جمالِ یار کا دفتر رقم نہیں ہوتا
کسی جتن سے بھی یہ کام کم نہیں ہوتا

تمام اجڑے خرابے حسیں نہیں ہوتے
ہر اک پرانا مکاں قصرِ جم نہیں ہوتا

تمام عمر رہِ رفتگاں کو تکتی رہے
کسی نگاہ میں اتنا تو دم نہیں ہوتا

یہی سزا ہے مری اب جو میں اکیلا ہوں
کہ میرا سر ترے آگے بھی خم نہیں ہوتا

وہ بے بسی ہے مسلسل شکستِ دل سے منیرؔ
کوئی بچھڑ کے چلا جاۓ، غم نہیں ہوتا