پہنچے گور کنارے ہم
نس غمِ دوراں ہارے ہم
سب کچھ ہار کے رستے میں
بیٹھ گۓ دکھیارے ہم
ہر منزل سے گزرے ہیں
تیرے غم کے سہارے ہم
دیکھ خیالِ خاطرِ دوست
بازی جیت کے ہارے ہم
آنکھ کا تارا آنکھ میں ہے
اب نہ گِنیں گے تارے ہم