ہے عشقِ پیچاں ، وبال ساقی



کہ زندگی ہے، محال ساقی
.
بہک رہا ہوں، خمارِ مئے ہے
کہ تیرا حسن و جمال ساقی