Results 1 to 5 of 5

Thread: یو ٹیوب: پاکستان میں مجوزہ قانون پر خدشات

  1. #1
    Join Date
    Jun 2010
    Location
    Jatoi
    Posts
    59,925
    Mentioned
    201 Post(s)
    Tagged
    9827 Thread(s)
    Thanked
    6
    Rep Power
    21474903

    Default یو ٹیوب: پاکستان میں مجوزہ قانون پر خدشات

    پاکستان میں انٹرنیٹ کے صارفین کے حقوق کے لیے سرگرم کارکنان نے ان اطلاعات پر خدشات کا اظہار کیا ہے کہ حکومت ملک میں یو ٹیوب کھولنے کے ضمن میں اس ویب سائٹ کی مالک کمپنی گوگل کے مطالبے پر ایسا آرڈیننس متعارف کروانے والی ہے جس کے تحت کمپنی کو صارفین کی جانب سے شائع کردہ مواد کے لیے ذمہ دار نہیں ٹھہرایا جا سکے گا۔کارکنوں کا کہنا ہے کہ اس آرڈیننس کی وجہ سے حکومت کو ملک میں انٹرنیٹ مواد پر کنٹرول حاصل ہو جائے گا۔

    یو ٹیوب پر عائد پابندی اٹھائی جائے یا نہیں اور اگر اٹھائی جائے تو اس سلسلے میں کیا ’حفاظتی اقدامات‘ کیے جائیں، حکومتِ پاکستان چاہے وہ پیپلز پارٹی کی ہو یا مسلم لیگ نون کی، ڈیڑھ سال سے اس بات پر فیصلہ نہیں کر پا رہی۔حال ہی میں اخبارات میں یہ خبر شائع ہوئی کہ وفاقی وزیر انوشے رحمان نے ایوانِ بالا کی سٹینڈنگ کمیٹی برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی کو بتایا ہے کہ گوگل نے یو ٹیوب کی مقامی شکل یعنی اس کا ’لوکلائزڈ ورژن‘ متعارف کروانے کے لیے’انٹرمیڈیئری لائبیلٹی پروٹیکشن‘ کا مطالبہ کیا ہے۔اس کا مطلب یہ ہے کہ گوگل صارفین کے شائع کردہ مواد کے لیے ذمہ دار نہیں ہوگی اور دوسرے لفظوں میں، اس قانون کے تحت کمپنی کو تحفظ فراہم کیا جائے گا، صارفین کو نہیں۔ اس قانون کا یہ بھی مطلب ہو گا کہ گوگل کو پاکستان میں بطور کمپنی رجسٹر ہونا ہوگا اور مقامی قوانین کے تحت کام کرنا ہوگا۔

    اس قانون کی منظوری پر یو ٹیوب کا جو ورژن پاکستان میں دستیاب ہوگا اس پر موجود مواد تک رسائی روکنے کے لیے حکومت کو پوری ویب سائٹ بند کرنے کی ضرورت نہیں پڑے گی اور کمپنی صرف متنازع مواد کی ملک میں دستیابی ناممکن بنا دے گی۔انٹرنیٹ کے صارفین کے حقوق کے لیے کام کرنے والی کارکن ثنا سلیم کہتی ہیں کہ یہ قانون صرف کمپنی یعنی گوگل کی ضروریات کے مطابق بنتا نظر آرہا ہے اور عام صارف کو نظر انداز کیا جا رہا ہے: ’قوانین لوگوں کی حفاظت کے لیے بنتے ہیں۔ اس لیے نہیں کہ اگر ایک کمپنی کو پاکستان میں کاروبار کرنے کے لیے خاص قانون کی ضرورت ہو، تو اسے جلدی میں بنائیں۔ اور وہ بھی ایسا قانون جو لوگوں کو براہِ راست متاثر کرے۔‘انھوں نے کہا کہ ایسا آرڈیننس بنانے سے قبل سول سوسائٹی اور عام لوگوں سے بھی مشاورت کرنا ضروری ہے اور انھیں بتایا جانا چاہیے کہ اس کا مقصد کیا ہے۔’ویب سائٹس پر پابندی لگانے کا عمل غیر شفاف ہے۔ ہمیں بتایا نہیں جاتا کہ آخر کیوں پابندی لگائی جاتی ہے اور اگر بتایا جاتا ہے تو اسلام کی عظمت یا قومی مفاد کی دلیل دی جاتی ہے، لیکن مزید تفصیل نہیں۔ اسی قومی سلامتی کی وجہ سے بلوچ ویب سائٹس کو بھی بند کیا گیا ہے۔‘ثنا سلیم کہتی ہیں کہ اس آرڈیننس کی وجہ سے حکومتِ پاکستان کو انٹرنیٹ پر دستیاب مواد پر مزید کنٹرول حاصل ہوگا جبکہ اس سلسلے میں ابھی ملک میں پہلے سے موجود قوانین کی وضاحت کی بھی ضرورت ہے۔


    انھوں نے کہا کہ انٹرنیٹ سے متعلق پاکستان الیکٹرونک کرائم آرڈیننس کی مدت ختم ہو گئی تھی اور اسے پارلیمان میں دوبارہ پیش کیا جا رہا ہے اور اس کے علاوہ پاکستان پروٹیکشن آرڈیننس میں بھی انٹرنیٹ سے متعلق شقیں موجود ہیں۔’اتنے آرڈیننسز کی کیا ضرورت ہے؟ ایسا لگتا ہے کہ سول سوسائٹی سے مشاورت کی ہی نہیں گئی اور نہ ہی اراکینِ پارلیمان نے آپس میں مشاورت کی ہے۔‘ادھر حکومتی جماعت پاکستان مسلم لیگ کے رہنما اور سابق وزیرِ انفارمیشن ٹیکنالوجی اویس احمد خان لغاری کا کہنا ہے کہ یو ٹیوب پر کنٹرول انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے۔بی بی سی سے بات کرتے ہوئے انھوں نے کہا ’یو ٹیوب، سرچ انجن یا معلومات کے کسی بھی ذریعے پر کنٹرول بنیادی انسانی حقوق کے خلاف ہے اور میں سوچ بھی نہیں سکتا ہے کہ پاکستان مسلم لیگ نون جیسی مثبت سوچ کی حامل جماعت ایسا کر سکتی ہے۔‘ان کا کہنا ہے کہ یو ٹیوب پر مخصوص توہین آمیز ویڈیوز کو فلٹر لگا کر بند کرنا چاہیے اور اگر یہ ابھی تک نہیں ہو سکا تو اس میں متعلقہ نگراں ادارے پاکستان ٹیلی کمیونیکیش اتھارٹی کی نااہلی ہے۔

    یں نے پارلیمان میں اس معاملے کو اٹھایا تھا اور متعلقہ وزیر صاحبہ نے اس بات کی ضمانت دی تھی کہ فلٹر لگا کر یوٹیوب کو جلد از جلد کھولا جائے گا۔پی ٹی اے کی نااہلی کی وجہ سے حکومت کی نیت پر تنقید ہو رہی ہے۔‘تاہم ذرائع کا کہنا ہے کہ حکومتِ پاکستان نے فلٹر استعمال کرنے کی کوشش کی تھی تاہم یہ تجربہ نا کام رہا اور اسی لے آرڈیننس تک بات پہنچی ہے۔ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ کوئی ایک فرد پرتشدد ردِ عمل کے خوف سے یوٹیوب کھلوانے کا ذمہ دار نہیں بننا چاہتا اور یہی وجہ ہے کہ حکومت فیصلہ کرنے میں پس و پیش سے کام لے رہی ہے۔ایک ایسی ویب سائٹ جسے دنیا بھر میں دیکھا جاتا ہے، پاکستان میں کیوں بند ہے اور کب تک رہے گی۔ یو ٹیوب پر پابندی لگنے کے ڈیڑھ سال بعد جواب مشکل سے ملتا ہے۔





    تیری انگلیاں میرے جسم میںیونہی لمس بن کے گڑی رہیں
    کف کوزه گر میری مان لےمجھے چاک سے نہ اتارنا

  2. #2
    Hidden words's Avatar
    Hidden words is offline "-•(-• sтαү мιηε •-)•-"
    Join Date
    Nov 2011
    Location
    Kisi ki Ankhon Aur Dil Mein .......:P
    Posts
    56,915
    Mentioned
    322 Post(s)
    Tagged
    10949 Thread(s)
    Thanked
    4
    Rep Power
    21474899

    Default

    new updates share krnay k liye Thank u /up
    suno hworiginal - یو ٹیوب: پاکستان میں مجوزہ قانون پر خدشات
    575280tvjrzkx7ho zps19409030 - یو ٹیوب: پاکستان میں مجوزہ قانون پر خدشاتღ∞ ι ωιll αlωαуѕ ¢нσσѕє уσυ ∞ღ 575280tvjrzkx7ho zps19409030 - یو ٹیوب: پاکستان میں مجوزہ قانون پر خدشات

  3. #3
    Join Date
    Apr 2010
    Location
    k, s, a
    Posts
    14,631
    Mentioned
    215 Post(s)
    Tagged
    10286 Thread(s)
    Thanked
    84
    Rep Power
    1503265

    Default

    to hum kia kare

  4. #4
    Join Date
    May 2013
    Location
    pakistan
    Posts
    5,720
    Mentioned
    128 Post(s)
    Tagged
    7184 Thread(s)
    Thanked
    6
    Rep Power
    644255

    Default

    Ye b theek hai per ghalat cheez un k liye ghalat hoti hai Jo ghalat dekhna chahen.
    badakhuwar2 zps199b7191 - یو ٹیوب: پاکستان میں مجوزہ قانون پر خدشات

  5. #5
    *jamshed*'s Avatar
    *jamshed* is offline کچھ یادیں ،کچھ باتیں
    Join Date
    Oct 2010
    Location
    every heart
    Posts
    14,586
    Mentioned
    138 Post(s)
    Tagged
    8346 Thread(s)
    Thanked
    4
    Rep Power
    21474858

    Default

    thanx for updates
    کہاں اتنی سزائیں تھیں بھلا اس زندگانی میں
    ہزاروں گھر ہوئے روشن جو میرا دل جلا محسنؔ


Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •