Results 1 to 2 of 2

Thread: 4 Shaban - Youm-e-Hazrat Umme Kulsum Radi Allahu Anha

  1. #1
    Join Date
    Feb 2011
    Location
    Is Duniya me
    Posts
    1,576
    Mentioned
    15 Post(s)
    Tagged
    1284 Thread(s)
    Thanked
    1
    Rep Power
    21474844

    exclaim 4 Shaban - Youm-e-Hazrat Umme Kulsum Radi Allahu Anha

    ٤ شعبان - یوم حضرت ام کلثوم رضی اللہ عنہا

    نام و نسب

    ام کلثوم بنت محمد صلی اللہ علیہ والہ وسلم - یہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم کی تیسری صاحبزادی حضرت خدیجہ رضی اللہ عنہا کے بطن سے تھیں۔ نبوت سے کچھ عرصہ قبل پیدا ہوئیں۔

    نکاح

    حضرت ام کلثوم رضی اللہ عنہا کا نکاح ابو لہب کے دوسرے بیٹے عتیبہ سے ہوا تھا لیکن رخصتی سے قبل طلاق ہوئی جس کی وجہ ابو لہب کی اسلام دشمنی تھی۔


    عتیبہ کا انجام

    حضرت امّ کلثوم رضی اللہ عنہا کا نکاح بعثت نبوی سے پہلے ابو لہب کے دوسرے بیٹے عتیبہ سے ہوا تھا ابھی رخصتی نہیں ہوئی تھی ۔ جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم مبعوث ہوئے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے لوگوں کو دعوت اسلام دینی شروع کی تو ابی لہب اور اسکی بیوی آپ کے سخت دشمن ہو گئے اور انہوں نے رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو ستانے میں کوئی کسر اٹھا نہ رکھی۔ غیرت الٰہی جوش میں آئی اور سورۃ ’’ تَبَّتْ یَدَآ اَبِیْ لَھَبٍ وَّتَبَّ‘‘ نازل ہوئی۔ ابو لہب کو سخت غصہ آیا۔ عتیبہ نے اپنے بدبخت باپ کے حکم کی تعمیل کرتے ہوئے حضرت ام کلثوم رضی اللہ عنہا کو طلاق دے دی۔ سورہ تبت یدا میں ابو لہب کی برائی سن کر عتیبہ اس قدر طیش میں آ گیا کہ اس نے گستاخی کرتے ہوئے حضور صلی اللہ علیہ وسلم پر جھپٹ کر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے پیراہن شریف کو پھاڑ ڈالا اور حضرت ام کلثوم رضی اللہ تعالی عنہا کو طلاق دےدی حضور رحمت عالم صلی اللہ علیہ وسلم کے قلب نازک پر اس گستاخی اور بے ادبی سے انتہائی صدمہ گزرااور جوش غم سے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی زبان مبارک سے بے اختیار یہ الفاظ نکل گئے کہ۔ یااللہ عزوجل ! اپنے کتوں میں سے کسی کتے کو اس پر مسلط فرمادے۔ اس دعا ئے نبوی کا یہ اثر ہوا کہ ملک شام کے راستہ میں یہ قافلہ کے بیچ میں سویا تھا اور ابو لہب قافلہ والوں کے ساتھ پہرہ دے رہا تھا مگر اچانک ایک شیرآیا اور عتیبہ کے سر کو چبا گیا اور وہ مرگیا

    نکاح ثانی

    آپ کی بہن حضرت رقیہ رضی اللہ عنہا، حضرت عثمان غنی رضی اللہ عنہ کی بیوی تھیں۔ 2ھ میں غزوۂ بدر کے موقع پر حضرت رقیہ رضی اللہ عنہا کا انتقال ہو گیا تو حضرت عثمان رضی اللہ عنہ بہت مغموم رہنے لگے۔ انہیں اس بات کا بہت زیادہ غم تھا کہ حضور صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم سے قرابت داری کا جو اہم رشتہ تھا وہ ٹوٹ گیا۔ حضور صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے 3ھ میں حضرت ام کلثوم رضی اللہ عنہا کا عقد حضرت عثمان غنی رضی اللہ عنہ سے کر دیا اور اس حوالے سے حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کو حضرت رقیہ رضی اللہ عنہا کے بعد حضور صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی دامادی کا شرف پھر حاصل ہوا۔ اسی لیے حضرت عثمان غنی رضی اللہ عنہ کو "ذو النورین" یعنی دو نوروں والا کہتے ہیں۔ حضرت امّ کلثوم رضی اللہ عنہا اس نکاح کے بعد چھہ برس تک حیات رہیں۔

    آن حضرت صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی ہجرت مدینہ کے ساتھ حضرت ام کلثوم نے بھی ہجرت کی اور باقی عرصہ مدینہ میں ہی گذارا۔ حضرت امّ کلثوم رضی اللہ عنہا کے کوئی اولاد نہیں ہوئی۔


    وفات

    آپ نے شعبان 9 ہجری میں وفات پائی۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے نماز جنازہ پڑھائی اور مدینہ منورہ کے قبرستان جنت البقیع میں دفن فرمایا



  2. #2
    Join Date
    Mar 2010
    Location
    ممہ کہ دل میں
    Posts
    40,298
    Mentioned
    32 Post(s)
    Tagged
    4710 Thread(s)
    Thanked
    4
    Rep Power
    21474884

    Default

    JazakALLLAH Khair....

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •