کہیں تو ختم بهی کر دے سفر اذیت کا
کہیں تو پھینک میرے یار مار کے مجھ کو