے اس کے بعد اونٹوں کوکبھی نہيں تنگ کيا
    تو پیارے دوستو اپنےآپ بھی وعدہ کر لو کہ آج کے بعد کسی بے زبان جانور کو تنگ نہیں کرو گے اور انکا بھی اتنا ہی خیال رکھو گے جتنا اپنا رکھتے ہو

  2. #2
    Join Date
    Feb 2008
    Location
    Islamabad, UK
    Posts
    88,506
    Mentioned
    1028 Post(s)
    Tagged
    9706 Thread(s)
    Thanked
    603
    Rep Power
    21474934

    Default Re: مظلوم اونٹ کی کہانی

    hmm very nice thread n story

    par dana kon dalta hai oontho ko

  3. #3
    Join Date
    Apr 2010
    Location
    k, s, a
    Posts
    14,631
    Mentioned
    215 Post(s)
    Tagged
    10286 Thread(s)
    Thanked
    84
    Rep Power
    1503265

    Default Re: مظلوم اونٹ کی کہانی

    Umda sharing

  4. #4
    Join Date
    Oct 2013
    Location
    Karachi
    Age
    29
    Posts
    236
    Mentioned
    1 Post(s)
    Tagged
    1329 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    214753

    Default Re: مظلوم اونٹ کی کہانی

    nice story
    thanks for sharing
    Disco Deewanay

  5. #5
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Hijr
    Posts
    152,763
    Mentioned
    104 Post(s)
    Tagged
    8577 Thread(s)
    Thanked
    80
    Rep Power
    21474998

    Default

    پھر یوں ہوا کے درد مجھے راس آ گیا

  6. #6
    Join Date
    Dec 2009
    Location
    SAb Kya Dil Mein
    Posts
    11,928
    Mentioned
    79 Post(s)
    Tagged
    2306 Thread(s)
    Thanked
    24
    Rep Power
    21474855

    Default

    bu - مظلوم اونٹ کی کہانی


Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •