ایک گماں کا حال ہے اور فقط گماں میں ہے
کس نے عذابِ جاں سہا ، کون عذابِ جاں میں ہے

لمحہ بہ لمحہ ، دم بہ دم ، آن بہ آن ، رم بہ رم
میں بھی گزشتگاں میں ہوں تو بھی گزشتگاں میں ہے

آدم و ذاتِ کبریا کرب میں ہیں جدا جدا
کیا کہوں اُن کو معجزہ ، جو بھی ہے امتحاں میں ہے

کیسا حساب کیا حساب ، حالتِ حال ہے عذاب
زخم نفس نفس میں ہے ، زہر زماں زماں میں ہے

**