تاثیرِ سوزِ عشق سے بچنا محال ہے



ایسی لگے یہ آگ کہ دیکھا کرے کوئی
جگرؔ مُراد آبادی