Results 1 to 7 of 7

Thread: سیف زُلفی

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    14,750
    Mentioned
    1111 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    4722
    Rep Power
    20

    candel سیف زُلفی

    سیف زُلفی، ایک جری شاعر ان کی شاعری کلاسیکل اور جدیدیت کا حسین امتزاج ہے

    23596 38362721 - سیف زُلفی
    عبدالحفیظ ظفر
    کوفے کے قریب ہو گیا ہے لاہور عجیب ہو گیا ہے جب کوئی شاعر اپنے کسی شعر میں تلمیع کا استعمال خوبصورتی سے کرتا ہے تو اس شعر کو چار چاند لگ جاتے ہیں۔ اس سے یہ حقیقت منکشف ہوتی ہے کہ یہ شاعر تاریخی شعور سے پوری طرح بہرہ ور ہے اور اسے تاریخی حقائق کا مکمل ادراک ہے۔ باقی کا کام تو قاری کا ہے کہ وہ اپنی ذہنی استعداد کے مطابق تلمیع کا رشہ اس شعر سے جوڑے۔ تب کہیں جا کر معانی کے جہاں کھلتے ہیں۔ اردو کے کلاسیکل اور جدید شعرا میں بہت سے ایسے ہیں جنہوں نے اپنے اشعار میں بڑی مہارت سے تلمیع کا استعمال کیا ہے۔ مرزا اسداللہ غالب کا یہ شعر ملاحظہ کیجیے کیا کِیا خِضر نے سکندر سے اب کسے رہنما کرے کوئی اس طرح کی کئی مثالیں اور بھی دی جا سکتی ہیں۔ سیف زُلفی بھی ان شعرا میں شامل ہیں جو اس فن میں یدطولیٰ رکھتے ہیں۔ 70ء اور 80ء کی دہائی میں اس شاعر کی بڑی شہرت تھی۔ انہوں نے کلاسیکل اور جدیدیت کے حسین امتزاج سے متاثر ہو کر شاعری تخلیق کی۔ ان کی قوتِ متخیلہ بہت مضبوط تھی اور پھر ایک اور وصف جو ان کی شاعری میں ملتا ہے وہ ہے فکر کی گہرائی۔ ان کی شاعری انسانیت کے درد سے معمور ہے اور انہوںنے شاعری کو اپنی جرأت اور بے باکی کا لباس پہنایا۔ وہ اپنی ذاتی زندگی میں بھی صداقت کا عَلم تھامے رہے اور انہوں نے کبھی اپنے اصولوں اور نظریات پر سمجھوتہ نہیں کیا۔ انہوں نے تمام عمر جو دیکھا، محسوس کیا، اسے بڑی ایمانداری سے شعری زبان دی۔ سیف زُلفی کا اصل نام سید محمد ذوالفقار حسین تھا اور زُلفی ان کا تخلص تھا۔ وہ 25 دسمبر 1934ء کو بریلی (بھارت) میں پیدا ہوئے۔ تقسیمِ ہند کے بعد وہ پاکستان آ گئے۔ شاعری ان کی شریانوں میں خون بن کے دوڑتی تھی۔ ان کے شعری مجموعوں میں ’’لُہو، چاند اور سویرا، تابہ خاکِ کربلا، اور ٹکڑے ٹکڑے آدمی‘‘ شامل ہیں۔ انہوں نے ہمیشہ شعر کی حرمت کا تحفظ کیا۔ ان کی شاعری میں سہلِ ممتنع کی جھلکیاں بھی ملتی ہیں۔ وہ رومانوی شاعر نہیں تھے لیکن ان کی غزل کے موضوعات بڑے اثر انگیز ہوتے تھے۔ فکر کی گہرائی کا جب جذبات کی شدت سے ملاپ ہوتا ہے تو کمال کی شاعری تخلیق ہوتی ہے۔ سیف زُلفی کے ہاں یہی شعری اوصاف بکثرت ملتے ہیں۔ یہ نہ سمجھا جائے کہ وہ جمالیاتی طرزِ احساس کو اتنی اہمیت نہیں دیتے تھے لیکن جمالیات کا تصور ان کا اپنا تھا۔ ان کی شاعری میں زندگی کے مختلف رنگ دکھائی دیتے ہیں جن میں دکھ اور الم کے رنگ زیادہ ہیں۔ ان کی شاعری میں ان لوگوں کے لیے شدید نفرت ہے جو منافقت سے کام لیتے ہیں اور ظلم و جبر کے خلاف کھل کر سامنے نہیں آتے۔ ہر بہادر اور جری آدمی سچائی کو اپنا ہتھیار بناتا ہے۔ وہ خود صداقت کی روشنی پھیلاتا ہے اور باطل کی تاریکیوں میں گم نہیں ہوتا۔ سیف زُلفی فنی لحاظ سے بھی بڑے پختہ شاعر تھے۔ شعر پڑھنے کا بھی ان کا اپنا ہی انداز تھا۔ بات سے بات نکالنے کا ہنر بھی انہیں خوب آتا تھا۔ یہ بات سمجھ سے بالاتر ہے کہ ہمارے اکثر شعرا جنہیں زندگی میں بہت شہرت ملتی ہے، موت کے بعد انہیں بہت جلد بھلا دیا جاتا ہے۔ کیا ہم اتنے زود فراموش ہیں یا پھر بے حسی کی آگ میں ہمارے احساس کا شجر جل کر خاکستر ہو چکا؟ سیف زُلفی کا شمار ان جدید شعرا میں ہوتا ہے جنہوں نے 60ء کی دہائی میں غزل کا روایتی مفہوم تبدیل کیا اور اسے نئے معانی دیئے، نئی جہتوں سے سرفراز کیا اور اس کا کینوس وسیع کیا۔ ان کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ انہوں نے شعریت کے اپنے پیمانے ایجاد کیے جن میں سب سے زیادہ زور موضوعات کے تنوع پر دیا گیا۔ ان کی بعض غزلیات کے ردیف اور قوافی بھی بہت نامانوس ہیں اسی کو تخلیقی شاعری کہتے ہیں۔ وہ قارئین سے اپنے سوالات کے جوابات طلب کرتے ہیں اور پھر انہیں ’’قیمتی مشوروں‘‘ سے بھی نوازتے ہیں۔ لیکن یہ مشورے بلاجواز نہیں دیئے جاتے، ان میں قاری کا کسی قسم کا نقصان نہیں، بلکہ فائدہ ہی فائدہ ہے۔ ذیل میں سیف زُلفی کے کچھ اشعار پیشِ خدمت ہیں۔ کھل جائیے برستے ہوئے ابر کی طرح جوچیز دل میں ہے اسے باہر نکالیئے کیوں جل بجھے کہیں تو گرفتار بولتے زندوں میں چپ رہے تو سرِ دار بولتے اب خلوتوں میں شور مچانے سے فائدہ تھا حوصلہ تو برسرِ دربار بولتے اب کیا گلہ کریں کہ مقدر میں کچھ نہ تھا ہم غوطہ زن ہوئے تو سمندر میں کچھ نہ تھا دیکھا تو سب ہی لعل و جواہر لگے مجھے پرکھا جو دوستوں کو تو اکثر میں کچھ نہ تھا صحرا بھلے کہ ذہن کو کچھ تو سکوں ملے گھبرا گیا ہوں شہر کے بازار دیکھ کر سائے جو سنگِ راہ تھے رستے سے ہٹ گئے دل جل اٹھا تو خود ہی اندھیرے سمٹ گئے گمنام تھے تو سب کی طرف دیکھتے تھے ہم شہرت ملی تو اپنی خودی میں سمٹ گئے اشکوں میں قلم ڈبو رہا ہے فن کار جوان ہو رہا ہے ظالم کو سکھا رہا ہے انصاف پتھر میں درخت بو رہا ہے چنگاریاں نہ ڈال مرے دل کے گھاؤ میں میں خود ہی جل رہا ہوں غموں کے الاؤ میں کاغذ پہ اگل رہا ہے نفرت کم ظرف ادیب ہو گیا ہے اس شہر کا دل نہیں ہے زُلفی یہ شہر غریب ہو گیا ہے ویسے تو سیف زُلفی نے نعتیں اور مرثیے بھی لکھے لیکن اس مختصر مضمون میں ان کی شاعری کا مکمل محاکمہ نہیں کیا جا سکتا۔ 21 مئی 1991ء کو سیف زُلفی جگر کے عارضے کے باعث انتقال کر گئے۔ یقینِ کامل ہے کہ وہ اپنی بے مثل شاعری کی وجہ سے ہمیشہ زندہ رہیں گے۔

    2gvsho3 - سیف زُلفی

  2. The Following 3 Users Say Thank You to intelligent086 For This Useful Post:


  3. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    14,750
    Mentioned
    1111 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    4722
    Rep Power
    20

    Default Re: سیف زُلفی

    2gvsho3 - سیف زُلفی

  4. #3
    Join Date
    Dec 2009
    Location
    SAb Kya Dil Mein
    Posts
    12,278
    Mentioned
    157 Post(s)
    Tagged
    2306 Thread(s)
    Thanked
    76
    Rep Power
    21474858

    Default Re: سیف زُلفی

    thanks for sharing

    gif zombies - سیف زُلفی




  5. #4
    Join Date
    Mar 2018
    Location
    Pakistan
    Posts
    1,903
    Mentioned
    4766 Post(s)
    Tagged
    3538 Thread(s)
    Thanked
    1032
    Rep Power
    3

    Default Re: سیف زُلفی

    بہت عمدہ

  6. The Following User Says Thank You to Mariaa For This Useful Post:


  7. #5
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    14,750
    Mentioned
    1111 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    4722
    Rep Power
    20

    Default Re: سیف زُلفی

    Quote Originally Posted by Mariaa View Post
    بہت عمدہ
    پسند اور رائے کا شکریہ
    2gvsho3 - سیف زُلفی

  8. #6
    Join Date
    Feb 2010
    Location
    dubai
    Posts
    11,827
    Mentioned
    4606 Post(s)
    Tagged
    11726 Thread(s)
    Thanked
    3005
    Rep Power
    214770

    Default Re: سیف زُلفی

    Nice SharinG Bro
    Keep SharinG n Keep SmiliNG


    30abdx0 - سیف زُلفی
    mera siggy koun uraa le gaya....

  9. #7
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    14,750
    Mentioned
    1111 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    4722
    Rep Power
    20

    Default Re: سیف زُلفی

    Quote Originally Posted by maya View Post
    Nice SharinG Bro
    Keep SharinG n Keep SmiliNG
    پسند اور رائے کا شکریہ
    2gvsho3 - سیف زُلفی

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •