Results 1 to 2 of 2

Thread: Tahajud

  1. #1
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Hijr
    Posts
    152,763
    Mentioned
    104 Post(s)
    Tagged
    8577 Thread(s)
    Thanked
    80
    Rep Power
    21474998

    candel Tahajud

    ایک بزرگ کے بارے میں آتا ہے کہ ایک رات اُن کی تہجد کہ نماز قضا ہوگئی، انہوں نے اس کے افسوس کی وجہ سے صبح اُٹھ کے اللہ کے سامنے گڑگڑا کے معافی مانگی۔ کچھ دنوں بعد وہ رات کو سوئے ہوئے تھے۔


    اس رات جہاد کی وجہ سے بہت زیادہ تھکاوٹ تھی۔تہجد کے قضا ہونے کا وقت قریب تھا کہ کوئی آدمی آیا اور اس نے پکڑ کر جگایا اور کہنے لگا۔" جی آپ اُٹھ جائیں اور جلدی سے نماز پڑھ لیں تہجد کا وقت جا رہا ہے"۔


    وہ بزرگ اٹھ بیٹھے اور کہنے لگے "تُو تو میرا بڑا خیر خواہ ہے کہ عین وقت پر جگا دیا ،تمھاری مہربانی، یہ تو بتا کہ تو کون ہے؟"


    وہ کہنے لگا "میں شیطان ہوں"۔


    انہوں نے کہا" شیطان تو کسی کو تہجد کے لیے نہیں جگاتا ۔تو تُو نے مجھے کیسے جگا دیا؟ تم تو کسی کا بھلا نہیں چاہتے؟"۔


    وہ کہنے لگا " میں آپ کا بھلا آج بھی نہیں چاہ رہا"۔


    وہ بزرگ بڑے حیران ہوئے اور فرمایا کہ" تو نے مجھے تہجد کے لیے جگایا ہے اور کہہ رہے ہے کہ میں بھلا نہیں چاہ رہا"۔


    وہ مردود کہنے لگا" وجہ یہ ہے کہ آپ کی پہلی تہجد کی نماز قضا ہوئی تھی تو اس وقت آپ اتنا روئے تھے کہ آپ کو اس رونے پر اتنا اجر ملا کہ سالوں کی تہجد پر بھی اتنا اجر نہیں مل سکتا۔ آپ اج بھی سو گئے تھے تہجد کا وقت جا رہا تھا۔ میں نے سوچا کہ اگر آپ آج بھی اتنا روئے تو آپ کو آج پھر اتنا اجر مل جائے گا، اسی لیے میں نے بہتر سمجھا کہ آپ کے جگا دوں تاکہ آپ کو صرف ایک رات کی تہجد کا اجر ملے"۔

  2. #2
    Join Date
    Dec 2009
    Location
    SAb Kya Dil Mein
    Posts
    11,928
    Mentioned
    79 Post(s)
    Tagged
    2306 Thread(s)
    Thanked
    24
    Rep Power
    21474855

    Default

    jazak1 - Tahajud

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •