Results 1 to 3 of 3

Thread: Insan Ka Wajood

  1. #1
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Hijr
    Posts
    152,763
    Mentioned
    104 Post(s)
    Tagged
    8577 Thread(s)
    Thanked
    80
    Rep Power
    21474998

    candel Insan Ka Wajood

    انسان کا وجود ، خدا کے وجود کا ثبوت
    وسیع کائنات میں صرف انسان ہے جو خدا کے وجود کا انکار کرتا ہے - حالانکہ انسان کا خود اپنا وجود ، خدا کے وجود کا سب سے بڑا ثبوت ہے -

    اگر انسان جیسی ایک ہستی یہاں موجود ہے تو خدا بهی یقینی طور پر موجود ہے - انسان کے اندر وه تمام صفتیں ناقص طور موجود ہیں جو خدا کے اندر کامل طور پر موجود ہیں -

    اگر ناقص ہستی کا وجود ہے تو کامل ہستی کا بهی یقینی طور پر وجود ہے - ایک کو ماننے کے بعد دوسرے کو نہ ماننا ایک ایسا منطقی تضاد ہے جس کا تحمل کو ئی صاحب عقل نہیں کر سکتا
    ڈکارٹ (Rene Descartes) مشہور فرنچ فلسفی ہے وه 1596 میں پیدا هوا اور 1650 میں اس کی وفات هوئی - اس کے سامنے یہ سوال تها کہ انسان اگر موجود ہے تو اس کی موجودگی کا عقلی ثبوت کیا ہے - لمبے غور فکر کے بعد اس نے اس سوال کا جواب ان الفاظ میں دیا ہے

    میں سوچتا هوں اس لئے میں هوں -ڈیکارٹ کا یہ جواب منطقی اعتبار سے ایک محکم جواب ہے - مگر یہ منطق جس سے انسان کا وجود ثابت هوتا ہے ، وه اس سے بهی زیاده بڑی بات کو ثابت کر رہی ہے ، اور وه ہے خدا کے وجود کا عقلی ثبوت -

    اس منطقی اصول کی روشنی میں یہ کہنا بالکل درست هو گا کہ سوچ کا وجود ہے ، اس لئے خدا کا بهی وجود ہے
    سوچ ایک مجرد چیز ہے - جو لوگ خدا کا انکار کرتے ہیں ، وه اسی لیے خدا کا انکار کرتے ہیں کہ خدا انہیں ایک مجرد تصور معلوم هوتا ہے ، اور مجرد تصور کی موجودگی ان کے لیے ناقابل فہم ہے ، یعنی ایک ایسی چیز کو ماننا جس کا کوئی مادی وجود نہ هو -

    لیکن ہر انسان سوچنے والی مخلوق ہے - خود اپنے تجربے کی بنیاد پر ہر آدمی سوچ کے وجود کو مانتا ہے - حالانکہ سوچ مکمل طور پر ایک مجرد تصور ہے ، یعنی ایک ایسی چیز جس کا کوئی مادی وجود نہیں
    اب اگر انسان ایک قسم کے مجرد تصور کے وجود کو مانتا ہے تو اس پر لازم آ جاتا ہے کہ وه دوسری قسم کے مجرد تصور کے وجود کو بهی تسلیم کرے - یہ بلاشبہہ خدا کے وجود کا ایک ایسا ثبوت ہے جس کا تجربہ ہر آدمی کرتا ہے اور جس کی صحت کو ہر آدمی بلا اختلاف مانتا ہے -

    اگر سوچ کے وجود کا انکار کر دیا جائے تو اس کے بعد یقینی طور پر انسان کے وجود کا اور خود اپنے وجود کا انکار کرنا پڑے گا - کوئی بهی آدمی اپنے وجود کا انکار نہیں کر سکتا ، اسی لیے کسی بهی آدمی کے لیے منطقی طور پر یہ ممکن نہیں کہ وه خدا کے وجود کا انکار کرے
    خدا کا غیر مرئی (invisible) هونا ، اس بات کے لیے کافی ہے کہ خدا کے وجود کا انکار کیا جائے - حقیقت یہ ہے کہ غیر مرئی هونے کے بنا پر خدا کا انکار کرنا ، ماڈرن سائنس کے زمانے میں ایک خلاف زمانہ استدلال ہے -

    اس لئے کہ آئن سٹائن کے زمانے میں جب ایٹم ٹوٹ گیا اور علم کا دریا عالم صغیر (micro world) تک پہنچ گیا تو اس کے بعد معلوم هوا کہ یہاں ہر چیز غیر مرئی ہے - پہلے جو چیزیں مرئی سمجهی جاتی تهی اب وه سب کے سب غیر مرئی هو گئیں - ایسی حالت میں عدم رویت کی بنیاد پر خدا کے وجود کا انکار کرنا ، ایک غیر علمی موقف بن چکا ہے

  2. #2
    Join Date
    Dec 2009
    Location
    SAb Kya Dil Mein
    Posts
    11,928
    Mentioned
    79 Post(s)
    Tagged
    2306 Thread(s)
    Thanked
    24
    Rep Power
    21474855

    Default

    bu - Insan Ka Wajood


  3. #3
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Hijr
    Posts
    152,763
    Mentioned
    104 Post(s)
    Tagged
    8577 Thread(s)
    Thanked
    80
    Rep Power
    21474998

    Default

    Shukriya
    پھر یوں ہوا کے درد مجھے راس آ گیا

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •