Results 1 to 3 of 3

Thread: Tum Mere Paas

  1. #1
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Hijr
    Posts
    152,763
    Mentioned
    104 Post(s)
    Tagged
    8577 Thread(s)
    Thanked
    80
    Rep Power
    21474998

    candel Tum Mere Paas

    ایک بہت مشہور واقعہ ہے کہ ایک محفل میں دہلی کے اور بھی شعراء مدعو تھے.

    ان میں غالب اور مومن بھی تھے. غالب نے اپنا کلام پیش کیا. اور ہمیشہ کی طرح لوگوں سے داد وصول کی.

    مومن خان ایک اچھا شاعر ہونے کے باوجود لوگوں کا اتنا پسندیدہ نہیں تھا جتنا غالب. لیکن اس دن مومن نے وہ شعر پڑھا جس کے بعد آج بھی تاریخ گواہ ہے کہ اس کے سننے کے بعد غالب تک نے مومن سے کہا
    "مومن سنو! یہ شعر مجھے دے دو... اسکے بدلے میں چاہے تو میرا پورا دیوان اپنے نام کر لو"

    اور وہ شعر ہے


    تم میرے پاس ہوتے ہو گویا
    جب کوئی دوسرا نہیں ہوتا


    بعد میں بھی غالب نے لوگوں سے کہا کہ اتنا سادہ شعر اتنے سادہ الفاظ سے بنا ہوا میرے ذہن میں کیوں نہیں آیا.

    اور خود ہی غالب جواب میں کہتے کہ شاید اس لیے کہ غالب خود بھی سادہ نہیں، اسکی سوچ سادہ نہیں، اسکا محبوب سادہ نہیں
    پھر یوں ہوا کے درد مجھے راس آ گیا

  2. #2
    Join Date
    Dec 2009
    Location
    SAb Kya Dil Mein
    Posts
    11,928
    Mentioned
    79 Post(s)
    Tagged
    2306 Thread(s)
    Thanked
    24
    Rep Power
    21474855

    Default

    bu - Tum Mere Paas


  3. #3
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Hijr
    Posts
    152,763
    Mentioned
    104 Post(s)
    Tagged
    8577 Thread(s)
    Thanked
    80
    Rep Power
    21474998

    Default

    Shukriya
    پھر یوں ہوا کے درد مجھے راس آ گیا

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •