میرے سانسوں کی اساس کی طرح
مریضِ بسترِ مرگ کی آس کی طرح
وہ لوگ کبھی نہیں ہوتے ، کسی کے
رشتے بھی بدلیں جو لباس کی طرح