Results 1 to 5 of 5

Thread: Kiya Aap Ko Bhi Sukoon Ki Talaash Hai ?

  1. #1
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Hijr
    Posts
    152,763
    Mentioned
    104 Post(s)
    Tagged
    8577 Thread(s)
    Thanked
    80
    Rep Power
    21474998

    candel Kiya Aap Ko Bhi Sukoon Ki Talaash Hai ?

    بسم اللہ الرحمن الرحیم

    السلام علیکم ورحمتہ اللہ !

    زندگی میں ہر انسان کی ایک ہی جستجو ہوتی ہے
    کہ کسی طرح زندگی میں سکون و قرار آجائے
    اس سکون و قرار حاصل کرنے کے لئے انسان دولت اکھٹی کرتا ہے
    پھر ایک اچھا سا گھر لیلتا ہے ۔۔۔ تاکہ زندگی میں سکون آجائے
    پھر سوچتا ہے کہ گھر تھوڑا بڑا ہو اور بڑے بڑے کمرے ہوں جہاں آرام سے زندگی بسر ہو
    پھر یوں بھی کرلیتا ہے
    اس کے بعد ایک اور خواہش اس کے سامنے کھڑی ہوتی ہے کہ گھر میں ائیر کنڈیشن بھی لگا لوں
    تاکہ رات آرام اور سکون سے بسر ہو
    ایک اور خواہش جو زندگی کے ساتھ ساتھ چلتی ہے کہ کاروبار بہتر سے بہتر ہو تاکہ ضروریات زندگی اور لائف اسٹائل بہتر سے بہتر انداز میں ہوسکے
    پھر وہ ایک بنگلا لے لیتا ہے جہا دنیا کی تمام آسائشیں میسر ہوتیں ہیں
    پھر ہر ماہ دو ماہ میں بیرون ملک گھومنے پھرنے بھی جاتا رہتا ہے تاکہ سکون مل سکے

    اب اس شخص کے پاس دولت بھی ہے ۔۔۔۔۔ عزت بھی ہے ۔۔۔۔ شہرت بھی ہے ۔۔۔۔ شاندار بنگلا بھی ہے ۔۔۔۔ کمروں میں اسپلٹ بھی ہیں ۔۔۔۔۔ بہترین سے بہترین ائیر کنڈیشن گاڑیا بھی ہیں ۔۔۔۔ بہت خوبصورت بیوی بھی ہے ۔۔۔۔ اولادیں بھی ہیں ۔۔۔۔ کاروبار دن بدن ترقیوں کی منازل طے کرتا جارہا ہے ۔۔۔۔۔ اتنا پیسا ہے کہ دنیا کے کسی ملک میں جا کر دل کھول کر اپنی خوہشیں پوری کرنا معمولی بات ہے ۔۔۔۔۔ دولت کے انبار اکھٹے ہوگئے جو نسلوں تک آرام سے زندگی گذار سکے ۔۔۔۔

    کیا خیال ہے دوستو! یہی سب کچھ ہی انسان کی تمنا ہوسکتی ہے نا ????

    اورایک انسان کی دنیاوی جستجو یہیں تک ہے نا ???

    اور انسان کی تمام تر جستجو زندگی میں سکون حاصل کرنے کے لئے ہے نا ???

    اور کس لئے ہوسکتی ہے ?

    روٹی کھانے کے لئے ???
    وہ کروڑوں یااربوں جمع کرنے کے بعد بھی چند روٹی سے زیادہ نہیں کھا سکتا ۔

    خواہشات کی تکمیل کے لئے ????
    تو وہ بھی صرف اپنے نفس کو تسکین پہنچانے کے لئے ہی ہوتا ہے ۔

    اولاد کے لئے ???
    تو اس کا تعلق بھی نفس کی تسکین کے سبب سے ہے
    کہ ہمارے بچے بھی کسی محرومی کا شکار نہ ہوں اور ہماری طرح بہترین سے بہترین زندگی گذاریں

    غرض یہ کہ آپ آپ کو ایک انسان کی ان تمام چیزوں کی جستجو کے لئے بھاگ دوڑ کی طرف نظر ڈالیں گے
    اور جب اُس کے مقصد کی طرف دیکھنا چاہیں گے تو آپ کو جواب "سکون کی تلاش "کے سوا کچھ نہ ملے گا

    لیکن دوستو ! حیرت انگیز بات یہ ہے کہ انسان جتنا بھی ان چیزوں کی طرف دوڑلگاتا ہے
    اور جتنا زیادہ ان چیزوں کو حاصل کرتا جاتا ہے
    اتنا ہی سکون اس کی زندگی سے دور چلا جاتا ہے

    اس کی بے شمار مثالیں آپ اپنے آس پاس دیکھ سکتے ہیں
    کہ دولت کے انبار پر،نرم و نازک بستر پر ،ائیر کنڈیشن روم میں آٹھ گھنٹے کی نیند کے لئے دوائیاں لینی پڑتی ہیں
    کروڑ پتی یا ارب پتی ۔۔۔۔ کھانے میں ابلا ہوا یا پرہیزی کھانا استعمال کرتا ہے

    بیرون ممالک سیر و تفریح کرکے سکون کی تلاش میں جانے والا راتوں کو جاگ کر اپنے کروڑوں اور اربوں کے کاروبار کی فکر میں گھلتا رہتا ہے

    اولاد کی خاطر اپنا تن من دھن لٹانے والا ۔۔۔۔۔ دن رات ایک کردینے والا ۔۔۔۔ کاروبار کی بھاگ دوڑ اپنی اولاد کے ہاتھ میں دینے ہی ایک بے کار سی چیز بن جاتا ہے ۔۔۔۔ جس کے آخری ایام اولڈ ہاوس میں گذرتے ہیں

    اور اگر ایسا نہ بھی کرے تب بھی

    وہ بیوی بچے جن کے خاطر اس نے دن رات ایک کرکے اتنی دولت کے انبار لگائے ۔۔۔۔ وہ ہر روز اس کے مرنے کے خواب دیکھنے لگتے ہیں


    یہ ایک موٹی سی مثال ہے ۔۔۔۔ اس کے بعد جو جو شخص اپنا یہ ٹارگٹ حاصل کرنے کے لئے جس جس لیول پر ہے
    وہ اپنے اپنے مسائل اور زندگی کی بے سکونی کا بخوبی اندازہ لگا سکتا ہے

    تو پھر انسان کی فطرت کو جس چیز کی تلاش ہوتی ہے ۔۔۔۔ اور جس چیز کے لئے انسان اپنا تن من دھن سب کچھ قربان کردیتا ہے ۔۔۔۔ جس چیز کے لئے انسان کتنا ہی جائز نا جائز کرتا ہے ۔۔۔۔ اپنی زندگی کا مقصد بنا کر اپنی پوری زندگی اس مقصد پر قربان کردیا ہے ۔۔۔۔ اور سب کچھ حاصل کرکے بھی اس نعمت سے محروم رہتا ہے

    تو پھر آخر یہ زندگی کا سکون کہاں مل سکتا ہے ?
    اور کیسے ملتا ہے ?
    لوگ اس سکون کے لئے کروڑوں اربوں خرچ کرنے کے لئے تیار بیٹھے ہیں لیکن اس کے باوجود اس نعمت سے محروم ہیں ???

    کیوں کہ دوستو ! اگر سکون دولت ،عزت شہرت اور مال و متاع میں موجود ہوتا تو یقینا آپ کو امیر و امراء میں نظر آجاتا

    یا آپ سب اپنا اپنا محاسبہ کرلیں کہ کون کتنا دولت مند اور عزت و شہرت والا ہے
    اور اُس کی زندگی کتنا سکون ہے ???

    دوستو! آئیے آپ کو بتاتے ہیں کہ یہ عظیم نعمت کہاں موجود ہے ??
    الحمد للہ اس تحریر کو پڑھنے والے مسلمان ہیں
    (نوٹ اگر کوئی غیر مسلم بھی اس سوال کا جواب جاننا چاہے تو ہمیں یہیں میسج کرے ان شاء اللہ اس کو بھی یہ حقیقت ثابت کردیں گے )
    اور الحمد للہ ہم سب کا عقیدہ ہے کہ قرآں پاک رب کا سچا کلام ہے

    وہ رب کریم جس نے انسان کی تخلیق کی ۔۔۔۔ یقینا خالق سے زیادہ مخلوق کی ضرورت سے کون واقف ہوسکتا ہے

    تو آئیے دیکھتے ہیں کہ رب العالمین انسان کی زندگی کا سکون کہاں بتاتا ہے ۔
    ارشاد باری تعالیٰ ہے :
    الَّذِينَ آمَنُوا وَتَطْمَئِنُّ قُلُوبُهُم بِذِكْرِ اللَّـهِ ۗ أَلَا بِذِكْرِ اللَّـهِ تَطْمَئِنُّ الْقُلُوبُ (الرعد 28 پارہ 13)
    ترجمہ :وہ لوگ جو ایمان لائے اور ان کے دلوں کو الله کی یاد سے تسکین ہوتی ہے خبردار! الله کی یاد ہی سے دل تسکین پاتے ہیں

    ابن کثیر رحمتہ اللہ علیہ لکھتے ہیں کہ جو اللہ کی طرف جھکے ،اس سے مدد چاہے ،اس کی طرف عاجزی کرے ،وہ راہ یافتہ ہوجاتا ہے ،جن کے دلوں میں ایمان جم گیا ہے ،جن کے دل اللہ کی طرف جھکتے ہیں ،اس کے ذکر سے اطمینان حاصل کرتے ہیں ،راضی خوشی ہوجاتے ہیں اور فی الواقع ذکراللہ اطمینان دل کی چیز بھی ہے ،ایمانداروں کے لئے خوشی نیک فالی اور آنکھوںکی ٹھنڈک ہے ،ان کا انجام اچھا ہے ،یہ مستحق مبارکباد ہیں ،یہ بھلائی کو سمیٹنے والے ہیں ان کا لوٹنا بہتر ہے ان کا مال نیک ہے

    دوستو! بس یہیں ہے حقیقی سکون

    بے شک خالق کائنات نے ،خالق انس و جن نے یہاں سکون رکھا ہے

    پس جو جتنا رب کی تابعداری کرتا جائے گا اُس کی زندگی سکون سے بھرتی جائے گی

    پھر بظاہر حالات کیسے بھی ہوں گے

    چاہے وہ روکھی سوکھی چٹنی ہی کیوں نہ کھاتا ہوگا ۔۔۔۔ چاہے اس کا بستر سخت چٹان ہی کیوں نہ ہوگی
    لیکن اُس کو وہ حقیقی سکون کی دولت میسر ہوگی جو لاکھوں کروڑوں خرچ کرکے بھی نہ حاصل ہوسکتی ہے
    اُس کا مال و متاع اولاد بیوی بچے ہر ہر چیز اُس کے لئے باعث تسکین ہوجائے گی

    دنیا میں لوگ اپنے جسمانی سکون کی تلاش میں جستجو کرتے ہیں
    جبکہ انسان کے سکون کی اصل حقیقت روح کے سکون میں ہے

    اور جب روح سکون میں ہوتی ہے تو جسمانی جیسی بھی کیفیت ہو لیکن ایسا شخص ہر حال میں اطمینان محسوس کرتا ہے

    جبکہ جسمانی سکون حاصل کرنے کی کتنی ہی جدوجہد کرلی جائے کتنی ہی خواہشات پوری کرلی جائیں کتنی ہی آسائشیں اکھٹی کرلی جائیں لیکن جب تک روح کو سکون میسر نہ ہوگا تب تک انسان کی ہر کوشش بے کار ثابت ہوگی
    اور ایسا شخص تمام تر آسائشیں اور خواہشات کی تکمیل کے باوجود بھی بے چین اور بے قرار رہے گا

    جو ہر شخص اپنے آس پاس بلکہ اپنی خود کی زندگی کو بھی سامنے رکھ کر سمجھ سکتا ہے

    اللہ تعالیٰ ہم سب کو دین کی صحیح سمجھ اور عمل کی توفیق عطاء فرمائے آمین

  2. #2
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Europe/NWFP
    Age
    25
    Posts
    8,272
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    31 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    21474854

    Default Re: Kiya Aap Ko Bhi Sukoon Ki Talaash Hai ?

    Be Shaq......Allah hum sab ko neki ki hidayat dey:- ameen

  3. #3
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Hijr
    Posts
    152,763
    Mentioned
    104 Post(s)
    Tagged
    8577 Thread(s)
    Thanked
    80
    Rep Power
    21474998

    Default Re: Kiya Aap Ko Bhi Sukoon Ki Talaash Hai ?

    Sum Ameen

  4. #4
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    HEART
    Posts
    5,555
    Mentioned
    1 Post(s)
    Tagged
    96 Thread(s)
    Thanked
    8
    Rep Power
    21474851

    Default Re: Kiya Aap Ko Bhi Sukoon Ki Talaash Hai ?

    Jazakallah khair..............

  5. #5
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Hijr
    Posts
    152,763
    Mentioned
    104 Post(s)
    Tagged
    8577 Thread(s)
    Thanked
    80
    Rep Power
    21474998

    Default Re: Kiya Aap Ko Bhi Sukoon Ki Talaash Hai ?

    Shukriya

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •