Results 1 to 3 of 3

Thread: Mere Bas Mai Ho Tou Kabhi Khin

  1. #1
    *jamshed*'s Avatar
    *jamshed* is offline کچھ یادیں ،کچھ باتیں
    Join Date
    Oct 2010
    Location
    every heart
    Posts
    14,586
    Mentioned
    138 Post(s)
    Tagged
    8346 Thread(s)
    Thanked
    4
    Rep Power
    21474858

    Default Mere Bas Mai Ho Tou Kabhi Khin

    مِرے بس میں ہو تو کبھی کہیں
    کوئی شہر ایسا بساؤں میں
    جہاں فاختاؤں کی پھڑپھڑاہٹ
    سے نغمہ زارِ حیات میں
    جھنجھناتی سانسوں کی جھانجھریں
    جو چھنک اٹھیں
    تو دھنک کے رنگوں میں بھیگ جائیں حواس تک!

    جہاں چاند، ماند نہ ہو کبھی
    جہاں چاندنی کی ردا بنے
    مِری بانجھ دھرتی کے باسیوں کا لباس تک !!

    جہاں صرف حکمِ یقیں چلے !
    جہاں بے نشاں ہو قیاس تک !!
    جہاں آدمی کے نطق و لب پہ
    نہ شہرِ یار کا خوف ہو
    جہاں سرسرائے نہ آدمی کی رگوں میں کوئی ہراس تک !!!

    جہاں وہم ہو نہ دلوں میں وہم کا سہم ہو
    جہاں "سچ" کو "سچ" سے ہو واسطہ
    جہاں جگنوؤں کو ہوا دکھاتی ہو راستہ
    جہاں خوشبوؤں سے بدلتی رُت کو حسد نہ ہو !
    جہاں پستیوں سے بلندیوں کو بھی کَد نہ ہو !!

    جہاں خواب آنکھوں میں جگمگائیں
    تو جسم و جاں کے سبھی دریچوں میں تیرگی کا گزر نہ ہو

    کوئی رات ایسی بسر نہ ہو
    کہ بشر کو اپنی خبر نہ ہو
    جہاں داغ داغ سحر نہ ہو
    جہاں کشتیاں ہوں رواں دواں
    تو سمندروں میں بھنور نہ ہو
    جہاں برگ و بار سے اجنبی
    کوئی شاخ کوئی شجر نہ ہو
    جہاں چہچہاتے ہوئے پرندوں
    کو بارشوں کے عذاب کا ڈر نہ ہو !!

    مِرے بس میں ہو تو کبھی کہیں
    کوئی شہر ایسا بساؤں میں
    جہاں تیری میری محبتوں پہ
    غمِ جہاں کا اثر نہ ہو

    رہ و رسمِ دنیا کی بندشیں
    غمِ ذات کے سبھی ذائقے
    سمِ کائنات کی تلخیاں
    کسی آنکھ کو بھی نہ چھو سکیں
    جہاں میری سانس کی تازگی
    تری چاہتوں کے کنول میں ہو
    تیرا حسن میری غزل میں ہو
    جہاں کائنات کی اِک صدی
    شب و روز کے کسی پَل میں ہو

    جہاں نوحہ غمِ زندگی
    مری ہچکیوں سے عیاں نہ ہو
    جہاں لوحِ خاک پہ عمر بھر
    کسی بے گناہ کے خون کا
    کوئی داغ، کوئی نشاں نہ ہو !!

    کوئی شہر ایسا کبھی۔۔۔۔۔۔۔کہیں!!
    جہاں دھوپ چھاؤں گلے ملیں
    جہاں بانجھ رُت میں بھی گُل کھلیں
    جہاں چاک ہو کوئی پیرہن
    نہ سخنوروں کی زباں کٹے
    نہ ضمیرِ لوح و قلم ہو صیدِ ستمگراں !
    نہ گداگری کا رواج ہو
    نہ سپاہ و لشکرِ اہلِ حرف کے لَب سلیں !!

    کوئی شہر ایسا کبھی۔۔۔۔۔۔کہیں!!
    جہاں چاہتوں کے ہجوم میں
    کبھی گیت امن کے گاؤں۔۔۔۔۔۔میں !
    جہاں زندگی کا رجز پڑھوں
    جہاں بے خلل گنگناؤں میں !!
    جہاں موج موج کی اوٹ میں
    تو کرن بنے، مسکراؤں میں !!!

    مرے بس میں ہو تو کبھی کہیں
    کوئی شہر ایسا بساؤں میں

    کہاں اتنی سزائیں تھیں بھلا اس زندگانی میں
    ہزاروں گھر ہوئے روشن جو میرا دل جلا محسنؔ


  2. #2
    Join Date
    Jan 2011
    Location
    pakistan
    Posts
    9,092
    Mentioned
    95 Post(s)
    Tagged
    8378 Thread(s)
    Thanked
    2
    Rep Power
    429513

    Default Re: مِرے بس میں ہو تو کبھی کہیں

    umda


  3. #3
    Join Date
    Feb 2009
    Location
    City Of Light
    Posts
    26,767
    Mentioned
    144 Post(s)
    Tagged
    10310 Thread(s)
    Thanked
    5
    Rep Power
    21474871

    Default Re: مِرے بس میں ہو تو کبھی کہیں

    buhat khub



    3297731y763i7owcz zps9ed156a3 - Mere Bas Mai Ho Tou Kabhi Khin

    MAY OUR COUNTRY PROGRESS IN EVERYWHERE AND IN EVERYTHING SO THAT THE WHOLE WORLD SHOULD HAVE PROUD ON US
    PAKISTAN ZINDABAD











Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •