Results 1 to 2 of 2

Thread: مٹّی تھا میں خمیر ترے ناز سے اٹھا

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    17,846
    Mentioned
    1534 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5776
    Rep Power
    214771

    New5555 مٹّی تھا میں خمیر ترے ناز سے اٹھا


    مٹّی تھا میں خمیر ترے ناز سے اٹھا
    پھر ہفت آسماں مری پرواز سے اٹھا

    انسان ہو، کسی بھی صدی کا، کہیں کا ہو
    یہ جب اٹھا ضمیر کی آؤاز سے اٹھا

    صبحِ چمن میں ایک یہی آفتاب تھا
    اس آدمی کی لاش کو اعزاز سے اٹھا

    سو کرتَبوں سے لکّھا گیا ایک ایک لفظ
    لیکن یہ جب اٹھا کسی اعجاز سے اٹھا

    اے شہسوارِ حُسن! یہ دل ہے یہ میرا دل
    یہ تیری سر زمیں ہے ، قدم ناز سے اٹھا!

    میں پوچھ لوں کہ کیا ہے مرا جبر و اختیار
    یا رب! یہ مسئلہ کبھی آغاز سے اٹھا

    وہ ابر شبنمی تھا کہ نہلا گیا وجود
    میں خواب دیکھتا ہوا الفاظ سے اٹھا

    شاعر کی آنکھ کا وہ ستارہ ہوا علیم
    قامت میں جو قیامتی انداز سے اٹھا


    2gvsho3 - مٹّی تھا میں خمیر ترے ناز سے اٹھا

  2. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    17,846
    Mentioned
    1534 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5776
    Rep Power
    214771

    Default Re: مٹّی تھا میں خمیر ترے ناز سے اٹھا

    2gvsho3 - مٹّی تھا میں خمیر ترے ناز سے اٹھا

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •