Results 1 to 2 of 2

Thread: دیارِ دل کی رات میں چراغ سا جلا گیا

  1. #1
    Join Date
    Mar 2015
    Location
    Karachi
    Posts
    726
    Mentioned
    6 Post(s)
    Tagged
    59 Thread(s)
    Thanked
    1
    Rep Power
    3

    Default دیارِ دل کی رات میں چراغ سا جلا گیا

    دیارِ دل کی رات میں چراغ سا جلا گیا
    ملا نہیں تو کیا ہوا وہ شکل تو دکھا گیا
    وہ دوستی تو خیر اب نصیبِ دشمناں ہوئی
    وہ جھوٹی جھوٹی رنجشوں کا لطف بھی چلا گیا
    جدائیوں کے زخم دردِ زندگی نے بھر دیئے
    تجھے بھی نیند آگئی مجھے بھی صبر آگیا
    پکارتی ہیں فرصتیں کہاں گئیں وہ صحبتیں
    زمیں نگل گئی ہیں انہیں کہ آسماں کھا گیا
    یہ صبح کی سفیدیاں یہ دوپہر کی زردیاں
    اب آئینے میں دیکھتا ہوں میں کہاں چلا گیا
    یہ کس خوشی کی ریت پر غموں کو نیند آگئی
    وہ لہر کس طرف گئی یہ میں کہاں سما گیا
    گئے دنوں کی لاش پر پڑے رہوگے کب تلک
    الم کشو اٹھو کہ آفتاب سر پہ آگیا
    (ناصر کاظمی)
    1 - دیارِ دل کی رات میں چراغ سا جلا گیا

  2. #2
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Hijr
    Posts
    152,763
    Mentioned
    104 Post(s)
    Tagged
    8577 Thread(s)
    Thanked
    80
    Rep Power
    21474998

    Default

    پھر یوں ہوا کے درد مجھے راس آ گیا

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •