تند نشٓہ خمار سا نکلا
آسماں بھی غبار سا نکلا

کیا اندھیرے میں روشنی سی رہی
رنگِ لب کا شرار سا نکلا

تلخیِ غم نکل گئی دل سے
جسم سے اک بخار سا نکلا

دیکھ کر حسنِ دشت حیراں ہوں
یہ تو منظر دیار سا نکلا

میں ہوں بیمارِ وصلِ گل سے منیرؔ
شوقِ دل مرگ زار سا نکلا