Results 1 to 7 of 7

Thread: ~ 8 Saal Baad ~

  1. #1
    Join Date
    Feb 2008
    Location
    Karachi, Pakistan, Pakistan
    Posts
    125,914
    Mentioned
    840 Post(s)
    Tagged
    9270 Thread(s)
    Thanked
    1181
    Rep Power
    21474971

    snow ~ 8 Saal Baad ~

    آٹھ سال بعد



    تو آج بالاخر تم نے کہہ ہی دیا۔۔۔آٹھ سال سے دل میں دبے ہوئے اپنے پیار کو زبان دے ہی دی۔۔۔ آج تم نے وہ سب کہہ ہی دیا جو کبھی تم کہنا چاہتے تھے مگر کہہ نہ سکے۔
    مگر اب فائدہ ہی کیا ہے یہ سب کہنے کا، سننے کا۔۔
    تم کسی کے ہو بیٹھے، میں کسی کی گردِ راہ بن گئی۔۔
    تم ساون کی نرم ملائم بوندوں کی مانند کہیں برس رہے ہو،
    میں اب بھی اپنے نصیب کی بارشوں کو ترس رہی ہوں۔

    مگر تمہاری محبت کیسی محبت ہے جس نے کبھی تمہارے دل میں ملنے کی تڑپ پیدا نہیں کی؟
    یہ احساس کیسا احساس ہے جو آٹھ سال تک تمہیں رات دن اپنے حصار میں جکڑے رہا مگر تم نے کبھی اس احساس کو نام دینے کی کوشش نہیں کی؟
    تم کہتے ہو کہ تمہاری محبت میں پانے کا احساس نہیں تھا، اگر یہ سچ ہے تو پھر آج
    آج تمہارے دل میں اپنے پیار کو چھونے کی تمنا کیوں جاگی؟
    آج تمہاری آنکھوں میں تیرتی حسرتوں کو زباں کیوں ملی؟
    آج تمہارے ہاتھوں کی پوروں پر میرے لمس کی خواہش کیوں جاگی؟
    آج تمہیں اُس احساس کو جینے کا خیال کیوں آیا؟
    تو پھر مان لو کہ وہ پیار نہیں تھا، ایک وقتی خیال تھا، ایک ایسی لمحاتی رو تھی جو یکبارگی تمہارے دل کو چُھو گئی اور اُس کا لمس تمہارے دل پر اثر چھوڑ گیا۔
    کیوںکہ اگر یہ پیار ہوتاتو تم کو کبھی چین سے نہ رہنے دیتا، تمہارے دل سے نکل سے تمہاری ہونٹوں تک، اور پھر میرے کانوں تک آتے آتے آٹھ سال نہ لگاتا۔
    اگر یہ پیار ہوتا تو مجھے خیالوں میں سوچنے کی بجائے حقیقت میں جیا ہوتا، میری تنہائیوں کو محسوس کیا ہوتا، انہیں بانٹا ہوتا۔
    پیار میں تو محبوب کا ہلکا سا دکھ بھی جان نکال دیتا ہے اور یہاں میں دن رات کانٹوں پر بسر کرتی رہی، لمحہ لمحہ روتی رہی، تڑپتی رہی مگر تمہیں کچھ محسوس نہ ہُوا؟ کچھ بھی محسوس نہ ہُوا؟ تو پھر یہ پیار تو نہ ہُوا نا۔
    اگر تمہیں مجھ سے پیار ہوتا تو تمہیں میری روح کے چھالے کیوں نہ نظر آئے؟

    ”کون کہتا ہے کہ میرے دن رات بے چینیوں کی نذر نہیں ہوئے؟
    ان گزرے سالوں میں ہر سانس کے ساتھ تمہیں محسوس کیا ہے۔ اور اب، اب جب تم سے ملنے کی کوئی امید ہی نہیں تھی تو یہ میری پتسیا ہی تو تھی، میری رات دن مانگی ہوئی دعائیں ہی تو تھیں جس نے ہمیں پھر سے ملایا ہے۔”

    یہ ہمارا ملنا تو ایک اتفاق ہے۔

    ”یہ اتفاق ایسے ہی تو نہیں ہو گیا، خدا کو کچھ تو منظور ہے تبھی تو اُس نے ہمیں اتنے سالوں بعد پھر سے ملایا ہے۔”

    نہیں! میں نہیں مانتی، میں اس محبت کو نہیں مانتی جس میں ملنے کی تڑپ نہ ہو۔
    آج کی محبت بہت کچھ چاہتی ہے، یہ محبوب کو چھونا چاہتی ہے، اُسے محسوس کرنا چاہتی ہے، اُسے پانا چاہتی ہے۔

    ”مگر پھر یہ تو نفسانی خواہش ہو گئی، اور سچی محبت میں نفسانی خواہشیں ڈیرہ نہیں جماتیں۔”

    ہاں تو، انسان محبت کرتا ہی اپنی نفسانی خواہش کی تکمیل کے لیے ہے۔
    اگر تم کہو کہ تم بس مجھے سوچنے پر ہی خوش ہوتے رہے، مجھے کبھی پانے کی خواہش ہی تمہارے دل میں نہیں جاگی تو جو تمہارے اندر یہ خالی پن ہے اسے تم کیا کہو گے؟ تم جو مکمل ہو کر بھی ادھورے ہو، یہ کیوں ہے؟

    ”بتایا تو ہے تمہیں کیسے حالات تھے، اگر اُن حالات میں تمہیں حاصل نہ کر پاتا تو یہی تکلیف مزید بڑھ جاتی۔ تمہارے بغیر کم از کم یہ احساس تو تھا کہ تم میرے دل کی حالت جانتی ہی نہیں ہو کہ تمہارے نام پر کیا کیا قیامتیں اٹھتی ہیں میرے دل میں۔ اب بتاؤ، تمہیں یہ سب بتانے کے بعد میں چین سے کیسے رہوں گا؟”

    چھوڑو یار، میں اس محبت کو نہیں مانتی، میں اب بھی یہی کہتی ہوں کہ تمہیں مجھ سے محبت نہیں تھی۔ ہاں محبت کا گمان ضرور ہو سکتا ہے۔

    ”نہیں! مجھے کل بھی تم سے محبت تھی، آج بھی ہے اور کل بھی رہے گی۔”

    ہاں اگر تم بضد ہو اس گمان کو یقین کرنے پر تو چلو یوں ہی سہی، مان لیتی ہوں میں تمہاری اس بے زبان محبت کو جس نے ہمیں آٹھ سال بعد پھر سے ملا دیا!
    مگر ایک بات تو بتاؤ، اب جبکہ کچھ بھی نہیں ہو سکتا ہے تو پھر اس احساس کو اب زبان دینے کی ضرورت ہی کیا تھی؟ چنگاری کو ہوا کیوں دکھائی ہے؟ یہ چنگاری اب بھڑک رہی ہے۔۔مگر کوئی ایک بوند بھی ایسی نہیں ہے جو میرے دل میں لگی آگ کو بجھا سکے۔ میرے نصیب کی بارشوں میں سے ایک قطرہ بھی میری روح کی کھیتی پر برس جاتا تو یہ شعلے مجھے اپنی لپیٹ میں نہ لیتے۔ تپتے صحرا میں ایک نم آلود جھونکے سے آدھی پیاس بھلے مٹ جائے مگر باقی کی آدھی پیاس مزید بڑھ جاتی ہے اور یہ آدھی پیاس کبھی بجھنے پر نہیں آتی، (یہ ہمیشہ ہونٹوں کو خشک اور آنکھوں کو گیلا رکھتی ہے۔)

    ”مگر میں۔۔۔۔ میں ڈرتا تھا، تمہارے انکار سے ڈرتا تھا۔۔۔ کُھل کے اظہار سے ڈرتا تھا۔ سوچتا تھا تم کبھی نہ کبھی خود ہی جان جاؤ گی، سمجھ جاؤ گی، مگر وقت اپنی جالیں چل گیا، مجھے کہیں پر اور تمہیں کہیں پر لے گیا۔”

    میں اگر تمہاری چاہت سے بے خبر تھی تو تمہیں مجھ کو باخبر کرنا چاہیئے تھا، مجھے میری غفلت سے جھنجھوڑنا چاہئے تھا، میرے اندر سوئے اس احساس کو جگانا چاہئے تھا کہ میں بھی تو یہی چاہتی تھی۔
    تم اُدھر انکار کے لمحوں سے ڈرتے رہے
    میں ادھر اقرار کے موسموں کو ترستی رہی
    اس محملی ماحول میں جو اب کہہ رہے ہو، یہ سب تم کو پہلے کہنا چاہئے تھا۔
    میری دھڑکنوں کو جو اظہار اب بخش رہے ہو یہ آٹھ سال پہلے کرنا چاہئے تھا
    کہ میں خاموش صداؤں کے دھارے پر پہلے بھی تو تم سے مل چکی تھی
    یہ تمہاری اور میری کہانی جو اُوپر آسمانوں پر بہت پہلے لکھی جا چکی تھی اسے دل کی کتاب سے لفظ لفظ پڑھنا چاہئے تھا
    کہ اس کی باز گزشت میں اپنی دھڑکنوں میں سُن چکی تھی مگر آواز کو نام نہیں دے پائی تھی،
    تم کو اسے نام دینا چاہئے تھا،
    پھولوں کے دیس میں
    خوشبوؤں کے بھیس میں
    میرا ہاتھ لے کر ہاتھ میں
    اپنی ہم سفری کے ساتھ میں
    جو لمحے آج میرے نام کر رہے ہو
    انہیں پہلے زندگی دینا چاہئے تھی
    اس سے بڑھ کر خسارہ اور کیا ہو گا کہ نہ تو ہم ایک دوسرے کے ہو سکے اور نہ ہی کسی اور کے ہو سکے۔
    میں نے تو ویسے بھی خسارے میں ہی عمر تمام کر دی
    کہ مجھے خدا سے کبھی کچھ مانگنا ہی نہیں آتا
    خواہشوں کو دعا کی تسبیح میں ڈھالنا ہی نہیں آتا
    مگر تم کو اپنی آرزوؤں میں حقیقت کا رنگ بھرنا چاہئے تھا، میرے پاس آنا چاہئے تھا۔۔
    اب دل کی خستہ دیواروں پر زندگی کے سائے ڈھلنے کو آ رہے ہیں، مہلتِ حیات ختم ہوئی جاتی ہے اور تم اب آئے ہو؟
    اب جبکہ سب امیدیں مر چکی ہیں، محبت کی زمین سرد اور ویران ہو چکی ہے، وقت ہاتھ سے پھسل چکا ہے تو اب بیکار میں آنسو بہاتے ہو اور اُن لمحوں کو روتے ہو جو اس ریشمیں ماحول میں امر ہو سکتے تھے۔
    مگر اب بھول جاؤ،
    بھول جاؤ کہ جو خواب تم نے دیکھا تھا
    وہ تو بارشوں کے بعد پیدا ہونے والا قوسِ قزح میں دُھلا ایک سایہ تھا جو مٹ گیا اور پھر تاریکی چھا گئی
    وہ سب ہو گیا جو نہ تم نے چاہا تھا
    اور نہ ہی میں نے اُس کی خواہش کی تھی
    مگر ایک امید جو آنسو بن کے چمک اُٹھی ہے
    کہ تاریک رات کے بعد صبح بھی آئے گی
    اور شاید اُس نئی صبح میں
    ہمارے نام کا اُجالا بھی چھپا ہُوا ہو
    اور وہ اُجالا اپنے دامن میں وہ سب لمحے سمیٹ کر لائے
    جب ہم ہمیشہ کے لے ایک ہو سکیں
    پھر کسی ریشمیں ماحول میں
    دھڑکنوں کے شور میں
    خاموش مخملیں ہواؤں کے دھارے میں
    سرخ اور پیلے پتوں کی سر زمیں پر
    ہنستے پھولوں کے سُخن میں
    جہاں بھیگی رات کا پہرہ ہو
    مجھ پہ جھکا تیرا چہرہ ہو
    آج، کل، یا شاید
    پھر آٹھ سال بھد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    ناہید ورک
    2004
    صرف آواز نہیں ، لفظ بھی مقفل ہیں مرے

    سوچ میں ہوں کہ اب تجھ کو پکاروں کیسے

  2. #2
    Join Date
    Feb 2008
    Location
    Someone's Heart
    Posts
    25,848
    Mentioned
    1 Post(s)
    Tagged
    24 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    21474871

    Default Re: ~ 8 Saal Baad ~

    wahhhhhhhhhhhhhhhhhhhhhhhhhhhh khoobsurat sharing appo

    maza aa gaya
    SD ki Basanti

    Chal DhanoOo

    I Love the feelings When U Hold My Hand....

    53339010150654137193873 - ~ 8 Saal Baad ~

  3. #3
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    ♥ ♥ ChaAnd K paAr♥ ♥
    Posts
    41,780
    Mentioned
    1 Post(s)
    Tagged
    1314 Thread(s)
    Thanked
    2
    Rep Power
    21474887

    Default Re: ~ 8 Saal Baad ~

    /up


    *~*~*~*ღ*~*~*~**~*~*~*ღ*~*~*~*

    2m4ccw6 - ~ 8 Saal Baad ~

    *~*~*~*ღ*~*~*~**~*~*~*ღ*~*~*~*

  4. #4
    Join Date
    Mar 2010
    Location
    *In The Stars*
    Posts
    18,093
    Mentioned
    1 Post(s)
    Tagged
    1271 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    21474862

    Default Re: ~ 8 Saal Baad ~

    zaberdast




    Yahi Dastoor-E-ulfat Hai,Nammi Ankhon,
    Mein Le Kar Bhi,

    Sabhi Se Kehna Parta Hai,K Mera Haal,
    Behter Hai...!!


  5. #5
    Join Date
    Feb 2008
    Location
    Karachi, Pakistan, Pakistan
    Posts
    125,914
    Mentioned
    840 Post(s)
    Tagged
    9270 Thread(s)
    Thanked
    1181
    Rep Power
    21474971

    Default Re: ~ 8 Saal Baad ~

    sukriya jee
    صرف آواز نہیں ، لفظ بھی مقفل ہیں مرے

    سوچ میں ہوں کہ اب تجھ کو پکاروں کیسے

  6. #6
    Join Date
    Mar 2008
    Location
    Hijr
    Posts
    152,763
    Mentioned
    104 Post(s)
    Tagged
    8577 Thread(s)
    Thanked
    80
    Rep Power
    21474998

    Default Re: ~ 8 Saal Baad ~

    پھر یوں ہوا کے درد مجھے راس آ گیا

  7. #7
    Join Date
    Jun 2010
    Location
    pakistan
    Age
    24
    Posts
    2,505
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    31 Thread(s)
    Thanked
    0
    Rep Power
    21474846

    Default Re: ~ 8 Saal Baad ~

    niiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiiice naz
    254311 151251481613107 100001847683469 313672 3952200 n - ~ 8 Saal Baad ~

    I am so lonely, broken angel
    I am so lonely, listen to my heart

    One and only, broken angel
    Come and save me, before I fall apart

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •