آج تو بے سبب اُداس ہے جی

عشق ہوتا تو کوئی بات بھی تھی
جلتا پھرتا ہوں میں دوپہروں میں
جانے کیا چیز کھوگئی ہے مری