Results 1 to 6 of 6

Thread: روکتا ہے کوئی مگر جائیں

Threaded View

Previous Post Previous Post   Next Post Next Post
  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    17,310
    Mentioned
    1523 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5741
    Rep Power
    214771

    New5555 روکتا ہے کوئی مگر جائیں

    روکتا ہے کوئی مگر جائیں
    دل کے بجھنے سے پیشتر جائیں
    جن ہوائوں میں سانس لیتی ہو
    ہم انہی گھاٹیوں میں مر جائیں
    ہم تمہاری گلی کے کچھ بھی نہیں
    ہم اگر تہمتوں سے ڈر جائیں
    سر سے اوپر کشش ہے پانی کی
    پائوں کہتے نہیں ٹھہر جائیں
    اُس پری کو تو کوئی ہوش نہیں
    کیا پرستان میں اتر جائیں
    چاندنے کے لحاف میں لپٹی
    فجر کی رُت ہو‘ لے کے گھر جائیں
    وہ کھلونا سمجھ کے بیٹھی ہے
    مجھ سے کہتی ہے چاند پر جائیں
    وقت دولت نہیں ہے‘ مہلت ہے
    جانے والے نہ دیر کر جائیں
    دل نہیں ہے ہمارے سینے میں
    اُس کی دہلیز پر جو دھر جائیں
    شعر کہتے ہیں یار جس کے لیے
    دیکھنے اس کو اک نظر جائیں
    سید عامر سہیل
    2gvsho3 - روکتا ہے کوئی مگر جائیں

  2. The Following User Says Thank You to intelligent086 For This Useful Post:


Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •