Results 1 to 1 of 1

Thread: ابولَہَب اور مِیلاد (Abu Lahab aur Milad)

  1. #1
    Join Date
    Feb 2011
    Location
    Is Duniya me
    Posts
    1,576
    Mentioned
    15 Post(s)
    Tagged
    1284 Thread(s)
    Thanked
    1
    Rep Power
    21474844

    exclaim ابولَہَب اور مِیلاد (Abu Lahab aur Milad)

    ابولَہَب اور مِیلاد


    جب ابو لَہَب مر گیا تو اُس کے بعض گھروالوں نے اُسے خواب میں بُرے حال میں دیکھا۔ پوچھا :کیامِلا ؟ بولا:تم سے جُدا ہوکر مجھے کوئی خیر نصیب نہ ہوئی ۔پھر اپنے انگوٹھے کے نیچے موجود سوراخ کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہنے لگا:سوائے اس کے کہ اس میں سے مجھے پانی پلادیا جاتا ہے کیونکہ میں نےثُوَیْبَہ لَونڈی کو آزاد کیا تھا۔ ( مصنف عبدالرزاق ج۹ص۹ حدیث۱۶۶۶۱وعمدۃ القاری ج۱۴ص۴۴تحت الحدیث۱۰۱ ۵)حضرتِ علّامہ بدرُ الدّین عینیعَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ الْقَوِیفرماتے ہیں :اس اشارے کا مطلب یہ ہے کہ مجھے تھوڑا سا پانی دیا جاتا ہے۔ (عمدۃ القاری ایضًا

    مسلمان اور میلاد

    اِس روایت کے تَحْت سَیِّدُنا شیخ عبدالحق مُحدِّث دِہلویعَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ الْقَوِی فرماتے ہیں : اس واقِعہ میں میلاد شریف والوں کیلئے بڑی دلیل ہے جو تاجد ار رِسالت صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَسَلَّمَ کی شبِ وِلادت میں خوشیاں مناتے اور مال خرچ کرتے ہیں ،یعنی ابولَہَب جو کہ کافِر تھا جب وہ تاجدارِ نُبُوَّت
    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَسَلَّمَ کی ولادت کی خبر پاکر خوش ہونے اور اپنی لَونڈی (ثُوَیْبَہ) کو دودھ پلانے کی خاطِر آزاد کرنے پر بدلہ دیا گیا۔تو اس مسلمان کا کیا حال ہوگا جو محبَّت اور خوشی سے بھرا ہوا ہے اور مال خرچ کررَہا ہے۔لیکن یہ ضَروری ہے کہ محفلِ میلاد شریف گانے باجوں سے اور آلاتِ موسیقی سے پاک ہو۔ (مدارِجُ النُّبُوَّت ج۲ص۱۹


    جشنِ ولادت کی دُھوم مچائیے

    دُھوم دَھام سے عیدِ میلاد منایئے کہ جب ابولَہَب جیسے کافِر کو بھی ولادت کی خوشی کرنے پر فائدہ پہنچاتو ہم تواَلْحَمْدُ لِلّٰہ عَزَّ وَجَلَّمسلمان ہیں۔ ابو لَہَب نےاَللّٰہ عَزَّ وَجَلَّ کے رسول
    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَسَلَّمَ کی نیّت سے نہیں بلکہ صرف اپنے بھتیجے کی ولادت کی خوشی منائی پھر بھی اُس کوبدلہ ملا تو ہم اگراَللّٰہ عَزَّ وَجَلَّکی رضا کیلئے اپنے آقا و مولیٰمحمّد رسولُ اللہصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی ولادت کی خوشی منائیں گے تو کیونکر محروم رہیں گے۔

    مِیلاد منانے والوں سے سرکا ر صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَسَلَّمَ خوش ہوتے ہیں

    ایک عالم صاحِبرَحْمَۃُ اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہ فرماتے ہیں :اَلْحَمْدُ لِلّٰہ مجھے خواب میں تاجدارِ ِرِسالت ، شَہنشَاہ ِ نُبُوَّت
    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَسَلَّمَ کی زِیارت ہوئی، میں نے عرض کی: یا رسولُ اللہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَسَلَّمَ ! کیا آپ کو مسلمانوں کا ہر سال آپ کی وِلادتِ مبارَک کی خوشیاں مَنانا پسند آتا ہے؟ ارشاد فرمایا:’’جو ہم سے خوش ہوتا ہے ہم بھی اُس سے خوش ہوتے ہیں۔‘‘ (تذکِرۃُ الواعظِین ص۶۰۰
    Last edited by shaikh_samee; 21-12-2015 at 01:23 PM.

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •