صدیوں سے..
تجهے تکتے ہوئے..
سوچ رہا ہوں..
جی تیرے خدوخال سے..
بهر کیوں نہیں جاتا !