حاصلِ عشق ترا حُسنِ پشیماں ہی سہی
میری حسرت تری صورت سے نمایاں ہی سہی
حُسن بھی حُسن ہے محتاجِ نظر ہے جب تک
شعلۂ عشق چراغِ تہِ داماں ہی سہی
کیا خبر خاک ہی سے کوئ کرن پھوٹ پڑے
ذوقِ آوارگیِ دشت و بیاباں ہی سہی
پردۂ گُل ہی سے شاید کوئ آواز آۓ
فرصتِ سیر و تماشاۓ بہاراں ہی سہی