Results 1 to 3 of 3

Thread: R iftekhar araf

  1. #1
    Join Date
    Jun 2010
    Location
    Jatoi
    Posts
    59,925
    Mentioned
    201 Post(s)
    Tagged
    9827 Thread(s)
    Thanked
    6
    Rep Power
    21474903

    Default R iftekhar araf


    آج نامور شاعر افتخار عارف کا یوم ولادت ہے ۔افتخار عارف 21 مارچ، 1943ء کو لکھنو میں پیدا ہوئے۔ قیام پاکستان کے بعد ان کا خاندان کراچی منتقل ہوگیا ۔ لکھنو یونیورسٹی سے ایم۔ اے کیا۔ اپنی علمی زندگی کا آغاز ریڈیو پاکستان میں بحیثیت نیوز کاسٹر کیا۔ پھر پی ٹی وی سے منسلک ہوگئے۔ اس دور میں ان کا پروگرام کسوٹی بہت زیادہ مقبول ہوا۔ بی سی سی آئی بینک کے تعاون سے چلنے والے ادارے ’’اردو مرکز‘‘ کو جوائن کرنے کے بعد آپ انگلینڈ تشریف لے گئے۔ انگلینڈ سے واپس آنے کے بعد مقتدرہ قومی زبان کے چیرمین بنے۔اس کے بعد اکادمی ادبیات کے چیرمین کی حیثیت سے خدمات سرانجام دیتے رہے۔ جبکہ نومبر 2008 سے مقتدرہ قومی زبان کے چیرمین کی حیثیت سے خدمات سرانجام دے رہے ہیں۔
    افتخار عارف کا اپنی نسل کے شعراء میں سنجیدہ ترین شاعر ہیں۔ وہ اپنے مواد اور فن دونوں میں ایک ایسی پختگی کا اظہار کرتے ہیں جو دوسروں میں نایاب نہیں تو کمیاب ضرور ہے۔ وہ عام شعراءکی طرح تجربہ کے کسی جزوی اظہار پر قناعت نہیں کرتے بلکہ اپنا پورا تجربہ لکھنے کی کوشش کرتے ہیں۔ اور اس کی نزاکتوں اور پیچیدگیوں کے ساتھ اسے سمیٹتے ہیں۔اپنے مواد پر ان کی گرفت حیرت انگیز حد تک مضبوط ہے اور یہ سب باتیں مل کر ظاہر کرتی ہیں کہ افتخار عارف کی شاعری ایک ایسے شخص کی شاعری ہے جو سوچنا ، محسوس کرنا اور بولنا جانتا ہے جب کہ اس کے ہمعصروں میں بیشتر کا المیہ یہ ہے کہ یا تو وہ سوچ نہیں سکتے یا وہ محسوس نہیں کر سکتے اورسوچ اور احساس سے کام لے سکتے ہیں تو بولنے کی قدرت نہیں رکھتے۔ ان کی ان خصوصیات کی بناء پر جب میں ان کے کلام کو ہم دیکھتے ہیں تو یہ احساس کئے بغیر نہیں رہ سکتے کہ افتخار عارف کی آواز جدید اردو شاعری کی ایک بہت زندہ اور توانا آواز ہے۔ ایک ایسی آواز جو ہمارے دل و دماغ دونوں کو بیک وقت اپنی طرف کھینچتی ہے اور ہمیں ایک ایسی آسودگی بخشتی ہے جو عارف کے سوا شاید ہی کسی ایک آدھ شاعر میں مل سکے۔

    نمونہ کلام

    وحشت کا اثر خواب کی تعبیر میں ہوتا
    اک جاگنے والا مری تقدیر میں ہوتا

    اک عالم خوبی ہے میّسر، مگر اے کاش
    اس گُل کاعلاقہ، مری جاگیر میں ہوتا

    اُس آہوئے رم خوردہ وخوش چشْم کی خاطر
    اک حلقۂ خوشبو مری زنجیر میں ہوتا

    مہتاب میں اک چاند سی صورت نظرآتی
    نسبت کا شرف سِلسِلۂ میر میں ہوتا

    مرتا بھی جو اُس پر تو اُسے مار کے رکھتا
    غالب کا چلن عشق کی تقصیر میں ہوتا

    اک قامتِ زیبا کا یہ دعویٰ ہے، کہ وہ ہے
    ہوتا تو مرے حرفِ گرہ گیر میں ہوتا

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


    بکھرجائیں گے کیا ہم جب تماشا ختم ہوگا
    مِرے معبود! آخر کب تماشا ختم ہوگا

    چراغِ حُجرۂ درویش کی بُجھتی ہوئی لو
    ہوا سے کہہ گئی ہے اب تماشا ختم ہوگا

    کہانی آپ اُلجھی ہے، کہ اُلجھائی گئی ہے
    یہ عقدہ تب کُھلے گا جب تماشا ختم ہوگا

    یہ سب کٹھ پُتلیاں رقصاں رہیں گی رات کی رات
    سحرسے پہلے پہلے، سب تماشا ختم ہوگا

    تماشا کرنے والوں کو خبردی جا چُکی ہے
    کہ پردہ کب گرے گا، کب تماشا ختم ہوگا

    دلِ ما مطمئن، ایسا بھی کیا مایوس رہنا
    جو خلق اُٹھی تو سب کرتب تماشا ختم ہوگا

    افتخارعارف

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


    فضا میں رنگ نہ ہوں آنکھ میں نمی بھی نہ ہو
    وہ حرف کیا کہ رقم ہو تو روشنی بھی نہ ہو

    وہ کیا بہار کہ پیوند خاک ہو کہ رہے
    کشاکش روش و رنگ سے بری بھی نہ ہو

    کہاں ہے اور خزانہ، بجز خزانۂ خواب
    لٹانے والا لٹاتا رہے، کمی بھی نہ ہو

    یہی ہوا، یہی بے مہر و بے لحاظ ہوا
    یہی نہ ہو تو چراغوں میں روشنی بھی نہ ہو

    ملے تو مِل لیے، بچھڑے تو یاد بھی نہ رہے
    تعلقات میں ایسی روا روی بھی نہ ہو

    ** افتخار عارف **
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


    "ابھی کچھ دن لگیں گے"

    ابھی کچھ دن لگیں گے

    دل ایسے شہر کے پامال ہو جانے کا منظر بھولنے میں

    ابھی کچھ دن لگیں گے

    جہان رنگ کے سارے خس و خاشاک

    سب سرو صنوبر بھولنے میں

    ابھی کچھ دن لگیں گے

    تھکے ہارے ہوئے خوابوں کے ساحل پر

    کہیں امید کا چھوٹا سا اک گھر بنتے بنتے رہ گیا ہے

    وہ اک گھر بھولنے میں

    ابھی کچھ دن لگیں گے

    مگر اب دن ہی کتنے رہ گیۓ ہیں

    کسی دن دل کی لوح منتظر پر اچانک

    رات اترے گی

    میری بے نو آنکھوں کے خزانے میں چھپے

    ھر خواب کی تکمیل کر دے گی

    مجھے بھی خواب میں تبدیل کر دے گی

    اک ایسا خواب جس کا دیکھنا ممکن نہیں تھا

    اک ایسا خواب جس کے دامن صد چاک میں

    کوئی مبارک کوئی روشن دن نہیں تھا

    ابھی کچھ دن لگیں گے

    افتخار عارف




    Last edited by Hidden words; 08-05-2014 at 05:06 AM.





    تیری انگلیاں میرے جسم میںیونہی لمس بن کے گڑی رہیں
    کف کوزه گر میری مان لےمجھے چاک سے نہ اتارنا

  2. #2
    Join Date
    Dec 2009
    Location
    SAb Kya Dil Mein
    Posts
    11,928
    Mentioned
    79 Post(s)
    Tagged
    2306 Thread(s)
    Thanked
    24
    Rep Power
    21474855

    Default

    zabardast


  3. #3
    Join Date
    Sep 2013
    Location
    Karachi, Pakistan
    Posts
    7,416
    Mentioned
    504 Post(s)
    Tagged
    5438 Thread(s)
    Thanked
    359
    Rep Power
    874041

    Default

    Saalgira Mubarak ho Janab Ifrikhaar Aarif sahab, I am also a big fan of this poetry..

    Ek ghazal meri taraf say

    Azaab Yeh Bhi Kisi Aur Par Nahin Aaya
    Ke Ek Umr Chale Aur Ghar Nahin Aaya

    Us Ek Khwaab Ki Hasrat Mein Jal Bujhi Aankhen
    Wo Ek Khwaab Ke Ab Tak Nazer Nahin Aaya

    Karen To Kis Se Karen Naa-Rasaiyon Ka Gila
    Safar Tamaam Huaa Hum-Safar Nahin Aaya

    Dilon Ki Baat Badan Ki Zabaan Se Kah Dete
    Ye Chaahte The Magar Dil Idhar Nahin Aaya

    Ajeeb Hi Tha Mere Daur-E-Gumrahi Ka Rafiq
    Bichhad Gaya To Kabhi Laut Kar Nahin Aaya

    Harim-E-Lafz-O-Ma’aani Se Nisbaten Bhi Rahin
    Magar Saliqa-E-Arz-E-Hunar Nahin Aaya!!!

    THanks Sarfraz.

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •