Results 1 to 3 of 3

Thread: قیامت کی علامتیں

  1. #1
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Hijr
    Posts
    152,763
    Mentioned
    104 Post(s)
    Tagged
    8577 Thread(s)
    Thanked
    80
    Rep Power
    21474998

    Default قیامت کی علامتیں

    اے محمد صلی اللہ علیہ وسلم) ہم نے تم کو سچائی کے ساتھ خوشخبری سنانے والا اور ڈرانے والا بنا کر بھیجا ہے......
    sura 2 ayat 14
    مشکوۃ شریف:جلد پنجم:حدیث نمبر 12 مکررات 0
    اور حضرت ابوہریرہ کہتے ہںد کہ رسول کریم صلی اللہ علہ وسلم نے فرمایا ۔ "
    1. جب مالم غنیمت کو دولت قرار دیا جانے لگے ،
    2. اور جب زکوۃ کو تاوان سمجھا جانے لگے ، اور جب علم کو دین کے علاوہ کسی اور غر ض سے سکھایا جانے لگے اور
    3. جب مرد بیوی کی اطاعت کرنے لگے اور جب ماں کی نافرمانی کی جانے لگے ،اور
    4. جب دوستوں کو تو قریب اور باپ کو دور کیا جانے لگے اور
    5. جب مسجد میں شور وغل مچایا جانے لگے اور جب قوم وجماعت کی سرداری ، اس قوم وجماعت کے فاسق شخص کرنے لگیں اور
    6. جب قوم وجماعت کے زعیم وسربراہ اس قوم وجماعت کے کمینہ اور رذیل شخص ہوں لگیں اور
    7. جب آدمی کی تعظیم اس کے شر اور فتنہ کے ڈر سے کی جانے لگے اور
    8. جب لوگوں میں گانے والیوں اور سازوباجوں کا دور دورہ ہو جائے اور
    9. جب شرابیں پی جانی لگیں اور
    10. جب اس امت کے پچھلے لوگ اگلے لوگوں کو برا کہنے لگیں اور ان پر لعنت بھیجنے لگیں تو

    اسی وقت تم ان چزووں کے جلدی ظاہر ہونے کا انتظار کرو سرخ یینک تزر وتند اور شدید ترین طوفانی آندھی کا زلزلہ کا ، زمنس مںو دھنس جانے کا ، صورتوں کے مسخ وتبدیل ہو جانے کا ، اور پتھروں کے برسنے کا ، نز۔ ان چزتوں کے علاوہ قاسمت اور تمام نشانونں اور علامتوں کا انتظار کرو ، جو اس طرح پے درپے وقوع پذیر ہوں گی جسےا ( مثلا موتوہں کی ) لڑی کا دھاگہ ٹوٹ جائے اور اس کے دانے پے درپے گرنے لگںب ۔ " (ترمذی )




    تشریح : اس حدیث میں کچھ ان برائیوں کا ذکر کیا گیا ہے جو اگرچہ دنیا میں ہمیشہ موجود رہی ہیں اور کوئی بھی زمانہ ان برائیوں سے خالی نہیں رہا ہے ، لیکن جب معاشرہ میں یہ برائیاں کثرت سے پھیل جائیں اور غیر معمولی طور پر ان کا دور دورہ ہو جائے تو سمجھ لینا چاہئے کہ خدا کا سخت ترین عذاب خواہ وہ کسی شکل وصورت میں ہو ، اس معاشرہ پر نازل ہونے والا اور دنیا کے خاتمہ کا وقت قریب تر ہو گیا ہے ۔
    مال غنیمت کو دولت قرار دئے جانے
    کا مطلب یہ ہے کہ جہاد کے ذریعہ دشمنوں سے جو مال حاصل ہوتا ہے اور جس کو " مال غنیمت " کہا جاتا ہے وہ شرعی طور پر تمام غازیوں اور مجاہدوں کا مشترک حق ہے اور اس مال کو ان تمام حقداروں پر ، خواہ وہ کسی بھی حیثیت وحالت کے ہوں ، تقیسم کرنا واجب ہے ، لیکن اگر اسلامی لشکر وسلطنت کے اہل طاقت وثروت اور اونچے عہدے دار اس مال غنیمت کو شرع حکم کے مطابق تمام حقداروں کو تقسیم کرنے کے بجائے خود اپنے درمیان تقسیم کر کے بیٹھ جائیں اور محتاج وضرورت مند اور چھوٹے لوگوں کو اس مال سے محروم رکھ کر اس کو صرف اپنے مصرف میں خرچ کرنے لگیں تو اس کے معنی یہ ہوں گے کہ وہ اس مال غنیمت کے تمام حقداروں کا مشترکہ حق نہیں سمجھتے بلکہ اپنی ذاتی دولت سمجھتے ہیں ۔
    " امانت کو مال غنیمت شمار کرنے "
    سے مراد یہ ہے کہ جن لوگوں کے پاس امانتیں محفوظ کرائی جائیں وہ ان امانتوں میں خیانت کرنے لگیں اور امانت کے مال کو غنیمت کی طرح اپنا ذاتی حق سمجھنے لگیں جو دشمنوں سے حاصل ہوتا ہے ۔
    " زکوۃ کو تاوان سمجھنے "
    کا مطلب یہ ہے کہ زکوۃ کا ادا کرنا لوگوں پر اس طرح شاق اور بھاری گذرنے لگے کا کہ گویا ان سے ان کا مال زبردستی چھینا جارہا ہے اور جیسے کوئی شخص تاوان اور جرمانہ کرتے وقت سخت تنگی اور بوجھ محسوس کرتا ہے ۔

    علم کو دین کے علاوہ کسی اور غرض سے سکھانے کا مطلب
    یہ ہے کہ علم سکھائے اور علم پھیلانے کا اصل مقصد دین وشریعت کی عمل اور اخلاق وکردار کی اصلاح وتہذیب انسانیت اور سماج کی فلاح وبہبود اور خدا ورسول کا قرب وخوشنودی حاصل کرنا نہ ہو بلکہ اس گے ذریعہ دنیا کی عزت ، مال ودولت ، جاہ منصب اور ایوان اقتدار میں تقرب حاصل کرنا مقصود ہو ۔
    " مرد کا بیوی کی اطاعت کرنا "
    یہ ہے کہ خاوند ، زن مرید ہو جائے اور اس طرح بیوی کا حکم مانے اور اس کی ہر ضرورت پوری کرنے لگے کہ اس کی وجہ سے خدا کے حکم وہدایت کی صریح خلاف ورزی ہو ۔
    " ماں کی نافرمانی کرنے "
    سے مراد یہ ہے کہ ماں کی اطاعت وفرما نبرداری کا جو حق ہے اس سے لا پرواہ ہو جائے اور کسی شرعی وجہ کے بغیر اس کی نا فرمانی کر کے اس کا دل دکھائے واضح رہے کہ یہاں صرف ماں کی تخصیص اس اعتبار سے ہے کہ اولاد کے لئے چونکہ باپ کی بہ نسبت ماں زیادہ مشقت اور تکلیف برداشت کرتی ہے اس لئے وہ اولاد پر باپ سے زیادہ حق رکھتی ہے ۔
    " دوستوں کو قریب اور باپ کو دور کرنے "
    کا مطلب یہ ہے کہ اپنا وقت باپ کی خدمت میں حاضر رہنے ، اس کے ساتھ اٹھنے بیٹھنے اور اس کی دیکھ بھال میں صرف کرنے کے بجائے دوستوں کے ساتھ مجلس بازی کرنے ، ان کے ساتھ گپ شپ اور سیر وتفریح کرنے میں صرف کرے اور اپنے معمولات وحرکات سے ایسا ظاہر کرے کہ اس کو باپ سے زیادہ دوستوں کے ساتھ تعلق وموانست ہے ۔
    " مسجد میں شور وغل کرنے "
    سے مرادیہ ہے کہ مسجدوں میں زور زور سے باتیں کی جائیں ، چیخ وپکار کے ذریعہ مسجد کے سکون میں خلل ڈالا جائے اور اس کے ادب واحترام سے لا پرواہی برتی جائے ! واضح رہے کہ بعض علماء نے یہاں تک لکھا ہے کہ مسجد میں آواز کو بلند کرنا حرام ہے ، خواہ اس کا تعلق ذکر اللہ سے کیوں نہ ہو ۔


    " کسی قوم وجماعت کا سردار اس قوم کے فاسق کے ہونے ۔ "
    سے مرادیہ ہے کہ قیادت وسیادت اگر ایسے لوگوں کے سپرد ہونے لگے جو بد کردار ، بدقماش اور بے ایمان ہو تو یہ بات پوری قوم کے لئے تباہی کی علامت ہوگی ! واضح رہے کہ قوم ، جماعت کے حکم میں شہر اور گاؤں اور محلہ بہی شامل ہیں ! اسی طرح اگر کسی قوم وجماعت کے زعما ان لوگوں کو قرار دیا جانے لگے جو اپنی قوم وجماعت کے کمینہ ، بے کردار اور رذیل ترین ہوں تو سمجھ لینا چاہئے کہ اس قوم وجماعت کی تباہی کے دن آگئے ہیں ۔
    " آدمی کی تعظیم ، اس کے فتنہ وشر کے ڈر سے کی جانے "
    کا مطلب یہ نے کہ کسی شخص کی تعظیم واحترام کا معیار اس کی ذاتی فضیلت وعظمت نہ ہو بلکہ اس کی برائی اور اس کے شر کا خوف ہو ۔ یعنی کسی شخص کی اس لئے تعظیم کی جائے وہ دوسروں کو نقصان پہنچانے یا ستانے کی طاقت رکھتا ہے ، جیسے کسی فاسق وبدقماش شخص کو اقتدار وغلبہ حاصل ہو جائے اور لوگ اس کی عزت اور اس کی تعظیم کرنے پر مجبور ہوں ۔
    " گانے والیوں " سے
    مراد کنچنیاں ، ڈومنیاں اور نائنیں وغیرہ ہیں ! اور " قینات " قنۃ کی جمع ہے ، جس کے اصل معنی گانے والی لونڈی کے ہیں ، اسی طرح " باجوں " سے مرادہر قسم کے سازو باجے اور گانے بجانے کے آلات ہیں جن کو شرعی اصطلاح میں " مزامیر " کہا جاتا ہے جیسے ڈھولک ، ہا رمونیم ، طبلہ ، سارنگی اور شہنائی وغیرہ ۔
    " شرابوں " جمع کا صیغہ استعمال کیا گیا ہے کیونکہ یہاں شراب کی تمام انواع واقسام اور دیگر دوسری نشہ آور اشیاء بھی مراد ہیں ۔
    " جب اس امت کے پچھلے لوگ ، اگلے لوگوں کو برا بھلا کہنے لگیں گے ۔ "
    میں اس طرف اشارہ ہے کہ یہ برائی اسی امت کے ساتھ مخصوص ہے ، گذشتہ امتوں کے لوگوں میں اس برائی کا چلن نہیں تھا ۔ چنانچہ مسلمانوں میں سے رافضی لوگ اس برائی میں مبتلا ہیں کہ وہ ان گذرے ہوئے اکابر یعنی صحابہ تک کے بارے میں زبان لعن وطعن دراز کرتے ہیں جن کے حق میں اللہ تعالیٰ یوں فرماتا ہے ۔
    والسابقون الاولون من المہادرین والانصار والذین اتبعوہم باحسان رضی اللہ عنہم ۔
    " جن لوگوں نے سبقت کی (یعنی سب سے ) پہلے ( ایمان لائے ) مہاجرین میں سے بھی اور انصار میں سے بھی اور جنہوں نے نیکو کاری کے ساتھ ان کی پیروی کی ، خدا ان سب سے خوش ہے !۔ "
    اور ایک آیت میں یہ فرمایا کہ :
    لقد رضی اللہ عنہ المؤمنین اذیبایعونک تحت الشجرۃ ۔
    " (اے محمد صلی اللہ علیہ وسلم ) جب مؤمن آپ سے درخت کے نیچے بیعت کررہے تھے تو اللہ تعالیٰ ان سے خوش ہوا ۔ "
    کس قدر بدنصیبی اور شقاوت کی بات ہے کہ جن بندگان خاص سے اللہ تعالیٰ راضی وخوش ہوا ان سے ناراضگی وناخوشی ظاہر کی جائے اور ان کے خلاف ہفوات بکے جائیں ۔ ؟ ان بندگان خاص کے مناقب وفضائل سے قرآن وحدیث بھرے ہوئے ہیں ، وہ پاک نفوس ایسی عظیم ہستیاں ہیں جنہوں نے سب سے پہلے خدا کے دین کو قبول کیا ، قبول ایمان میں سبقت حاصل کی ، نہایت سخت اور صبر آزما حالت میں خدا کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی مدد حمایت کی ، اللہ کے دین کا پرچم سر بلند کرنے کے لئے اپنی جانوں کی بازیاں لگائیں ، جہاد کے ذریعہ اسلام کی شوکت بڑھائی ، بڑے بڑے شہر اور ملک فتح کئے ، کسی واسطہ کے بغیر سید الامام علیہ الصلوۃ والسلام سے دین کا علم حاصل کیا ، شریعت کے احکام ومسائل سیکھے ، دین کی بنیاد یعنی قرآن کریم کو سب سے زیادہ جانا اور سمجھا ، اور مقدس ، ہستیوں کے بارے میں اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم کے ذریعہ امت کے تمام لوگوں کو یہ تلقین فرمائی کہ ان کے حق میں یوں گویا ہوں ۔
    ربنا اغفرلنا ولاخواننا الذین سبقونا بالایمان ۔
    " اے پروردگار !ہمیں بخش دے اور ہمارے ان بھائیوں کو بخش جنہوں نے قبول ایمان میں ہم پر سبقت حاصل کی ہے ۔

  2. #2
    Join Date
    Mar 2010
    Location
    ممہ کہ دل میں
    Posts
    40,298
    Mentioned
    32 Post(s)
    Tagged
    4710 Thread(s)
    Thanked
    4
    Rep Power
    21474884

    Default Re: قیامت کی علامتیں

    Ameen Summa Ameen.....


    JazaKALLAH......

  3. #3
    Join Date
    Mar 2010
    Location
    *In The Stars*
    Posts
    18,093
    Mentioned
    1 Post(s)
    Tagged
    1271 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    21474862

    Default Re: قیامت کی علامتیں

    jazakAllah
    Last edited by Seven Tiles; 25-04-2010 at 01:12 PM.

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •