سنو جاناں!



کچھ عرصہ پہلے جب
میرے دل کے پہاڑ پر
تمہاری محبت کی
جو ژالہ باری ہوئی تھی,
سنو!
اب وہ
تمہاری جدائی کی
تپش سے پگھل کر
آنسؤوں کے روپ میں ڈھل کر
میری پلکوں کی آبشار سے
مسلسل رواں ہے
آنسؤوں کا ریلا رواں دواں ہے..!!